۔6 ماہ میں 2100 مسلم لڑکیوں کو ہندو بہو بنانے کا ہدف

اتر پردیش//آر ایس ایس سے وابستہ تنظیم ہندو جاگرن منچ نے بڑے پیمانے پر مبینہ لو جہاد کے خلاف مہم چھیڑنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کی شروعات اتر پردیش سے کر کے تقریباً 2100 مسلم لڑکیوں کو ہندو گھرانوں کی بہو بنانے کا ہدف رکھا گیا ہے۔ یہ ہدف 6 مہینوں میں پورا کرنے کی بات کہی گئی ہے۔ ہندو جاگرن منچ، اترپردیش کے صدر اجّو چوہان نے ایک اخبار سے گفتگو کے دوران یہ تفصیلات بتائیں۔چوہان نے کہا ’’لو جہاد کو منہ توڑ جواب دینے کا وقت اب آ چکا ہے۔ اب انہیں انہیں کے انداز میں جواب دیا جائے گا۔ ہم صوبے کے تمام اضلاع میں تنظیم کے لئے ہدف طے کریں گے۔ صوبے بھر میں 6 مہینوں کے اندر کم از کم 2100 مسلم لڑکیوں کو بہو بناکر ہندو گھروں میں لایا جایا گا۔ یہ ہدف کوئی زیادہ بڑا نہیں ہے لہٰذااسے آسانی سے پورا کیا جا ئے گا۔ ‘‘اجو چوہان نے مزید کہا ’’ہم سے رجوع تقریباً 150 ہندو لڑکے ہیں جن کی دوستی مسلم لڑکیوں سے ہے۔ وہ شادی کرنا چاہتے ہیں لیکن خوف کی وجہ سے ایسا نہیں کر پا رہے ہیں۔ ایسے حالات میں ہم پہلے انہیں کی شادی کرائیں گے اور انہیں پوری طرح حفاظت فراہم کریں گے۔‘‘اجو چوہان نے مبینہ لو جہاد کو جڑ سے مٹانے کے لئے لوگوں سے اپیل کی ہے۔ ان کے مطابق ’’ہم لوگوں کے گھر گھر جاکر یہ اپیل کریں گے کہ مسلم لڑکیوں کو بہو بناکر لائیں، جو ہندو مسلم لڑکی کو بہو بنائے گا وہ اپنے دھرم کے لئے بڑا کام کرے گا۔‘‘اجو چوہان کا مزید کہنا ہے کہ ’’مسلمان لو جہاد کے لئے اپنی شناخت چھپا کر ہندو دھرم کی لڑکیوں کو نشانہ بناتے ہیں۔