ہندوستانی سیکولرزم کی مضبوط بنیاد ہندو اکثریت کی رواداری کی اقدار پر قائم : نقوی

ممبئی//اقلیتی امور کے مرکزی وزیر مختار عباس نقوی نے آج یہاں کہا کہ ہندوستانی سیکولرزم کی مضبوط بنیاد اکثریتی ہندو طبقے کی ‘‘رواداری کی اقدار’’ سے تیار ہوئی ہے ۔آج ممبئی کے حج ہاؤس کے از سر نو تعمیر ہال کا افتتاح کرتے ہوئے نقوی نے کہا کہ ہندوستان دنیا کا سب سے بڑا سیکولر،جمہوری ملک ہے ۔ جب تقسیم کے بعد پاکستان اسلامک ملک بن رہا تھا تب ہندوستان کے اکثریتی ہندو سماج نے سیکولرزم کا راستہ منتخب کیا۔ مختلف زبانوں، عقیدت، کھانا پینا اور رہن سہن کے باوجود بھی ہندوستان کی اسی ثقافت اور روایت نے ہمیں اتحاد کی مضبوط ڈور سے باندھے رکھا ہے ۔ آج ہندوستان میں اقلیتیں اپنی مکمل مذہبی اور سماجی آزادی کے ساتھ آگے بڑھ رہی ہیں۔نقوی نے کہا کہ ہندوستان کے اسی اتحاد اور ہم آہنگی کی مشترکہ ثقافت نے دہشت گردی اور انسانیت کے دوسرے دشمنوں کو شکست دی ہے اور ملک میں القاعدہ اور آئی ایس جیسی شر پسند قوتوں کی جڑوں کو پاؤں پھیلانے نہیں دیا۔ ہندوستان کا مسلم معاشرہ اچھی طرح جانتا ہے کہ دہشت گردی انسانیت ہی نھیں اسلام کی بھی سب سے بڑی دشمن ہے ۔ نقوی نے کہا کہ ہمیں پوری طرح محتاط رہنا چاہئے کہ کوئی بھی منفی ایجنڈا، ترقی اور ہم آہنگی کے ماحول کو خراب نہ کرنے پائے ۔ سیکولرزم اور جمہوریت کو ہمیں مثبت طاقت بنانا ہو گا، منفی کمزوری نہیں۔نقوی نے کہا کہ سال 2019میں 2لاکھ ہندوستانی مسلمان بغیر کسی سبسڈی کے سفر حج پر جائیں گے ، ہمارے ایماندار اور شفاف نظام کا نتیجہ ہے کہ سبسڈی ختم ہونے کے بعد بھی حج پر جانے والوں پر غیر ضروری بوجھ نہیں پڑا اور ملک کی تاریخ میں سب سے زیادہ ہندوستانی مسلمان اس سال سفر حج پر جائیں گے ۔ نقوی نے کہا کہ ملک کے 21 ہوائی اڈوں سے 500 سے زیادہ پروازوں کے ذریعہ ہندوستانی مسلمان اس سال حج پر جائیں گے ۔ ان عازمین میں 1 لاکھ 40 ہزار عازمین حج کمیٹی آف انڈیا اور 60 ہزار عازمین حج گروپ آرگنائزر (ایچ جی او) کے ذریعے حج پر جائیں گے ۔ حج گروپ کے منتظمین کوبھي 10 ہزار عازمین حج کو حج کمیٹی آف انڈیا کے مقرر کردہ پیکیج پر ہی لے جانا ہوگا۔مسٹر نقوی نے کہا کہ اس بار شفافیت اور عازمین حج کی سہولت کے لیے حج گروپ منتظمین کا بھی پورٹل (http://haj.nic.in/pto) بنایا گیا ہے جس میں سبھی مجاز ایچ جی او کے پیکج وغیرہ تمام معلومات فراہم کی گئی ہیں۔مسٹر نقوی نے کہا کہ اس سال محرم کے بغیر (مرد رشتہ دار) حج پر جانے والی خواتین کی تعداد گزشتہ برس کے مقابلے دوگنی ہوگی۔ اس برس2340 خواتین بغیر محرم کے سفر حج پر جا رہی ہیں جبکہ گزشتہ برس یہ تعداد 1180 تھی۔ گزشتہ سال کی طرح اس سال بھی بغیر محرم کے حج پر جانے کیلئے درخواست دینے والی ان تمام خواتین کو لاٹری کے بغیر سفر حج پر جانے کا انتظام کیا گیا ہے ۔ اس کے علاوہ ہندوستان سے جانے والے 2 لاکھ عازمین حج میں تقریباً 48فیصد خواتین شامل ہیں۔حج کے لئے پروازیں4 جولائی 2019 سے شروع ہو رہی ہیں۔ 4 جولائی کو دہلی، گیا، گوہاٹی، سری نگر سے فلائٹس جانا شروع ہوں گی۔بنگلور (7جولائی)، کالی کٹ (7جولائی)، کوچین (14 جولائی)، گوا (13 جولائی)، منگلور (17 جولائی)، ممبئی (14 جولائی، 21 جولائی)، سری نگر (21 جولائی) سے عازمین سفر حج پر روانہ ہوں گے ۔ دوسرے مرحلے میں احمد آباد (20 جولائی)، اورنگ آباد(22 جولائی)، بھوپال (21 جولائی)، چنئی (31 جولائی)، حیدرآباد (26 جولائی)، جے پور (20 جولائی)، کولکتہ (25 جولائی)، لکھنؤ (20جولائی) ، ناگپور (25 جولائی)، رانچی (21 جولائی) اور وارانسی (29 جولائی) کوعازمین سفر حج جانا شروع ہوں گے ۔