مزید خبریں

کشمیری پنڈتوں نے 13جولائی یوم سیاہ کے طورپر منایا 

جموں //بے گھر ہوئے متعدد کشمیری پنڈت تنظیموں نے 13جولائی کو یوم سیاہ کے طور منایا ۔ اس سلسلہ میں متعدد کشمیری پنڈت انجمنوں نے راج بھون کے باہر ایک مظاہرہ کیا اور کہا کہ اس دن 1931میں کشمیری پنڈت کو ہراساں کیا گیا تھا۔ آل سٹیٹ کشمیری پنڈت کانفرنس کے جنرل سیکرٹری ٹی کے بھٹ نے میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر میں 13جولائی کو یوم شہدا منایا جاتاہے کیونکہ اس روز ڈوگرہ حکمران مہاراجہ ہری سنگھ کے سپاہیوں نے شخصی راج کی مخالفت کرنے والے مظاہرین پر گولیاں برسائی ،جسکی وجہ سے 22 لوگ ہلاک ہوگے تھے انہوں نے کہا کہ سیاسی پارٹیوں اور ریاستی سرکار کی جانب سے13 جولائی کو یوم شہدا منانا بے گھر طبقہ کے زخموں پر نمک پاشی کرنے کے برابر ہے۔مظاہرین کی قیادت  ASKPC  کے صدر رویندر رینہ کر رہے تھے جس میں 400سے زائد مظاہرین نے شرکت کی۔بھٹ نے مزید کہا کہ کشمیری پنڈت طبقہ کی جانب سے  1932 سے اس دن وادی میں کشمیری پنڈتوں پر ڈھائے گئے مظالم کے خلاف  بطور ’’یوم سیاہ‘‘ منایا جا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ اس دن طبقہ کے لوگوں پر لوٹ مار، آتشزنی ،قتل و غارت کیا گیا تھا ،جس کی وجہ سے مہاراجہ کی فورسز طبقہ کو تحفُظ دینے کیلئے مجبور ہو گئی ۔مظاہرے میں میں پنون کشمیر، آل انڈیا کشمیری پنڈت کانفرنس  اور آل پارٹی مائیگرنٹ کارڈی نیشن کمیٹی کے رہنمائوں نے بھی شرکت کی  ۔
 
 

یوا راجپوت سبھا کا احتجاج

۔13جولائی کو سرکاری تعطیل ختم کرنے کا مطالبہ 

جموں // یوا راجپوت سبھا نے 13جولائی کو یوم شہدا کے موقعہ پر سرکاری تعطیل کو ختم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔سبھا کی جانب سے جاری ایک بیان میں وائی آر ایس کے صدر سریندر سنگھ گل نے کہا کہ ریاست میں13جولائی کو بطور یوم شہدا اُن لوگوں کی یاد میں منایا جاتا ہے،جن کو ڈوگرہ حکمران مہاراجہ ہری سنگھ کے سپاہیوں نے گولیوں سے ہلاک کیا تھا ۔ سبھا کے کارکنوں نے کالا بلے باندھے تھے جن پر لکھا گیا تھا ’’کوئی یوم شہداء نہیں، ہمارا کوئی تعطیل نہیں‘‘یہ ہمارا کام کاج کا دن ہے۔مظاہرین نے کہا کہ13جولائی کے واقعہ کو صیح سمت میں پیش نہیں کیا گیا ۔سبھا کے صدر سریندر سنگھ گل نے ریاست کے گورنر ستیہ پال ملک سے 13جولائی کو سرکاری تعطیل منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ مہاراجہ کے خلاف ایک سازش تھی،جو بھارت کی آزادی کے حق میں تھے،کہ چند فرقہ پرست طاقتوں نے 1931 میں  برطانوی حکومت کے ائیما پر اسی دن کشمیر ی پنڈتوں کو خوف زدہ کیا تھا۔انہوں نے کہا کہ طبقہ اسے یوم سیاہ کے طور پر منارہی ہے کیونکہ یہ دن ہمیںاقلیتی طبقہ کے خلاف بڑے پیمانے پر لوٹ مار ،آتشزنی کی یا دلاتا ہے۔انہوں نے کہا کہ یوا راجپوت سبھا نے وزیر اعظم نریندر مودی اور ریاست کے گورنر سے 13جولائی کو یوم شہدا کی تعطیل ختم کرنے اور23 ستمبر کو مہاراجہ ہری سنگھ کی سالگرہ پر سرکاری تعطیل کرنے کا مطالبہ کیا۔وکرم سنگھ ، سچن، شبھو، مندیی، مکیش ،راجیو، راجندر، میشا، مانجا، مہندر، فینٹو، پروین ،سورن و دیگران بھی شامل تھے۔
 
 

سنیل ڈمپل یاترا روکنے پر خفا ، جموں بند کا انتباہ

جموں//جموں ویسٹ اسمبلی مومنٹ کے صدر سنیل ڈمپل نے شری امر ناتھ جی یاترا روکنے پر ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے انتباہ کیا کہ مستقبل میں اگر کبھی بھی یاترا کو روکا گیا ،تو وہ جموںبند کی کال دینے پر مجبور ہو جائیں گے۔وہ یہاں ہفتہ کے روزمظاہرین سے خطاب کر رہے تھے، جسکا انعقاد شری امر ناتھ جی یاترا روکنے کے خلاف منعقد کیا گیا تھا۔مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ محبوبہ مفتی، علیحدگی پسندوں ، حریت ،جماعت اسلامی لیڈروں پر یاترا میں رکاوٹ ڈالنے کا الزام لگا ہے۔انہوں نے وزیر اعظم سے ان لیڈروں کو فوری طور گرفتار کرنے کا مطالبہ کیا۔احتجاجی ریلی میں ایل او سی پر فائر بندی کی خلاف ورزی کرنے پر پاکستانی جھنڈا نذر آتش کیا گیا ۔مظاہرین ین قوم دشمن عناصر کے خلاف سخت کاروائی کرنے کا مطالبہ کیا۔انہوںنے گورنر انتظامیہ سے انتباہ کیا کہ اگر مستقبل میں کبھی بھی شری امر ناتھ جی یاترا کو روک دیا گیا، تو وہ جموں بند کرنے کیلئے سڑکوں پر آئیں گے۔انہوں نے انتباہ کیا کہ اگر یاتریوں یا لنگر والوں کے ساتھ کوئی ناساز گار واقعہ رونما ہو گیا تو ملک بھر میں اس کا سخت در عمل دیکھا جائے گا۔مظاہرین میںچمن پوار، منجیت آنند، شام سروپ، سچن سوئی،اویناش گپتا،ڈاکٹر چونی لعل بٹ،ارجن ،انمول ستپالش رما ، راجندر، اوم پرکاش، بنٹی،راجیش ٹال ودیگران بھی شام تھے۔
 

پنگلا ماتا اکھنڈ جیوتی شوبھایاترا آج

اودہم پور//شری آدی شکتی سیوا سنستھان اودہمپور کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ سنستھان کی جانب سے 14۔جولائی یعنی کہ اتوار کے روز پنگلا ماتا سالانہ اکھنڈ جیوتی و جلوس منعقد کیا جا رہا ہے ،جو سالانہ پنگلا ماتا اکھنڈ جیوتی یاترا کا ایک حصہ ہوگا ،جو 16جولائی کو منعقد ہوگی۔شوبھا یاترا پانڈو مندر سے 3:30بجے بعد دوپہر کو نکالی جائے گی  ۔ اس سے قبل صبح کو پوجا ارچنا اور ہون یگیہ منعقد ہوگا،یاترا قصبہ کے متعدد بازاروں اور گلیوںسے ہوتے ہوئے ہسپتال روڈ ،شالن تالاب، چبوترہ بازار، مین بازار، گول مارکیٹ، مکرجی بازار، رام نگر چوک،سے ہوتے ہوئے اُسی مقام پر اختتام پذیر ہوگی جہاں سے یاترا شروع ہوئی تھی۔سنستھا کے صدر اشوک کمار گپتا نے اس موقعہ پر کہا کہ یاترا خوش اسلوبی سے اختتام پذیر ہونے کیلئے تمام انتظامات کئے گئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مستقبل میں بھی یاترا ایک سالانہ فیچربنا رہے گا۔انہوں نے کہا کہ پوتر چراغ اور ترشول پانڈر مندر میں رہے گا جسے جلوس کی صورت میں پنگلا ماتا کی گپھا میں 16جولائی 2019 کو لیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ سنستھا نے ہر سال کی طرح اودہمپو سے پنگلا ماتا تک مفت بس سروس کا اہتمام کیا ہے اور مفت لنگر بھی فراہم کیا جائے گا،جس میں معاونت موضع پنگر کے سابقہ سرپنچ ملکھ راج گپتا نے کی ہے۔یاترا کے انتظامات میں اجے گُڈا، مانک شاہ، انکش گپتا، بی کے سارلا و دیگر ممبران بھی شامل تھے۔
 

شیو سینا کا علیحد گی پسندوں پر امرناتھ یاترا میں رخنہ نہ ڈالنے کا الزام 

جموں //شیو سینا بالا صاحب ٹھاکرے کے لیڈروں نے وادی کشمیر کے علیحدگی پسندوں کو انتباہ کیا ہے کہ وہ کشمیر بند کی صور ت میں امر ناتھ یاترا کو روکنے کی کوشش نہ کریں۔ہفتہ کے روز یہاں ذرائع ابلاغ سے خطاب کرتے ہوئے پارٹی کے ریاستی جنرل سیکرٹری منیش ساہنی نے کہا کہ گذشتہ کئی برسوں سے کشمیر بند کے نام پر شری امرناتھ جی یاترا میں رخنہ ڈالنے کی سازش کی جا رہی ہے۔انہوں نے کشمیر کے علیحدگی پسندوں سے دو ٹوک الفاظ میں کہا ہے کہ شیو سینا اسے براشت نہیں کرے گی ۔انہوں نے کہا کہ مذہبی یاترا پر اسکا رد عمل تباہ کن ہوگا۔ساہنی نے انتظامیہ کے رویہ پر بھی ناراضگی کا اظہار کیا اور کہا کہ سیکورٹی وجوہات سے یاترا کو معطل کرنا انتظامیہ کی ناکامی معلوم ہوتی ہے۔ساہنی نے کہا کہ یاترا میں روکاوٹ کی وجہ سے مسافروں کی کافی پریشانیاں ہوتی ہیں۔اس موقعہ پر نائب صدر سرجیت سنگھ چن ، یشپال کھجوریہ، میناکشی بخشی، سنیہا کور، راج سنگھ ،راجو سلاریہ، پنکج اکشت،تلوار، راجو چودھری، منگو رام ، بہوری سنگھ ،بلونت سنگھ و دیگران بھی اس موقعہ پر موجود تھے۔
 

یوا پنتھرز کابغیرکٹوتی بجلی اور پانی فراہم کرنے کا مطالبہ

جموں //یوا پینتھرز پارٹی نے جموں شہر میں پینے کے پانی کی باقاعدہ سپلائی اور بغیر خلل کے بجلی فراہم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ ایک بیان میںجے کے این پی پی کے زونل صدر نیرج گپتا نے جموں کے متعدد علاقوں جانی پور، پلوڑہ ،تالاب تلو، ،سبھاش نگر، بخشی نگر، ٹرانسپوررٹ نگر، و دیگر علاقوں میں بنیادی سہولیات کے فقدان پر ناراضگی کا اظہار کیا ہے۔انہوں نے بیان میں کہا ہے کہ شہر کا دو روزہ دورہ کرنے کے  دوران متعدد لوگوں نے ان سے ملااقات کی اور انہیں اپنے اپنے علاقوں میںبنیادی سہولیات کی کمی کی شکایت کی۔انہوں نے کہا کہ شہر کے بہت سے محلوں میں پینے کے پانی کی قلت ہے جس سے انہیں کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہاہے۔ انہوں نے کہا کہ بجلی کی بغیر شیڈول کی کٹوتی سے لوگوںکو اسم کی اس گرمی میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔لوگوں نے شکایت کی ہے کہ وہ کئی مرتبہ حکام کے پاس اپنی شکایت لیکر گئے تھے لیکن مسلہ ویسا ہی ہے۔انہوں نے کہا کہ پُرانی پائپیں اب بوسیدہ ہو گئی ہیں ،جس کی وجہ سے جگہ جگہ پر پانی کا رسائو جاری ہے۔ انہوں نے انتظامیہ سے ان علاقوں میں تب تک ٹینکروں کے ذریعہ سے پانی فراہم کرنے کا مطالبہ کیا،جب تک پائپوں کو ٹھیک نہیں کیا جاتا ہے۔انہوں نے جانی پور،  پلوڑہ ،تالاب تلو، ،سبھاش نگر، بخشی نگر، ٹرانسپوررٹ نگر، و دیگر علاقوں میںپانی کی سپلائی باقاعدہ بنناے کا مطالبہ کیا ۔ انہوں نے نوجوانوں سے پینتھرز پارٹی میں شامل ہونے کی اپیل کی، تاکہ جموں خطہ کے ساتھ ہوئے امتیاز کا خاتمہ کیا جا سکے۔
 

بی جے پی مہلا مورچہ نے ممبر شپ مہم شروع کی

جموں //بھارتیہ جنتا پارٹی کے مہلا مورچہ نے نئے ممبروں کو پارٹی میں شامل کرنے کیلئے ممبر شپ مہم کا آغاز کیا۔اس سلسلہ میں یہاں پارٹی کے صدر دفتر پر بی جے پی مہلا مورچہ کی قومی نائب صدر و جے اینڈ کے کی مورچہ پربھاری رشم دھر سود نے میڈیا کے ساتھ تبادلہ خیال کیا۔ انکے ہمراہ مہلا مورچہ کی ریاستی صدر رجنی سیٹھی اور جنرل سیکرٹریاں سنجیتا ڈوگرہ اور شیلجا گپتا بھی تھیں ۔اپنے خطاب میں رشم سود نے حالیہ لوک سبھا انتخابات میں بھاری جیت میں خواتین ووٹراں کی کارکردگی میں دکھائے گئے جوش کی ستائش کی۔انہوں نے کہا کہ ریاست میں بی جے پی کی بنیاد کو وسعت دینے کیلئے ریاستی مہلا مورچہ 14جولائی سے ’’ممبر شپ مہم ‘‘ کی شروعات کرے گی۔انہوں نے کہا کہ ممبر شپ مہم کی توجہ معز زشہریوں جیسے کہ ڈاکٹروں ، انجینئروں ،اساتذہ اور ریٹائرڈ ملازمین اور تعلیم یافتہ نوجوانوں پر مرکوز ہوگی۔انہوں نے کہا کہ ہم ریڑی فروشوں تک بھی اپنی رسائی کریں گے اور انہیں اپنی بھلائی کے لئے بی جے پی کا حصہ بنائیں گے۔انہوں نے تما کارکنوں کو مہم مین بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کو کہا، تاکہ ممبر شپ مہم کامیاب ہو سکے۔انہوںنے ہر ایک سرگرم کارکن سے 50نئے ممبروں کو پارٹی میں شامل کرنے کو کہا ۔انہوں نے کہا کہ ریاست میں اگلے سال  اسمبلی انتخابات منعقد ہونے کی وجہ سے ممبر شپ مہم کی اہمیت بڑھ گئی ہے۔ انہوں نے آن لائن اور آف لائن طریقہ سے ممبروں کا اندراج کرنے کو کہا ۔
 

 گریننگ جموں وکشمیر مہم ،صوبہ جموں میں شجرکاری جاری

سرینگر //گورنر ستیہ پال ملک کی جانب سے8 جولائی کو شروع کئے گئے گریننگ جموں اینڈ کشمیر پروگرام میں جموں، ریاسی اور راجوری اضلاع کے کئی فارسٹ ڈویثرنوں میں شجرکاری مہم کے انعقاد کے ساتھ تیزی لائی گئی۔اربن فارسٹری ڈویثرن جموں نے سینک کالونی سیکٹر اے میں شجرکاری مہم پھولبانی کے اشتراک سے منعقدکی۔ کارپوریٹر سینک کالونی نریندر سنگھ، کرنل ہرجندر سنگھ اور کمل سینی کی موجودی میں شجرکاری مہم کا آغاز ہوا۔اسی طرح سیوریج ٹریٹمنٹ پلانٹ بھگوتی نگر جموں میں اربن فارسٹری ڈویثرن جموں نے جموں کے مئیر چندر موہن شرما، کارپوریٹر بھگوتی نگر پرمود کپاہی، سماجی کارکن و مقامی لوگوں کی موجودگی میں لگ بھگ500 پودے لگائے۔اربن فارسٹری ڈویثرن نے ٹیچرس بھون گاندھی نگر میں شجرکاری پروگرام منعقد کیا جہاں ڈائریکٹر سکول ایجوکیشن انورادھا گپتا، سماجی کارکن چندر گپتا اور محکمہ تعلیم کی عملے کی موجودگی میں100 پودے لگائے گئے۔ریاستی فارسٹ ڈویثرن میں بِڈا میں شجرکاری مہم شروع کی گئی جس میں سرپنچ، پنچ اور مقامی لوگوں کی موجودگی میں پیپل، برگد، کدمب، بیل اور چنار کے70 پودے لگائے گئے۔راجوری فارسٹ ڈویثرن نے گورنمنٹ پرائمری سکول کیسر گلا میں شجرکاری مہم کا انعقاد کیا جس میں مقامی لوگوں کی ایک بڑی تعداد موجود تھی جبکہ نوشہری فارسٹ ڈویثرن نے گورنمنٹ ہائی سکول دھرم سال، سندر بنی اور گورنمنٹ مڈل سکول کنتھا میں شجرکاری مہم کا انعقاد کیا۔گورنر کے مشیر کے ۔ وجے کمار نے شجرکاری مہم میں تیزی لانے کی ستائش کی اور فارسٹ افسروں کو اس مہم میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کے لئے مبارک باد دی۔کمشنر سیکرٹری محکمہ جنگلات منوج کمار دویدی نے بھی شجرکاری مہم میں تیزی لانے کے لئے محکمہ جنگلات کے افسروں کے رول کی سراہنا کی۔
 

نیشنل کانفرنس نے 1931کے شہیدوں کو خراج پیش کیا 

سدھ مہا دیو// حلقہ سد ھ مہا دیو کے نیشنل کانفرنس عہدیداران وکارکنان کا ایک اجلاس منعقد ہوا جس کی صدارت حلقہ صدر پارٹی حاجی شمشیر حسین نے کی اس موقعہ پر صوبائی سیکریٹری لال چند مسافر نے بھی شمولت کی۔میٹنگ میں 13جولائی 1931کو سرینگر میں ہوئے خونی سانحہ کے شکار ہوئے دو درجن شہیدوں کی قربانی کو یاد کیا گیا۔حاجی شمشیر حسین نے کہا کہ ظلم کے خلاف آواز اٹھانے والوں کو بے رحمی سے گولیوں سے ہلاک کیا گیا جس نے ہماری بنیاد ڈالی اور نیشنل کانفرنس بلا لحاظ مذہب و ملت اورن خطہ غریب بیکس مظلوم عوام کی نمائندہ جماعت بنی جس نے ظالم شخصی نظام کی خلاصی کر وائی ۔لال چند مسافر نے کہا کہ ظلم کا آخر خاتمہ ہوتا ہے ،مظلوم عوام کی آواز سے ہر ملک میں انقلاب آئے ۔انسانی حقوق ،جمہوریت ،سوشل ازم بحال ہوئے۔1931کے شہیدوں کے لال خون سے ہمارا جھنڈا رنگا گیا جب تک یہ جھنڈا بلند رہے گا شہید زندہ رہیں گے اور ظلم پنپ نہ سکے گا ،ہمیں اس کا احسان مند رہنا چاہے جنہوں نے جان کی بازی لگا کر تحریک کی بنیاد ڈالی۔ہمیشہ مصائب کا شکار رہ کر شیر کشمیر نے غریب مظلوم پسماندہ عوام کو حق انصاف دلایا اور تا حیات تحریک کی قیادت کی۔اس موقعہ پر اننت رام،ترلوک چند،محمد یا سین،حکم چند ،حاجی نذیر نے چنینی تحریک اور نیشنل کانفرنس کی قیادت کی داستان بیان کی۔اس موقعہ پر شنکر داس،رحمت اللہ بٹ،ودیا دیوی،شانتی دیوی،موہن لال ،چندو،کچھو،نموں،رتن چند ،اجے کمار،راکیش کمار،چونی لال،درشناں دیوی ، الف دین ،محمد رفیق و دیگر بھی موجود تھے۔