۔5اگست کا فیصلہ مرکز کو واپس لینا ہی پڑے گا:کمال

 سرینگر// نیشنل کانفرنس تینوں خطوں کے عوام کی اُمنگوں، خواہشات اور مطالبات کے عین مطابق 5اگست2019کے فیصلوں کی منسوخی کیلئے ہر سطح پر جدوجہد جاری رکھے ہوئے ہے اور ہماری جماعت اس جدوجہد میں ہر ایک قربانی دینے کیلئے تیار ہے۔ ان باتوں کا اظہار پارٹی کے معاون جنرل سکریٹری ڈاکٹر شیخ مصطفیٰ کمال نے مختلف علاقوں سے آئے ہوئے عوامی وفود، پارٹی عہدیداروں اور کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوںنے کہا کہ نیشنل کانفرنس کسی بھی صورت میں پارٹی کارڈر کے احساسات، جذبات اور اُمنگوں کو نظرانداز نہیں کرے گی کیونکہ پارٹی کارڈ سے ہی جماعت کا وجود قائم و دائم ہے۔ انہوں نے پارٹی سے وابستہ افراد پر زور دیا کہ وہ پارٹی کی مضبوطی کیلئے کام کریں کیونکہ پارٹی کی مضبوطی کی صورت میں ہی ہم ہر ایک چیلنج میں سرخرو ہوسکتے ہیں۔ ڈاکٹر کمال نے کہا کہ مرکزی حکومت کو ایک نہ ایک دن 5اگست کے فیصلوں کو واپس لینا ہی پڑے گا کیونکہ خطے میںامن و استحکام کا راستہ اسی سے گزرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر کے عوام دفعہ370اور 35اے کے تحت جو مراعات حاصل تھے وہ آئین ہند کے تحت دیئے گئے تھے اور ان کی منسوخی آئین کے منافی ہے۔ مرکزی حکومت کو چاہئے کہ وہ اپنے غلط فیصلوں کا اعتراف کرکے فوراً سے پیش تر جموں وکشمیر کے عوام کے حقوق کی بحالی عمل میں لائے اور یہاں امن اور استحکام کو پنپنے کا موقع فراہم کرے۔