ویکسین ،آکسیجن اور ادویات کی کوئی کمی نہیں

 سری نگر//لیفٹیننٹ گورنر کے مشیربصیر احمد خان نے یہاں ایس کے آئی سی سی میں جموں و کشمیر میں کووِڈ۔19 کے انتظام کا جائزہ لینے کے لئے مختلف شراکت داروں کے ساتھ تفصیلی ملاقات کی ۔اس موقعہ پر اپنے خیالا ت کا اِظہار کرتے ہوئے مشیر بصیر خان نے کہا کہ کووِڈکے خلاف جنگ مشترکہ کاوش ہے اور اِس وبائی صورتحال کو مؤثر طریقے سے نمٹنے کے لئے تمام سطح پر تمام شراکت داروں نے تعاون کی خواہش کااظہار کیا ہے۔اُنہوں نے کہا کہ حکومت صورتحال سے نمٹنے کے لئے پوری کوشش کر رہی ہے۔ تاہم حکومت کی کوششوں کو معاشرے کے تعاون سے پورا کرنے کی ضرورت ہے اور اس کوشش میں چیمبر آف کامرس ، تاجروں ، ہوٹلوں ، ٹرانسپورٹروں ، مذہبی رہنماؤں جیسے شراکت داروں کا رول زیادہ اہم بن گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ آخری بار کووڈ۔19 کی پہلی لہر کے دوران کوئی آزمائشی طریقہ نہیں تھا لیکن دوسری لہر کے دوران کووِڈکا مناسب طرز عمل ہر ایک کو معلوم ہوتا ہے اور اس کا رد عمل اچھی طرح سے قائم ہے۔ انہوں نے حکومت کی کوششوں کی تعریف کرتے ہوئے اس بات کا اعادہ کیا کہ انتظامیہ متعدد اقدامات شروع کرکے کووِڈ سے نمٹنے میں پوری طرح مرکوز ہے۔مشیر موصوف نے صحیح معلومات کو پھیلانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ وبائی مرض سے نمٹنے کے بارے میں عوام میں صحیح تعلیم کا پابند ہونا بہت ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ لوگوں کو صورتحال کے بارے میں صحیح نقطہ نظر سے آگاہ کیا جانا چاہئے اور انہیں مشورہ دیا جانا چاہئے کہ وہ افواہوں پر کان نہ دھریں۔ انہوں نے کہا کہ آکسیجن ، ویکسین ، دوائیوں یا دیگر طبی بنیادی ڈھانچے کی کوئی کمی نہیں ہے۔اُنہوں نے کہاکہ لیفٹیننٹ گورنرکووِڈ صورتحال کا روزانہ جائزہ لے رہے ہیں اور ہر محکمے کی کارکردگی کی ذاتی طور پر نگرانی کر رہے ہیں۔ انہوں نے ٹیلی میڈیسن کی اہمیت پر مزید زور دیتے ہوئے کہا کہ یہ ٹیلی مشاورت کے ذریعے مریضوں کو فراہم کی جارہی ہے۔ اِس موقعہ پرسیکرٹری سیاحت سرمد حفیظ نے اپنے خیالات کا اِظہار کرتے ہوئے سیاحت کے شعبے میں کئے جانے والے اقدامات کا تفصیلی جائزہ پیش کیا۔ڈائریکٹر ایس کے آئی ایم ایس نے شرکاء کو اٹھائے جانے والے اقدامات اور صحیح انداز میں بیداری پیدا کرنے کی ضرورت کے بارے میں آگاہ کیا۔ضلع ترقیاتی کمشنر سری نگر محمد اعجاز نے ہسپتالوں میں آکسیجن پلانٹوں کو بڑھانے اور بستروں کی گنجائش سے آگاہ کیا۔ انہوں نے کہاکہ حکومت نے گزشتہ دو ہفتوں میں آکسیجن کی گنجائش میں 4200 ایل پی ایم کا اضافہ کیا ہے اور آنے والے دنوں میں اضافی 3500 ایل پی ایم آکسیجن صلاحیت شامل کی جارہی ہے۔اس موقعہ پر صنعتی شعبے اور دیگر معاشی شعبوں کے مختلف شراکت داروں نے موجودہ حالات کی وجہ سے ان کی مشکلات کو اجاگر کرتے ہوئے اپنی یادداشت پیش کی اور حکومت کی مداخلت طلب کی۔مشیر نے انہیں یقین دلایا کہ جہاں بھی ضرورت ہو حکومت ہر قسم کی مدد کرے گی۔ انہوں نے انہیں یقین دہانی کرائی کہ میٹنگ کے دوران جو تاثرات اٹھائے گئے ہیں وہ بروقت حل کیلئے لیفٹیننٹ گورنر اور متعلقہ محکموں کے ساتھ اُٹھائے جائیں گے۔