مزید خبرں

سرینگر کے 6 فیکلٹی ممبران ADسائنٹفک انڈکس میں شاملNIT

سرینگر//نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی سرینگر کے چھ فیکلٹی ممبران کو اے ڈی(الفا۔ڈوگر)سائنٹفک انڈکس میں شامل کیاگیا ہے۔انڈکس کو اے ڈی سائنٹفک انڈکس ،جو رسالوں کا جائزہ لیتا ہے اوریونیورسٹیوں کی کارکردگی ، انفرادی سائنس دانوں کی سائنسی پیداواریت اورمنسلک سائنسدانوں کی خصوصیات کی جانچ کرتا ہے،نے جاری کیا۔اس فہرست میں گزشتہ کل اورپانچ سال کے آئی10انڈکس،ایچ انڈکس اور گوگل اسکالرپر سائٹیشن سکورکواستعمال کیا جاتا ہے ۔  این آئی ٹی سرینگر کے ڈاکٹر ایم ایف وانی،ڈاکٹر نورزماں خان،اسسٹنٹ پروفیسرڈاکٹر ہرویرسنگھ پالی،اسسٹنٹ پروفیسرڈاکٹر سندیپ راتھی،اسسٹنٹ پروفیسرڈاکٹر اسدالرحمن اور اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر وجے کمار شامل ہیں۔این آئی ٹی کے ڈائریکٹرڈاکٹر راکیش سہگل نے انسٹیٹیوٹ کے فیکلٹی ممبران کو اس کارکردگی کیلئے مبارکباد دی ہے۔انسٹی ٹیوٹ کے رجسٹرار پروفیسرقیصربخاری نے بھی ان فیکلٹی ممبران کو مبارکباد پیش کی ہے۔
 
 

کپوارہ میں گھرگھرٹیکہ کاری مہم کامعائنہ کیاگیا

کپوارہ//ڈپٹی کمشنر کپوارہ امام الدین نے جمعہ کوکپوارہ بلاک کے مختلف علاقوں میں گھرگھر ٹیکہ کاری مہم کا معائنہ کیا تاکہ کووِڈ مخالف ٹیکہ کاری کے تحت آبادی کے مقررہ ہدف کو حاصل کیاجائے۔ڈپٹی کمشنر نے کووِڈ اسپتال کپوارہ اوراسپتال کے مختلف شعبوں جن میں کووِڈ سینٹر،اوپی ڈی،آئی پی ڈی،یوایس جی ،لیبرروم اور ایمرجنسی سیکشن کامعائنہ کیا۔ڈپٹی کمشنر نت میرمحلہ،ملک محلہ،گنائی محلہ،سلکوٹ اور گوشی گائوں کے دورہ کے دوران گھرگھر ٹیکہ کاری مہم کاجائزہ لیا۔اس موقعہ پر ڈپٹی کمشنر نے لوگوں پرزوردیا کہ وہ آگے آکرٹیکہ لگوائیں،تاکہ مہلک وبائی بیماری کورونا وائر س بچا جائے۔انہوں نے متعلقہ عملہ اورفیلڈ میں کام کرنے والوں پرزوردیا کہ وہ گھر گھر ٹیکہ کاری مہم میں سرعت لائیںتاکہ مقررہ ہدف کومعینہ مدت میںحاصل کیا جائے۔ان کے ہمراہ ضلع کے ہیلتھ افسرعبدالغنی اور دیگر حکام بھی تھے۔
 

کپوارہ میں کورونا مریضوں کے شفایاب ہونے کی شرح97فیصد:ڈپٹی کمشنر

کپواڑہ//ضلع ترقیاتی کمشنر کپواڑہ اِمام الدین نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ کووِڈ۔19 کے وَبائی مرض کے خلاف کووِڈ مناسب طرزِ عمل اختیار کریں اور کووِڈ حفاظتی ٹیکے لگائیں۔اِن باتوں کا اِظہار ضلع ترقیاتی کمشنر کپواڑہ نے میڈیا اَفراد کو ضلع میں کووِڈ تخفیفی اِقدامات کی موجودہ صورتحال کے بارے میں بریفنگ دینے کے دوران کیا۔اُنہوں نے کہا کہ ضلع میں کووِڈ مثبت معاملات میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے ۔اُنہوں نے عوام الناس سے اپیل کی کہ وہ کووِڈ۔19 کے رہنما اَصولوں اور ایس او پیز پر من و عن سختی سے عمل پیرا رہیں ۔اِس کے علاوہ قریبی ویکسی نیشن مراکز پر جاکر کووڈ مخالف ٹیکے لگائیں۔ڈی سی کپواڑہ نے تفصیلات دیتے ہوئے کہا کہ مثبت معاملات کی شرح 1.3 فیصد پہنچ گئی اور شفایابی کی شرح 97فیصد ہوگئی۔اُنہوں نے مزید کہا کہ ضلع میں 243 مثبت معاملات سرگرم ہیں ۔ اِس کے علاوہ ضلع  میں گھریلو آئیسولیشن کے تحت122 اَفراد اور ہسپتال آئیسولیشن میں 22 معاملات ہیں۔اُنہوں نے مزید کہا کہ ضلع نے کووِڈ ایس او پیز پر عمل کرنے کے قواعد کو سختی سے نافذ کیا ہے اور ایس او پیز کے خلاف ورزی پر امسال یکم اپریل سے تقریباً23لاکھ روپے جرمانے کی ادائیگی ہوچکی ہے۔ضلع ترقیاتی کمشنر نے صحت ، پولیس ، ریوینو ، آئی سی ڈی ایس اور دیگر بشمول کووِڈ وَبائی اَمراض کے خاتمے میں خصوصی کوششیں کرنے والے تمام شراکت داروں کا شکریہ اد ا کیا۔
 

گاندربل میں94 مراکز پر ٹیکہ کاری جاری

گاندر بل//گاندربل میں 94ٹیکہ کاری مراکزپر18سے44برس تک کی عمرکے لوگوں کی ٹیکہ کاری مہم زوروشور سے جاری ہے اوراب تک ضلع کی14فیصدآبادی کوٹیکہ لگایا گیا ہے۔اس بات کی جانکاری ڈپٹی کمشنر گاندر بل کریتکا جیوتسنا کی صدارت میںافسراں کے ایک اجلاس میں دی گئی۔اجلاس میں ضلع بھر میں 18 سے 44 سال کی عمر تک جاری کووڈ 19 سے متعلق ویکسی نیشن مہم کا جائزہ لیاگیا ۔ اجلاس میں بتایا گیا کہ ضلع بھر میں قائم تمام 94 ویکسی نیشن سائٹوں پر 18  سے 44 سال تک کی عمر کے گروپوں کیلئے ویکسی نیشن ڈرائیو زوروں پر چل رہی ہے اور اب تک 14 فیصد سے زائد آبادی کو ویکسین لگائی گئی ہے ۔ ویکسی نیشن ڈرائیو پر ہونے والی پیش رفت کا جائیزہ لیتے ہوئے ڈی سی نے ویکسی نیشن ڈرائیو میں مصروف تمام افسران /اہلکاروں کو تاکید کی کہ پہلے سے طے شدہ اہداف روزانہ کی بنیاد پر حاصل کئے جائیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ ویکسی نیشن ڈرائیو کو تیزی سے بڑھانے اور جنگی بنیادوں پر جاری رکھنے کی ضرورت ہے کیونکہ یہ کووڈ 19 وبائی امراض کے پھیلاؤ کو روکنے کا سب سے موثر طریقہ ہے ۔ انہوں نے تمام محکمہ جات پر زور دیا کہ وہ زیادہ سے زیادہ متحرک ہونے کو یقینی بنانے کیلئے بھر پور کوششیں کریں۔ اس کے علاوہ پی آر آئی ، آئمہ اور سول سوسائیٹی کے ممبروں سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز کو بھی شامل کریں تا کہ عام لوگوں کو ویکسی نیشن کے فوائد کے بارے میں حساسیت پیدا کریں ۔ دریں اثنا ڈی سی نے ہر ایک سے اپیل کی کہ وہ ویکسین لگائیں اور اس مہلک وائیرس سے محفوظ رہنے کیلئے ماسک ، ہاتھ دھونے ، سماجی دوری سمیت مناسب سلوک کی پیروی کریں ۔ اجلاس میں اے ڈی سی مظفر احمد پیر ، سی پی او ، سی ایم او ، جی ایم ڈی آئی سی ، ڈی ای سی ایم او ، بی ایم اوز اور دیگر متعلقہ عہدیداروں نے شرکت کی ۔ 
 

قمریہ میدان گاندربل میں بیداری کیمپ

گاندربل//قمریہ میدان گاندربل میں جمعہ کو کووِڈ – 19ٹیکہ کاری وبیداری کیمپ کا انعقاد کیا گیاجس میں ضلع کے نوجوانوں اور کھیل شائقین نے حصہ لیا۔اس دوران گاندربل کے چیف میڈیکل افسر اور ڈپٹی چیف میڈیکل افسر نے نوجوانوں کو کووِڈٹیکہ کاری مہم کی جانکاری دی اورکہا کہ یہ افواہیں بے بنیاد ہیں کہ کووِڈ ٹیکہ لگانے سے نوجوان بانجھ ہورہے ہیں ۔انہوں نے نوجوانوں پرزوردیا کہ وہ جلد سے جلد کووِڈ ٹیکہ لگوائیںجواس بیماری سے بچائو کا واحد ہتھیار ہے۔اس موقعہ پرضلع ٹیکہ کاری افسرنے بھی تقریر کی اورشرکاء کو ٹیکہ کاری کی افادیت سے باخبر کیا۔انہوں نے کہا کہ ضلع میں تمام94مقامات جہاں ٹیکہ کاری مراکز قائم کئے گئے ہیں،فعال اور سرگرم ہیں اورلوگوں سے اپیل کی کہ وہ ان مقامات پر جاکر ٹیکہ لگوائیں۔اس دوران ضلع کرکٹ ایسوسی ایشن کے صدر صائم مصطفی نے محکمہ صحت کا شکریہ ادا کیا جو انہوں نے گاندربل میں کووِڈ ٹیکہ کاری اور بیداری کیمپ کا انعقاد کیا۔انہوں نے18سے44سال تک کی عمر کے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ آگے آکر خود کو ٹیکہ لگوائیں اوراس بات کو دہرایا کہ ٹیکہ لگانا صدفیصدمحفوظ ہے۔
 
 

رکھ ہار بمنہ میں بسائے گئے ڈل باسی بنیادی سہولیات سے محروم 

سرینگر//رکھ ہار بمنہ میں بسائے گئے جھیل ڈل کے باسیوں کاالزام ہے کہ ان کی کالونی میں کوئی بھی بنیادی سہولیت میسر نہ ہونے کی وجہ سے ان کی زندگی اجیرن بن گئی ہے ۔ انہوںنے کہا کہ کالونی میں نہ پانی کی سپلائی کا بندوبست ہے اور ناہی سڑکوں اور دیگر ضروریات  زندگی کی سہولیات موجودہیں ۔رکھہار بمنہ میں ڈل بازآبادکاری پالیسی کے تحت بسائے گئے لوگوں نے الزام لگایا ہے کہ ان کو جس جگہ بسایا گیا ہے وہاں پر بنیادی سہولیات کا فقدان ہے جس کے نتیجے میں انہیں سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ ڈل باسیوںکا کہنا ہے کہ رکھ ہار کے اس علاقے میں پینے کے صاف پانی کی سپلائی کا کوئی بھی انتظام نہیں ہے جس کی وجہ سے مکین شدید مشکلات سے دوچار ہیں ۔ انہوںنے کہا کہ پلاسٹک پائپوں کے ذریعے کچھ گھروں کو پانی پہنچتا ہے جہاں سے دیگر لوگ بھی پانی حاصل کررہے ہیں۔اگرچہ انتظامیہ نے اُس وقت کہا تھا کہ اس کالونی میں پانی کی سپلائی پہلی ترجیح رہے گی لیکن دس برس ہونے کے باوجود بھی پانی فراہم نہیں کیا جارہا ہے ۔ سی این آئی کے مطابق اس کے علاوہ یہاں پر بجلی کا کوئی بھی معقول انتظام نہیں ہے ، ڈرینیج اور سڑکوں کی عدم دستیابی کے سبب بارشوں کا پانی لوگوں کے گھروں میں داخل ہوجاتا ہے اور لوگ یہاں سے ہجرت کرنے پر مجبور ہیں ۔ مکینوںنے اس سلسلے میں متعلقہ حکام سے اپیل کی کہ وہ ان مسائل کی طرف توجہ دیں ۔ انہوں نے کہا کہ رکھ ہار ڈل کالونی کے لوگوں کی زندگی کے معیار کو بہتر بنانے کیلئے فوری اقدامات کئے جائیں۔ 
 

اندرگام پٹن میں پانی کی عدم دستیابی 

مقامی آبادی مشکلات سے دوچار 

فیاض بخاریکی
 
بارہمولہ //اندر گام پٹن میں پینے کے صاف پانی کی عدم دستیابی سے مقامی لوگوں کو گرمیوں کے ان ایام میں سخت مشکلات کا سامنا کر نا پڑ رہا ہے ۔ حجام محلہ اندرگام پٹن دیہات کے لوگوں نے نے محکمہ شکتی حُکام پر پر الزام عائد کر تے ہوئے کہا کہ محکمہ کی عدم توجہی سے پانی کی سپلائی بُری طرح سے متاثر ہوئی ہے اور لوگ صاف پانی کی ایک ایک بوند کیلئے ترس رہے ہیں ۔ مشتاق احمد نامی ایک باشندے نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ہے کہ پانی کی شدید قلت نے ان کی زندگی اجیرن بنا کے رکھ دی ہے اور علاقہ پچھلے سات ماہ سے پانی سے محروم ہے۔مذکورہ شہری نے کہا کہ کئی بار متعلقہ محکمہ کو اس معاملے کی جانکاری دی گئی لیکن مایوسی کے سوا کچھ حاصل نہیں ہوا ۔ انہوںنے کہا کہ علاقہ میں نصف صدی پہلے بچھائی گئی پائپ لائن بوسیدہ اور ناکارہ ہوچکی ہے اور آبادی میں خاطر خواہ اضافہ ہونے کی وجہ سے علاقے تک پانی کی سپلائی پہنچنا محال بن گیا ہے۔ مقامی لوگوں کاکہنا ہے کہ خواتین کو پانی حاصل کرنے کیلئے کئی میل پیدل جانا پڑتا ہے ۔ مقامی لوگوں نے متعلقہ محکمہ کے علیٰ حکام سے مطالبہ کیا ہے علاقے میں فوری طور پر پانی سپلائی میں بہتری لایا جائے تاکہ لوگوں کو درپیش مشکلات سے نجات مل سکے۔
 
 

سونہ نار دارپورہ لولاب کی سڑک خستہ حال

لوگوں کا عبور و مرور دشوار ،میگڈم بچھانے کی مانگ 

سرینگر//لولاب دار پورہ سونہ نار سڑک خستہ حال ہونے کے نتیجے میں عوام کو گوناگوں مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔شمالی کشمیر کے سرحدی ضلع کپوارہ کے دار پورہ سونر روڑ لولاب کی حالت خستہ ہوچکی ہے جس کے نتیجے میںلوگوں کا اس سڑک پر چلنا پھرنا دشوار بن گیا ہے ۔ مقامی لوگوں کاکہنا ہے کہ سڑک پر پیدل سفر کرنا لوگوں کیلئے باعث پریشانی بن گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سڑک پر جگہ جگہ گہرے گڑھے بن گئے ہیں جن میں بارشوں کا پانی جمع ہوکر یہ گڑھے اندھے کنوئوں کی شکل اختیار کرلیتے ہیں جو کسی حادثے کا موجب بن جاتے ہیں ۔ سی این این آئی کے مطابق لوگوںنے کہا کہ سڑ ک کی مرمت کے حوالے سے اگرچہ متعلقہ حکام سے کئی بار اپیل کی گئی لیکن انہوںنے اس ضمن میں آج تک کوئی کارروائی نہیںکی ۔ لوگوں نے متعلقہ حکام اور ضلع انتظامیہ سے اپیل کی کہ وہ اس وقت موسم گرما میں خستہ حال سڑک کی مرمت کیلئے میگڈم بچھائے تاکہ لوگوں کوراحت نصیب ہو۔ 
 
 

ٹنگمرگ میں جیب کترے سرگرم

۔2شہریوں کے ہزاروں روپے اڑا لئے

مشتاق الحسن
 
 ٹنگمرگ //ٹنگمرگ میں جیب کتروں نے 2شہریوں کے ہزاروں روپے اڑا لئے۔ٹنگمرگ میں جمعہ کو دن دہاڑے اس وقت دو بزرگ شہریوں کو جیب کتروں نے راہ چلتے جیپیں کاٹ کر ہزاروں کی رقم لوٹ لی جب دونوں بازار میں خرید و فروخت میں مصروف تھے ۔۔بتایا جاتا ھے کہ تریرن سے تعلق رکھنے محکمہ بجلی کے دو سابق ملازم عبدالرحمان بٹ اور عبد الرشید ریشی کو اسوقت ہزراوں روپیوں سے ہاتھ دھونا پڑا جب دونوں جموں و کشمیر بینک سے ماہانہ پنشن لیکر بازارمیں سامان خریدنے گئے تھے۔ اس دران دونوںکی جیبوں کوجیب کتروں نے صاف کیا اور ان کو پتہ بھی نہیں چلا۔لوگوں نے پولیس سے جیب کتروں کی نکیل کسنے کی اپیل کی ہے۔
 
 
 

نیشنل کانفرنس کا اظہارِ رنج وغم 

سرینگر//نیشنل کانفرنس صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ (رکن پارلیمان) اور نائب صدر عمر عبداللہ نے پارٹی کے سینئر رکن اور صدرِ بلاک سید غازی شاہ ساکن کرناہ کی والدہ نسبتی کے انتقال پر گہرے صدمے کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے اس سانحہ ارتحال پر مرحومہ کے جملہ سوگوران کیساتھ دلی تعزیت کا اظہار کیا اور مرحومہ کی جنت نشینی کیلئے دعا کی۔ پارٹی جنرل سکریٹری علی محمد ساگر، صوبائی صدر ناصر اسلم وانی،سینئر لیڈران محمد اکبر لون،شریف الدین شارق، چودھری محمد رمضان، کفیل الرحمن، میر سیف اللہ ،قیصر جمشید لون اور یوتھ لیڈر زاہد مغل نے بھی تعزیت کا اظہار کیا ہے۔ 
 

ہندواڑہ کے معروف گوجر رہنما اپنی پارٹی میں شامل 

سرینگر// ضلع کپواڑہ کے راجوار ہندواڑہ سے تعلق رکھنے والے معروف گوجر رہنما اور سماجی کارکن فاروق چیچی نے جمعہ کو اپنے ساتھیوں سمیت لالچوک سرینگر میں منعقدہ تقریب کے دوران اپنی پارٹی میں شمولیت اختیار کر لی۔ سٹہ کوجی راجوار ہندواڑہ سے تعلق رکھنے والے چیچی علاقہ کے سرگرم رہنما ہیں جو لوگوں کے سماجی واقتصادی مسائل کو ہر فورم پر اُجاگر کرنے کے لئے پیش پیش رہتے ہیں۔ انہوں نے راجوار حلقہ سے حالیہ ضلع ترقیاتی کونسل انتخابات بھی لڑے ہیں۔ جماعت میں اُن کا خیر مقدم کرتے ہوئے الطاف بخاری نے اُمید ظاہر کی کہ چچی کی شمولیت سے کپواڑہ ضلع میں زمینی سطح پر پارٹی کیڈر مزید مضبوط ہوگا۔ انہوں نے کہاکہ گوجر طبقہ جموں وکشمیر کا لازمی اور ناقابل ِ تنسیخ حصہ ہے۔ اپنی پارٹی سبھی طبقہ جات اور قبائل کی یکساں ترقی اور اُنہیں آگے بڑھنے کے مواقع فراہم کرنے کی وعدہ بند ہے۔ اس موقع پر فاروق چیچی نے خطاب میں کہاکہ اپنی پارٹی کے ترقیاتی ایجنڈہ سے متاثر ہوکر اُنہوں نے اِس جماعت کا حصہ بننے کا فیصلہ کیا۔ انہوں نے جموں وکشمیر کے لوگوں کے مسائل کو حل کرنے کے لئے پارٹی کے حقیقت پسندانہ سیاسی نظریہ کی تعریف کی۔ پارٹی سینئر نائب صدر غلام حسن میر، ریاستی سیکریٹری منتظر محی الدین، صوبائی نائب صدر جموں سید اصغر علی، پارٹی سنیئرلیڈر اور ضلع نائب صدر کپواڑہ عبدالرشید بٹ بھی اس موقعہ پر موجود تھے۔
 

محکمہ اطلاعات و تعلقات عامہ کااِظہار تعزیت 

سری نگر//محکمہ اطلاعات و تعلقات عامہ ( ڈی آئی پی آر ) کے ڈائریکٹر راہل پانڈے اور محکمہ کے عملے نے جوائنٹ ڈائریکٹر اِنفارمیشن (ہیڈ کوارٹر ) اِرشاد احمد کی والدہ کے اِنتقال پر گہرے دُکھ کا اِظہار کیا ہے۔اِس سلسلے میں محکمہ کے اَفسران اور ملازمین کی ایک تعزیتی میٹنگ منعقد ہوئی جس میں شرکأ نے اِرشاد احمد کے ساتھ ہمدردی اور یکجہتی کا اِظہار کیا ۔میٹنگ میں مرحومہ کی روح کے اَبدی سکون اور سوگوار کنبے کو یہ صدمہ عظیم برداشت کرنے کی ہمت کے لئے دعا کی گئی۔