کشمیر میں موبائیل انٹرنیٹ خدمات ایک بار پھر معطل

سرینگر // کشمیر میں تیز رفتار والی تھری جی اور فور جی موبائیل انٹرنیٹ خدمات ایک بار پھر معطل کردی گئی ہیں۔ یہ خدمات ظاہری طور پر عیدالفطر کے پیش نظر احتیاطی اقدامات کے طور پر گذشتہ رات قریب دس بجے منقطع کردی گئیں۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ تمام مواصلاتی کمپنیوں کو تھری جی اور فور جی انٹرنیٹ خدمات کو ٹو جی رفتار پر منتقل کرنے کے لئے کہا گیا ہے۔ اگرچہ انہوں نے اس کے لئے کوئی وجہ ظاہر کرنے سے گریز کیا، تاہم مانا جارہا ہے کہ یہ اقدام عیدالفطر کے پیش نظر سوشل میڈیا پر کسی بھی طرح کی افواہ بازی یا ویڈیوز کو اپ لوڈ ہونے سے روکنے کے لئے اٹھایا گیا ہے۔ ایک مواصلاتی کمپنی کے عہدیدار نے بتایا کہ انہیں انتظامیہ کی طرف سے ایک مختصر پیغام موصول ہوا جس میں انہیں تھر جی اور فور جی خدمات کو ٹوجی رفتار (زیادہ سے زیادہ 128 کے بی پی ایس) پر منتقل کرنے کے لئے کہا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ انتظامیہ کے حکم نامے میں تھری جی اور فور جی انٹرنیٹ خدمات کی معطلی کی کوئی وجہ ظاہر نہیں کی گئی ہے۔ وادی کشمیر میں سال 2015 ءمیں عیدالاضحی کے موقع پر ہر طرح کی انٹرنیٹ خدمات 77 گھنٹے تک معطل رکھی گئی تھیں۔ تب انٹرنیٹ خدمات کو معطل رکھنے کا قدم عیدالاضحی کے موقع پر بڑے جانوروں خاص طور پر گائے کے ذبیحے کے عمل کا ویڈیو بنانے اور اس کو انٹرنیٹ پر عام کرنے، احتجاجی مظاہروں سے متعلق خبروں اور ویڈیوز کو انٹرنیٹ پر عام کرنے اور کسی بھی طرح کے احتجاجی پروگرام کی تشہیر کو روکنے کے لئے اٹھایا گیا تھا۔ وادی میں تب عیدالاضحی ایک ایسے وقت میںمنائی جارہی تھی جب ریاستی ہائی کورٹ نے اس مسلم اکثریتی ریاست میں بڑے جانوروں کے ذبیحے پر پابندی عائد کردی تھی۔ وادی میں گذشتہ تین ماہ کے دوران انٹرنیٹ خدمات کو متعدد مرتبہ معطل کیا گیا۔ جبکہ صارفین کا کہنا ہے کہ انٹرنیٹ خدمات کی معطلی اب وادی میں روز مرہ کا معمول بن چکا ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق وادی میں 2012 ءسے اب تک انٹرنیٹ خدمات قریب 40 مرتبہ معطل کی گئیں۔ بعض اوقات یہ خدمات مہینوں تک منقطع رکھی گئیں۔ وادی میں سیکورٹی اداروں کا ماننا رہا ہے کہ واد ی میں پاکستان نوجوانوں کو احتجاج پر اکسانے کے لئے سماجی رابطوں کی ویب سائٹوں کا بڑے پیمانے پر استعمال کررہا ہے۔ کشمیر میں تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ وادی میں موبائیل انٹرنیٹ خدمات کو ظاہری طور پر کسی بھی طرح کے افواہوں کو پھیلنے ، ملک مخالف احتجاجی مظاہروں سے متعلق خبروں اور ویڈیوز کو انٹرنیٹ پر عام کرنے اور کسی بھی طرح کے احتجاجی پروگرام کی تشہیر کو روکنے کے لئے معطل رکھا جاتا ہے۔ انٹرنیٹ خدمات کی معطلی کے باعث صارفین خاص طور پر طلبائ، سیاحوں ، پیشہ ور افراد خاص طور پر صحافیوں اورتاجروں کو زبردست مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔ جبکہ انٹرنیٹ خدمات کی بار بار کی معطلی کے سبب وادی میں ای بینکنگ اور ای شاپنگ کو بڑا دھچکا لگ گیا ہے۔ وادی میں انٹرنیٹ خدمات کی معطلی کو ای (الیکٹرانک) کرفیو کا نام دیا گیا ہے۔یو اےن آئی