مزید خبریں

 مرکزی وزیر اطلاعات و نشریات کا گاندربل دورہ اِختتام پذیر |  ضلع میں ترقیاتی منظر نامے کا جائزہ لیا ، پنچایتی نمائندوں وسپورٹس وفد کیساتھ تبادلہ خیال

گاندربل//مرکزی وزیر اطلاعات و نشریات اور امورِ نوجوان و کھیل کود انوراگ سنگھ ٹھاکر کا گاندربل کا دو روزہ دورہ اِختتام پذیر ہوا۔مرکزی وزیر نے دوسرے دِن ضلع کے ترقیاتی منظر نامے کا جائزہ لیا اور اُنہوں نے ڈی ڈی سی ، بی ڈی سی ، یو ایل بی اور سپورٹس وفود کے ساتھ کانفرنس ہال منی سیکرٹریٹ گاندربل میں تبادلہ خیال کیا۔دورانِ میٹنگ ضلع ترقیاتی کمشنر کرتیکا جیوتسنا نے ایک پاور پوائنٹ پرزنٹیشن کے ذریعے ضلع کی ترقیاتی سرگرمیوں اور حصولیابیوں کا مختصر جائزہ پیش کیا۔ اُنہوں نے وزیر موصوف کو ضلع میں کووِڈ تخفیفی کوششوں اور مختلف سکیموں کی پیش رفت کے بارے میں بھی جانکاری دی۔ضلع ترقیاتی کمشنر گاندربل نے کووِڈ تخفیفی کوششوں اور ٹیکہ کاری مہم کے بارے میں جانکاری دی ۔اُنہوں نے کہا کہ ضلع کی تمام پنچایتوں میں کووِڈ کیئر سینٹر قائم ہیں اور زائد اَز 18برس عمر کی آبادی کو80فیصد کووِڈ حفاظتی ٹیکے لگائے جاچکے ہیں۔اُنہوں نے وزیر موصوف کو مشن یوتھ کے تحت شروع کی گئی سکیم کی پیش رفت کے بارے میں بھی آگاہ کیا جس میں مدرا، ممکن ، سکشم ، تیجسوانی، یوتھ کلب اور دیگر باقاعدہ مرکزی معاونت والی سکیم بشمول پی ایم اے وائی ، منریگا، ایس بی ایم ، پردھان منتری اُجولا ، این آر ایل ایم اور پی ایم کسان،آیوشمان بھارت،لنگویشنگ پروجیکٹ شامل ہیں۔وزیر موصوف نے ضلع میں کووِڈ ۔19 کے منظر نامے کا جائزہ لیتے ہوئے کہا کہ اگر عوام میں زیادہ بیداری پیدا کی جائے او رضلع بھر میں زور دار ٹیکہ کاری مہم پر زور دیا جائے تو کووِڈ کی تیسری لہر کو کم کیا جاسکتا ہے۔اُنہوں نے اَفسران پر زور دیا کہ وہ یکم ؍ اَکتوبر 2021ء سے شروع ہونے والے ملک بھر کے ’’ کلین اِنڈیا مشن‘‘ میں شامل ہوں جس دوران ملک بھر میں 75 لاکھ کلو کوڑا کرکٹ جمع کیا جائے گا۔وزیر موصوف نے مختلف سکیموں کے تحت ہونے والی پیش رفت کا جائزہ لیتے ہوئے ضلعی اِنتظامیہ کی مختلف فائدہ مند سکیموں میں کامیابیوں کی تعریف کی اور اَفسران سے کہا کہ وہ تن دہی ، محنت اور لگن کے ساتھ کام کریں ۔دریں اثنا وزیر موصوف نے ڈی ڈی سیز ، بی ڈی سیز ، یول ایل بیز اور پی آر ائیز سے ملاقا ت کی جنہوں نے اَپنے اَپنے علاقوں کی ترقی سے متعلقہ مختلف مطالبات وزیرموصوف کو گوش گزار کئے۔اِس موقعہ پر لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر فاروق خان ، ڈی ڈی سی چیئرپرسن گاندربل نزہت اِشفاق، ضلع ترقیاتی کمشنر گاندربل کرتیکا جیوتسنا ، ڈی ڈی سی وائس چیئرپرسن ، ایس پی گاندربل اور ضلع اِنتظامیہ کے دیگر اَفسران بھی موجود تھے۔وزیر موصوف نے کہا کہ جل جیون مشن کامقصد ہے کہ دیہی ہندوستان کے تمام گھرانوں کو انفرادی گھریلو نل کنکشن کے ذریعے مناسب پینے کا پانی مہیا کیا جائے اوراُنہوں نے متعلقہ اَفراد کو ہدایت دی کہ ضلع کے متاثرہ علاقوں میں پینے کے پانی کی سہولیت فراہم کرنے کو ترجیح دی جائے۔اس موقعہ پر خطاب کرتے ہوئے مشیر موصوف نے کہا کہ یہ فخر کی بات ہے کہ وزیر نے ضلع کا دورہ کیا اور اُمید ظاہر کی کہ وہ کھیل بنیادی ڈھانچے کو مزید ترقی دینے کے لئے ہر طرح کی مدد فراہم کریں گے۔بعد میں مرکزی وزیر اطلاعات و نشریات اور امورِ نوجوان و کھیل کود انوراگ سنگھ ٹھاکرنے مختلف کھیلوں کے وفود میں سابق کھلاڑیوں ،کوچوں ، موجودہ کھلاڑیوں اور مختلف کھیل شعبوں کے اُبھرتے ہوئے کھلاڑی شامل تھے ، ملے اور ان سے تبادلہ خیال کیا۔مرکزی وزیر نے وفد کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مرکز ی حکومت نوجوانوں کی صلاحیتوں اور  کھیل بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے لئے پُر عزم ہے اور اُنہوں نے مزید کہا کہ مرکزی حکومت نے کھیل میدانوں اور اِنڈور کی ترقی کے لئے پی ایم ڈیولپمنٹ پلان کے تحت 200 کروڑ روپے مختص کئے ہیں ۔ اُنہوں نے کہا کہ یوٹی میں ’ کھیلو اِنڈیا سکیم ‘ کے تحت 40 مراکز کی منظوری دی گئی ہے جس میں نوجوانوں کو ان کی صلاحیتوں کے مطابق ضروری تربیت دی جائے گی ۔مرکزی وزیر اطلاعات و نشریات اور امورِ نوجوان و کھیل کود انوراگ سنگھ ٹھاکرنے اُٹھائے گئے مطالبات کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ یہ حوصلہ اَفزا ہے کہ لوگ کھیلوں کی طرف زیادہ توجہ مرکوز کر رہے ہیں جو کہ پوری قوم کے لئے باعث اِفتخار ہے اور اِس خطے میں سرمائی اور گرمائی کھیلوں کی ترقی کے لئے ہر طرح کے تعاون کو یقین دہانی کرائی ۔اِس سے قبل وزیر نے کھیر بھوانی شرائین تولہ مولہ میں حاضری دی اورسب کی خوشی ، خوشحالی اور فلاح و بہبود کے لئے دعا کی۔
 
 
 

مرکزی وزیر مملکت روڈ ٹرانسپورٹ و شہری ہوا بازی کا اننت ناگ دورہ | پنچایتی و بلدیاتی نمائندوںکے ساتھ تبادلہ خیال،پروجیکٹوں کا معائینہ 

اننت ناگ//مرکزی حکومت کے جاری عوامی رَسائی پروگرام کے ایک حصے کے طور پر مرکزی وزیر مملکت روڈ ٹرانسپورٹ ، ہائی ویز اور شہری ہوا بازی جنرل ( ریٹائرڈ) ڈاکٹر وی کے سنگھ نے اننت ناگ کا تین روزہ دورہ شروع کیا۔وزیر موصوف نے زراعت ، باغبانی ، آئی سی ڈی ایس ، صحت سماجی بہبود ، ہینڈ لوم / ہینڈی کرافٹس ، صنعت و حرفت ، امور ِ نوجوان و کھیل کود ، این آر ایل ایم ،پشو و بھیڑ پالن وغیرہ محکموں کے ذریعے لگائے گئے سٹالوں کا معائینہ کیا۔انہیں متعلقہ محکموں کی جانب سے حکومت کی مرکزی معاونت والی اور فلیگ شپ سکیموں میں کی گئی حصولیابیوں کے بارے میں جانکاری دی گئی۔وزیرموصوف نے مستحقین کے ساتھ بات چیت کی اور ان میں موٹرائزڈ پاور سپریر، دودھ وین اور ڈیری یونٹس ، موٹرائزڈ ٹرائی سائیکلز ، نوزائیدہ بچیوں کو کٹس وغیرہ تقسیم کئے۔اِس موقعہ پر وزیر موصوف نے منتخب عوامی نمائندوں بشمول ڈی ڈی سی اور بی ڈی سی ممبران ، دیگر پی آر آئی ایس، میونسپل کمیٹیوں کے صدور اور دیگر یو ایل بی ممبران / کونسلروں کے ساتھ ایک استفساری میٹنگ منعقد کی ۔ میٹنگ میں چیئر مین ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کونسل محمد یوسف گورسی ، ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کمشنر ڈاکٹر پیوش سنگلا ، سینئر سپر اِنٹنڈنٹ پولیس ، آشیش مشرا ، اے ڈی ڈی سی اور دیگر ضلعی اور سیکٹورل اَفسران نے شرکت کی۔عوامی نمائندوں نے وزیر کے ساتھ مختلف مسائل پر تبادلہ خیال کیا ۔ اُنہوں نے اَپنے علاقوں میں ترقی او رعوامی فلاح و بہبود سے متعلق مختلف مطالبات گوش گزار کئے۔اُنہوں نے مرکزی وزیر کا یہاں کا دورہ کرنے پر شکریہ اَدا کیا۔ڈاکٹر سنگھ نے عوامی نمائندوں اور وفود کو بغور سنا اور یقین دِلایا کہ اُن کے جائز مسائل اور مطالبات کو وقت کے ساتھ حل کیا جائے گا۔بعد میں وزیر موصوف نے جی ایم سی دیالگام اننت ناگ کا دورہ کیا اور وہاں جاری تعمیراتی کام کی رفتار اور معیار کا جائزہ لیا ۔اُنہوں نے کالج کے طلبا ء اور ڈاکٹروں سے بھی بات چیت کی ۔مرکزی وزیر مملکت روڈ ٹرانسپورٹ ، ہائی ویز اور شہری ہوا بازی جنرل ( ریٹائرڈ) ڈاکٹر وی کے سنگھ کے ہمراہ ڈی ڈی سی ، ڈی آئی جی ایس کے آر ، ایس ایس پی ، اے ڈی ڈی سی ، سی پی او اور ضلعی / سیکٹورل اَفسران بھی تھے۔
 
 
 

مشیر بصیر خان کا وہاب صاحب شار شالی پانپور کا دورہ ،عوامی دربار منعقدکیا

پلوامہ//لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر بصیر احمد خان نے وہاب صاحب شار شالی پانپور کا دورہ کیا اور علاقے میں جاری دیہی ترقی اور بجلی کے ترقیاتی کاموں کا معائینہ کیا۔مشیر موصوف کے ہمراہ ضلع ترقیاتی کمشنر پلوامہ بصیر الحق چودھری ، اے ڈی سی پانپور ، اے ڈی سی اور دیگر متعلقہ اَفسران بھی تھے۔اُنہوں نے متعلقہ حکام کو ہدایت دی کہ وہ مربوط اَنداز میں کام کریں اور جاری منصوبوں کے کاموں میں سرعت لائیں تاکہ ان کو جلد اَز جلد مکمل کیا جائے ۔لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر بصیر احمد خان نے نے زیر تعمیر 6.3 ایم وی اے ریسونگ سٹیشن شار شالی کا معائینہ کیا ۔ اُنہوں نے متعلقہ اَفسران کو ہدایت دی کہ وہ پروجیکٹ کو مکمل کرنے کے لئے مشن موڈ پر کام کریں ۔اُنہوں نے اِس سلسلے میں ہدایات دیں اور اِس کے لئے ٹائم لائن طے کی۔ اِس منصوبے کو عوامی فلاح و بہبود کا اِقدام قراردیتے ہوئے مشیر موصوف نے کہا کہ اِس علاقے کے زائد اَز 1200 نفوس کو فائدہ پہنچے گااور متعلقہ اَفسران کو کام کی پیش رفت کا وقتاً فوقتاً جائزہ لینے کی ہدایت دی۔اُنہوں نے پارک کی ترقی پر جاری کاموں کا معائینہ بھی کیا او روہاب صاحب سپرنگ سے لنک روڈ کو ٹائلنگ کے راستے اور منڈیگا او ر14 ویں ایف سی کے تحت آر ڈی ڈی کے ذریعے اَنجام دیا گیا ۔ اُنہوں نے سکیم کے تحت اُجرت بروقت فراہم کرنے کی ہدایت دی اور روزگار پیدا کرنے والے کاموں پر توجہ دینے پر بھی زور دیا۔مشیر موصوف نے بجلی منظر نامے کا جائزہ لیتے ہوئے اَفسران کو ہدایت دی کہ ضلع بھر میں بجلی کی مناسب فراہمی کو یقینی بنایا جائے ۔اُنہوں نے اَفسران کو ہدایت دی کہ وہ موسم سرما کو مد نظر رکھتے ہوئے تمام ضروری اِنتظامات کریں۔مشیر موصوف نے تمام محکموں سے اَفسران سے کہا کہ وہ عوامی شکایات کا فوری ازالہ یقینی بنائیں ۔اُنہوں نے عمل آوری ایجنسیوں پر زو ردیا کہ وہ کام کے باقی سیز ن کو زیادہ سے زیادہ استعمال کریں۔اُنہوں نے اِس بات کا اعادہ کیا کہ ہر پنچایت میں کھیل میدان اور دیگر متعلقہ سہولیات فراہم کی جارہی ہیں ۔ اُنہوں نے اَفسران سے کہا کہ وہ ضلع کے ممکنہ علاقوں میں کھیل میدانوں کی ترقی کے لئے زمین کی نشاندہی کریں۔مشیر موصوف نے کووِڈ تخفیفی کوششوں کا جائزہ لیتے ہوئے کہا کہ کووِڈ ابھی ختم نہیں ہوا ہے او راَنہوں نے کہا کہ اِس وَبائی مرض پر مؤثر قابو پانے کے لئے کووِڈ مناسب طرزِ عمل ( سی اے بی ) کی پاسداری ایک سائنسی طور پر قائم کردہ مشق ہے جس پر تمام معروف ماہرین روزانہ بنیاد پر زور دیتے ہیں۔اُنہوں نے لوگوں پر زور دیا کہ وہ ٹیکہ کاری مہم میں بھرپور طریقے سے حصہ لیں تاکہ صد فیصد آبادی کو حفاظتی ٹیکے لگائے جائیں ۔مشیرموصوف نے حکومت کی کامیابیوں کو ظاہر کرنے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ضلع کی ترقی ، عوامی بہبود ، مرکزی معاونت والی اور دیگر سکیموں پر بڑے پیمانے پر پیش رفت دیکھی ہے۔مشیر موصوف نے علاقے کی سیاحتی صلاحیت کو سراہتے ہوئے اَفسران کو ہدایت دی کہ وہ علاقے اور دیگر اہم مقامات کی خوبصورتی کے لئے اِقدامات کریں۔اُنہوں نے اَفسران سے کہا کہ پہلے سے موجود بنیادی ڈھانچے کی تجدید کے لئے منصوبے تیار کریں اور نئی اِصلاحات تجویز کریں جوکہ علاقے میں سیاحوں کی صلاحیت کو بڑھانے کے لئے ضروری ہے ۔ 
 

مرکزی وزیر مملکت قبائلی امور رینوکا سنگھ کاکولگام دورہ 

پاور رسیونگ اسٹیشن کا افتتاح کیا ، کئی وفود سے ملاقات کی 

کولگام/ /مرکزی وزیر مملکت قبائلی امور رینوکا سنگھ نے مرکزی حکومت کے جاری عوامی آؤٹ ریچ پروگرام کے ایک حصے کے طور پر جموں و کشمیر میں ضلع کلگام کا دورہ کیا ۔ اپنے دورے کے دوران وزیر نے عوامی آؤٹ ریچ پروگرام کے دوران کئی تقریبات اور سرگرمیوں میں حصہ لیا جس میں عوامی عہدیداروں ، منتخب عوامی نمائندوں اور وفود کی شرکت دیکھی گئی ۔ انہوں نے ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کیا اور متعدد عوامی وفود ، پنچائت راج اداروں کے ارکان ، ایس ایچ جی کے اراکین ، یوتھ کلبوں اور قبائلی امور کے وفود کے ساتھ بات چیت کی ۔ وزیر نے اپنے دورے کا آغاز منی سٹیڈیم کلگام کا دورہ کر کے کیا جہاں انہوں نے کرکٹ ، والی بال ، کبڈی اور کھو کھو میں بین زون ضلعی سطح کے مقابلوں کا افتتاح کیا۔انہوں نے کھلاڑیوں کے ساتھ بات چیت بھی کی اور اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے وزیر نے کہا کہ ملک میں نوجوان آبادی کی اکثریت ہے اور نوجوان جو کھیلوں کے میدان میں نمائندگی کر رہے ہیں انہوں نے اولمپکس میں کئی تغمے بھی جیتے ہیں ۔ بعد میں وزیر نے چاولگام کا دورہ کیا اور 10 ایم وی اے رسیونگ سٹیشن کا افتتاح کیا اور اسے لوگوں کیلئے وقف کیا ۔ بعد میں وزیر نے ایکلاویہ رہائشی سکول ٹنگ مرگ کا معائینہ کیا ۔ حکام نے ایک تفصیلی پرذنٹین دی اور وزیر کو قبائلیوں کے اس رہائشی اسکول میں دستیاب سہولیات سے آگاہ کیا ۔ وزیر نے اہر بل کا بھی دورہ کیا جہاں انہوں نے کئی وفود سے ملاقات کی جن میں قبائلی ، گُجر بکروال وفود ، پنچائت راج اداروں کے ارکان ، ایس ایچ جی کے اراکین ، یوتھ کلب کے ارکان اور وفود شامل تھے ۔
 
 
 

 ہائر سیکنڈری سکول گواڑی میں والی بال ٹورنامنٹ کا انعقاد 

اشتیاق ملک
ڈوڈہ //گورنمنٹ ہائر سیکنڈری سکول گواڑی میں ایجوکیشنل اینوائر منٹل سوشل سپورٹس و کلچرل سوسائٹی و گارڈن کلب گواڑی کے اشتراک سے والی بال ٹورنامنٹ کا انعقاد کیا گیا جس میں کل 12 ٹیموں نے شرکت کی. ٹورنامنٹ کا فائنل میچ 7 برادر سنو و بی سی سی بھٹیاس کے درمیان کھیلا گیا جس میں بی سی سی نے برتری حاصل کی۔اس موقع پر ایک تقریب کا بھی اہتمام کیا گیا جس میں تحصیلدار گندوہ ارشاد احمد شیخ و ایس ڈی پی او شہزادہ کبیر متو و چیئرمین سوسائٹی محمد ایوب زرگر نے شرکت کی۔ تقریب کے دوران سبھی کھلاڑیوں کی حوصلہ افزائی کی گئی۔مقررین نے کھیل کود کی اہمیت بیان کرتے ہوئے کہا کہ قلیل سے وسائل کے باوجود بھی نوجوان اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوا رہے ہیں۔انہوں نے نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ تعلیم کے بعد سب سے زیادہ دلچسپی کھیل کود میں دکھائیں۔
 
 
 

گول میں شہیددلہیر سنگھ والی بال میچ اختتام پذیر

 زاہدبشیر
گول//گول میںجموںوکشمیرپولیس کی جانب سے شہیددلہیرسنگھ والی بال ٹورنامنٹ کافائنل میچ کھیلاگیا۔ اس ٹورنامنٹ میں بہت ساری ٹیموںنے حصہ لیا۔اختتامی میچ مہاکنڈاورسپیکرگول کے درمیان کھیلاگیا جس دوسران مہاکنڈ ٹیم نے پانچ سیٹ سے یہ میچ جیت لیا۔ اس موقعہ پرمہمان خصوصی ایس ڈی پی اوگول نے تمام شائقین کاشکریہ اداکیااور نوجوانوں سے نشہ سے دوررہنے کی تلقین کی۔
 
 
 

ڈوڈہ میں کووڈ 19 کے 5 نئے مثبت معاملات 

 اشتیاق ملک
ڈوڈہ //ڈوڈہ ضلع میں کورونا وائرس کے 5 نئے مثبت معاملات سامنے آئے ہیں اور 2 مریض صحتیاب ہوئے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق پیر کے روز ڈوڈہ، بھدرواہ، ٹھاٹھری ،گندوہ و عسر میں ہوئی کوؤڈ جانچ کے دوران پانچ افراد کی ٹیسٹ رپورٹ مثبت آئی ہے جنہیں ہوم قرنطینہ میں رکھا گیا ہے اور دو مریض صحتیاب ہوئے ہیں۔اس طرح سے ضلع میں فعال کیسوں کی تعداد میں ایک بار پھر سے اضافہ ہوا ہے۔ضلع میں فعال کیسوں کی تعداد 72 و شفایاب ہوئے مریضوں کی مجموعی تعداد 7557 پہنچ گئی ہے جبکہ 133 افراد اب تک کوؤڈ 19 سے فوت ہوئے ہیں۔
 
 

کپواڑہ میں پولیس اہلکار کی موت 

کشمیری پنڈتوں کااعلیٰ سطحی تحقیقات کیلئے موم بتی مارچ

 جموں// سیکڑوں کشمیری پنڈتوں نے جگتی کیمپ پر ایک موم بتی مارچ کیا ، جس نے کپواڑہ میں 'غلط شناخت' کے معاملے میں ایک ساتھی کے ہاتھوں ایک نوجوان پولیس اہلکار کی ہلاکت کی اعلیٰ سطحی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔ حکام نے بتایا ہے کہ ہندواڑہ میں تعینات پولیس ڈیپارٹمنٹ میں ایک پیروکار اجے دھر 22 ستمبر کی علی الصبح ایک مندر کی حفاظت کرنے والے ایک سنتری کی گولی لگنے کے بعد جاں بحق ہوگیا جس نے اسے ایک عسکریت پسند سمجھ لیا۔جموں شہر کے مضافات میں مہاجر کیمپ میں مظاہرہ کرتے ہوئے مظاہرین نے وزیر اعظم نریندر مودی اور مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ سے مطالبہ کیا کہ وہ مداخلت کریں اور سی بی آئی یا این آئی اے کی تحقیقات کی سہولت فراہم کریں۔جگتی کے رہائشی موہن لال نے دعویٰ کیا کہ "یہ قتل تھا۔ پولیس اسے چھپا رہی ہے۔"انہوں نے مزید کہا کہ ایک اعلیٰ سطحی تحقیقات صرف انتظامیہ اور پولیس فورس میں کشمیری پنڈتوں کے اعتماد کو یقینی بنائے گی۔مظاہرین نے دعویٰ کیا کہ کشمیری پنڈتوں کا قتل وادی کشمیر میں بی جے پی کے دور حکومت میں ہوا ہے لیکن حکومت کی طرف سے کسی تحقیقات کا حکم نہیں دیا گیا۔مقتول پولیس کے اہل خانہ نے بھی سی بی آئی یا اعلیٰ سطحی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے کیونکہ انہیں غلط کھیل کا شبہ ہے۔  
 
 
 

 ٹرین نے شہری کو کچل ڈالا

 جموں//جموں کے مضافات میں ایک 42 سالہ شخص ٹرین کی زد میں آکر ہلاک ہوگیا۔ایک سرکاری عہدیدار نے بتایا کہ دیوان گاؤں کا رہائشی بلدیو راج مبینہ طور پر صبح 8 بجے کے قریب رتناچک میں پٹری عبور کر رہا تھا جب اسے ٹرین نے ٹکر مار دی۔انہوں نے کہا کہ مقتول کی لاش کو پوسٹ مارٹم کے لیے ہسپتال منتقل کیا گیا ہے اور قانونی کارروائی مکمل ہونے کے بعد اس کے اہل خانہ کے حوالے کیا جائے گا۔
 
 
 

 ویشنو دیوی شرائن کی حفاظت ریاسی پولیس کی اولین ترجیح: ڈی آئی جی 

ریاسی//آنے والے نوراتری تہوار اور شری ماتا وشنو دیوی مزار کٹرا میں زائرین کے دورے کے پیش نظر ڈی آئی جی اودھم پور-ریاسی رینج محمد سلیمان چودھری نے کٹرا میں سیکورٹی جائزہ میٹنگ کا انعقاد کیا۔میٹنگ میں شیلندر سنگھ ایس ایس پی ریاسی ، کمانڈنٹ سی آر پی ایف اے ایس پی کٹرا ، فوج ، ریلوے اور انٹیلی جنس ایجنسیوں کے افسران نے شرکت کی۔میٹنگ میں ایس ایس پی ریاسی نے کٹرا ٹاؤن کے لیے ایک تفصیلی سیکورٹی گرڈ پیش کیا ، مختلف حفاظتی اقدامات پر تبادلہ خیال کیا جو کہ نوراتری فیسٹیول کیلئے کئے جارہے ہیں۔ سلیمان نے شرائن کی ہر سیکورٹی ڈرل ، یاترا کے راستے ، روزانہ کی بنیاد پر شرائن پر حاضری دینے کے لیے آنے والے زائرین کی حفاظت اور حفاظت اور میلے کے دوران زائرین کی بڑی تعداد اور چلنے والے زائرین کے کوویڈ مناسب رویے کا جائزہ لیا۔ڈپٹی انسپکٹر جنرل پولیس نے شرائن کی حفاظت کے لیے سی اے پی ایف کے ساتھ مشترکہ سیکورٹی ڈرل کرنے کی بھی ہدایت کی اور اسے اس دائرہ اختیار کی پولیس کی اولین ترجیح قرار دیا۔سلیمان چودھری نے کٹرا شہر اور اس کے ارد گرد تارکین وطن کی بار بار تصدیق اور مردم شماری پر زور دیا۔انہوںنے کہا کہ پورٹر اور دوسرے لوگ جو شہر میں داخل ہوتے ہیں ان کو بھی مشکوک عناصر کو الگ کرنے کے لیے ضروری ترجیح پر چیک کیا جانا چاہیے ۔
 
 
 

پنجاب میں کسانوں کا احتجاج |  جموں میں 10 مسافر ٹرینیں معطل 

جموں//پنجاب میں کسانوں کے احتجاج کے پیش نظر آج 10 مسافر ٹرینیں معطل رہیں۔کسان پڑوسی ریاست پنجاب میں پٹریوں پر دھرنے پر بیٹھے تھے جس کی وجہ سے معمول کی ٹرین خدمات میں خلل پڑا۔شمالی ریلوے کے ایک افسر نے کہا’’پنجاب کے مختلف علاقوں میں احتجاج کی وجہ سے جموں ریلوے اسٹیشن پر کوئی ٹرین نہیں آ سکی۔ کم از کم 10 ریل گاڑیاں معطل رہیں "۔عہدیدار نے بتایا کہ مظاہرین نے اپنا دھرنا ختم کرنے کے فورا بعد ٹرین سروس شام 4 بجے دوبارہ شروع کی۔دریں اثنا ، کسانوں کی طرف سے بڑے پیمانے پر مظاہرے کے ذریعے جموں میں معمول کی زندگی پر کوئی اثر نہیں پڑا۔جموں ضلع کے ڈگیانہ میں جموں پٹھان کوٹ ہائی وے کے قریب مظاہرین نے اپنے مطالبات کے حق میں نعرے لگاتے ہوئے کچھ دیر کے لیے گاڑیوں کی آمدورفت کو بلاک کر دیاتاہم سکیورٹی کے سخت انتظامات کے درمیان صورتحال پرامن رہی۔
 
 
 

سیاحت کے عالمی دن پرجموں میں موٹر سائیکل ریلی کا اہتمام

جموں //جموں ڈویژن میں سیاحت کو فروغ دینے کے مقصد سے ریلی کے ایک حصے کے طور پر ساٹھ موٹر سائیکل سواروں نے جموں توی گالف کورس (جے ٹی جی سی) سے شروع ہو کر کٹھوعہ ضلع کے بسوہلی تک کاسفرکیا۔عالمی سیاحت کے دن کے موقع پر ڈائریکٹوریٹ آف ٹورازم جموں کے زیر اہتمام موٹر سائیکل ریلی کو ڈویژنل کمشنر (جموں) راگھو لنگر اور ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل پولیس (جموں) مکیش سنگھ نے مشترکہ طور پر جھنڈی دکھائی۔جے ٹی جی سی سدھرا میں جھنڈے اتارنے کی تقریب کے بعد لنگر نے نامہ نگاروں کو بتایا "یہ بنیادی طور پر سیاحت کو فروغ دینے کا ایک پروگرام ہے جس میں 60 بائیکر اپنی آخری منزل بسوہلی پہنچنے سے پہلے سورانسر اور مانسر سے ہوتے ہوئے سفر کریں گے‘‘۔عہدیداروں نے بتایا کہ موٹر سائیکل سوار بسوہلی پہنچنے سے پہلے تقریبا ً 150 کلومیٹر کا سفر طے کریں گے۔ایونٹ کے لیے محکمہ سیاحت کو مبارکباد دیتے ہوئے ڈویژنل کمشنر نے کہا کہ سدھرا بسوہلی روٹ کو بائیک اور سائیکلنگ سرکٹ کے طور پر فروغ دینے کی کوششیں جاری ہیں۔لنگر نے کہا کہ جموں و کشمیر میں سیاحت ایک اہم شعبہ ہے جو معیشت کو فروغ دیتا ہے۔ڈویڑنل کمشنر نے کہا کہ انتظامیہ سرحدی سیاحت کے فروغ پر بھی کام کر رہی ہے۔
 
 
 

کووڈ ایس او پیز کی خلاف ورزی پر 21ہزار کا جرمانہ |  3562 ٹیکے لگائے گئے ، 1594 نمونے جمع کئے گئے

رام بن// ضلع رام بن میں کوویڈ پروٹوکول کو نافذ کرنے کے لیے نافذ کرنے کی مہم کو جاری رکھتے ہوئے انفورسمنٹ ٹیموں نے چہرے کے ماسک نہ پہننے اور جسمانی فاصلہ برقرار نہ رکھنے پرکئی خلاف ورزی کرنے والوں پر جرمانہ عائد کیا۔نافذ کرنے والی ٹیموں نے اپنے اپنے دائرہ اختیار میں معائنہ کے دوران 20ہزار500 روپے جرمانہ وصول کیا ۔انفورسمنٹ افسران نے لوگوں پر زور دیا کہ وہ چہرے کے ماسک پہنیں اور جسمانی فاصلہ برقرار رکھیں اس کے علاوہ اپنے قریبی سی وی سی پر کوویڈ ویکسی نیشن کی خوراکیں لیں۔ضلع امیونائزیشن آفیسرڈاکٹر سریش نے بتایا کہ ضلع رام بن میں آج 3562 افراد کو پہلی اور دوسری کوویڈ ویکسین کی خوراک دی گئی۔چیف میڈیکل آفیسرڈاکٹر محمد فرید بھٹ کی طرف سے جاری کردہ روزانہ بلیٹن کے مطابق محکمہ صحت نے 1594 نمونے جمع کیے ہیں جن میں 370 RT-PCR اور 1224 RAT نمونے شامل ہیں جبکہ اس کے علاوہ ضلع کے مخصوص ویکسی نیشن سینٹروں میں 3562 افراد کو کوویڈ ویکسین فراہم کی گئی ہے۔
 
 
 

 قدرتی وسائل کا استحصال کرنیوالی کمپنیاں مقامی نوجوانوں کو روزگار نہیں دے رہیں:الطاف بخاری

 جموں//اپنی پارٹی صدر سید محمد الطاف بخاری نے جموں وکشمیر میں قومی شاہراہ اور پن بجلی پروجیکٹوں کے تعمیری کام پر مامور کمپنیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ جموں وکشمیر کے قدرتی وسائل کا استحصال کرنے والی کمپنیاں مقامی نوجوانوں کو روزگار فراہم نہیں کر رہیں۔ان باتوں کا ذکر انہوں نے پارٹی دفتر گاندھی نگر جموں میںمنعقدہ ایک تقریب میں کیا۔ انہوں نے مزید کہاکہ جموں وکشمیر میں منتخب حکومت کی عدم موجودگی میں لوگوں کے اندر مایوسی اور بے بسی میں اضافہ ہورہا ہے، لہٰذا اِس کے لئے ضروری ہے کہ بلاتاخیر اسمبلی انتخابات کرائے جائیں اور ریاستی درجہ بحال ہو۔ الطاف بخاری کا کہنا تھاکہ اپنی پارٹی لوگوں اور حکومت کو سچ بتانے پر یقین رکھتی ہے، جموں وکشمیر قدرتی وسائل سے مالامال ہے لیکن بدقسمتی سے وہ غیر مقامیوں کو دیئے جارہے ہیں اور مقای نوجوانون کو اِس کا فائیدہ نہیں مل رہا۔ انہوں نے کہاکہ نوجوانوں کو کمپنیاں پروجیکٹوں میں روزگار نہیں فراہم کر رہیں، کمپنیاں جوکہ اِن وسائل کا استعمال کر کے کمائی کر رہی ہیں، اُس کا تصرف متعلقہ علاقوں میں مقامی لوگوں کی فلاح وبہبودی کے لئے کیاجانا چاہئے، تاہم ایسا ہو نہیں رہا۔ انہوں نے کہا’’وہ ہمارے آبی وسائل کو استعمال کر رہے ہیں لیکن پھر بھی ہمیں بجلی اُن سے خرید کرلینا پڑ رہی ہے‘‘۔
 
 
 

حکومت نوجوانوں کے مسائل حل کرنے میں ناکامـ:وکرم ملہوترہ

جموں//اپنی پارٹی جنرل سیکریٹری وکرم ملہوترہ نے کہا ہے کہ حکومت نوجوانوں کے مسائل حل کرنے میں ناکام رہی ہے جوکہ سرکاری ونجی سطح پر ملازمتیں نہ  ملنے کی وجہ سے خود کو الگ تھلگ محسوس کر رہے ہیں۔ اسمبلی حلقہ جموں مشرق کے ریزیڈنسی روڈ پر ایک میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے ملہوترہ نے کہاکہ بڑھتی بے روزگاری کی وجہ سے نوجوان سخت مایوسی کا شکار ہیں۔ انہوں نے کہاکہ پچھلے چند سالوں سے سرکاری نوکریوں کی ایڈورٹائزمنٹ بہت کم ہوگئی ہیں جس سے بھرتی نہیں ہورپارہی ۔سرکاری محکموں میں خالی آسامیوں کو
 مشتہر نہیں کیاجارہا اور نہ ہی تعلیم یافتہ نوجوانوں کے مسائل کو حل کرنے کی طرف کوئی توجہ دی جارہی ہے۔ بے روزگاری میں ریکارڈ اضافہ ہوا ہے۔ نوجوان خود کو مایوسی اور بے سمت محسوس کر رہے ہیں، روز افزوں منشیات اور تشدد کے معاملات میں اضافہ ہور ہاہے۔
 
 
 

بھیم سنگھ کی رام داس اٹھاولے سے ملاقات

ایس پی اوز، آشاورکروں اور بیوائوں کے مسائل پر تبادلہ خیال

جموں//جموں وکشمیر نیشنل پنتھرس پارٹی( جے کے این پی پی)ْ کے ایک سینئر سطح کے وفد نے پارٹی کے صدر پروفیسر بھیم سنگھ قیادت میں سماجی انصاف اور امپاورمنٹ کے وزیرمملکت اور ری پبلکن پارٹی کے بانی رام داس اٹھاولے سے ملاقات کرکے جموں وکشمیر اور لداخ میں معاشرے کے نظرانداز طبقات کو درپیش مسائل کو ان کے نوٹس میں لایا۔ پروفیسر بھیم سنگھ نے اٹھاولے سے آشاورکرز، ایس پی اوز اور صفائی ملازمین کی عارضی خدمات کو سرکاری ملازم کی طرح مستقل کرنے کی درخواست کی۔پروفیسر بھیم سنگھ نے ہندستان کی حکومت سے غریب بیوہ خواتین کو باقاعدہ مالی مدد فراہم کرنے کی اپیل کی۔
 
 
 

انجمن فروغ اردو کی ادبی نشست

جموں//انجمن فروغِ اْردو جموں و کشمیر جموں کی ادبی نشست ،زیر صدارت فسانہ نگار خالد حسین منعقد ہوئی جس میں  اْردو کے تعلّْق سے  بات چیت ہوئی اور اِس بات پر اظہارِ افسوس کیا گیا کی وائس چانسلر جموں یونیورسٹی نے انجمن کی طرف سے لکھے گئے خط کا غالباً کوئی نوٹس نہیں لیا۔پروفیسر مْشتاق ا حمد وانی نے افسانہ ’’ آج میں کل تْو‘‘ سْنایا جسے پسند کیا گیا۔ خالد حسین نے بھی اپنا افسانہ ’’ کْوڑے دان کے پْھول‘‘  سْنایا جو یقیناحقیقت پرمبنی ہو گا کیونکہ اْن کے افسانے تخیلّی کم اور سچائی زیادہ ہوتے ہیں ۔صدرِ انجمن فوزیہ ضیانے بتایا کہ اگلے ایتوارکو دن کے ۱۱ بجے کتابوں کی رونمائی کے سلسلے میں ایک محفل کا انعقاد کیا جا رہا ہے جس میں مرحوم عرش صہبائی کے تعلّْق سے تین کتابوں    ’’  مْغنّی حیات عرش صہبائی ‘‘ ، چھاؤں تیری  یادوں کی‘‘ اور اْن  کے شعری مجموعہ ’’تیری پْر فسوں نگاہیں ‘‘ کے علاوہ خورشید کاظمی کی کتاب ’’  تیری فسوں ساز آنکھیں‘‘ شامل ہیں۔