زرعی تعاون کیلئے ہندوستان اور اسرائیل کے مابین تین سالہ معاہدہ

نئی دہلی// یواین آئی// ہندوستان اور اسرائیل کی حکومتوں نے دوطرفہ شراکت کی حمایت کرتے ہوئے دوطرفہ تعلقات میں زراعت اور پانی کے شعبوں پر توجہ دینے کی ضرورت کو تسلیم کرتے ہوئے زرعی شعبے میں تعاون کو مزید بڑھانے پر اتفاق کیا ہے ۔ہندوستان اوراسرائیل ‘انڈو اسرائیل اگریکلچر پروجیکٹ سینٹرز آف ایکسی لینس’ اور‘ انڈو اسرائیل ولیجز آف ایکسی لینس’ پروگراموں کو نافذ کررہا ہے ۔ وزارت زراعت کا انٹیگریٹڈ ہرٹیکلچر ڈیولپمنٹ مشن اور بین الاقوامی ترقیاتی تعاون کی اسرائیلی ایجنسی ‘مشاو’ اور اسرائیل کے 2-جی اس پروگرام کی سربراہی کر رہی ہے ۔ اس کے تحت مقامی آب و ہوا کے حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے اسرائیل کی زرعی تکنیک سے تیار جدید زرعی فارموں کو نافذ کرنے کے لئے ملک کی 12 ریاستوں میں 29 سینٹرز آف ایکسی لینس (سی او ای) کام کر رہے ہیں۔ ان سی او ایز نے جانکاری کی ترسیل ، بہترین طریقوں کا مظاہرہ اور کسانوں کو تربیت فراہم کی ہے ۔ ہر سال یہ سی ای اوایز 25 لاکھ سے زیادہ معیاری سبزیاں اور 387 ہزار سے زیادہ پھلوں کے پودے تیار کرتے ہیں اور ہر سال 1.2 لاکھ سے زیادہ کسانوں کو باغبانی کے شعبے میں جدید ترین ٹکنالوجی کے بارے میں تربیت دیتے ہیں۔