خوردہ اور تھوک کی تجارت ایم ایس ایم ای میں شامل

نئی دہلی// وزیر اعظم نریندر مودی نے ہفتہ کے روز رٹیل اور ہول سیل تجارت کو (ایم ایس ایم ای) کے طور پر شامل کرنے کے فیصلے کو "تاریخی اقدام" قرار دیا ، جس سے تاجروں کو ترجیحی شعبے کے قرضے سے فائدہ حاصل ہو سکے گا ، اور کہا کہ ان کی حکومت تاجروں کو بااختیار بنانے کے لئے پرعزم ہے۔ مرکزی وزیر نتن گڈکری نے جمعہ کے روز ایم ایس ایم ای (مائیکرو ، چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں) کے تحت خوردہ اور تھوک فروشی تجارت کو شامل کرنے کا اعلان کیا تھا جس کے مطابق تاجروں کو اب آر بی آئی کے رہنما خطوط کے تحت ترجیحی شعبے کے قرضے سے فائدہ حاصل ہوگا۔ایک ٹویٹ میں ، وزیر اعظم نے کہا ، "ہماری حکومت نے خوردہ اور تھوک کی تجارت کو ایم ایس ایم ای کے طور پر شامل کرنے کا ایک اہم قدم اٹھایا ہے، اس سے ہمارے کروڑوں تاجروں کو آسانی سے مالی اعانت ، مختلف دیگر فوائد حاصل کرنے اور ان کے کاروبار کو فروغ دینے میں مدد ملے گی، ہم پرعزم ہیں، اپنے تاجروں کو بااختیار بنانے میں‘‘۔سرکاری ذرائع نے بتایا کہ اس اقدام سے چھوٹے خوردہ  اور تھوک فروشوں پر فوری طور پر اثر پڑے گا جو "اتمانیر بربھارت" پروگرام کے تحت اعلان کردہ متعدد اسکیموں کے حصے کے طور پر فوری مدتی فائنانس حاصل کرنے میں دلچسپی رکھتے ہوں جن کا سالانہ 250 کروڑ روپے تک کا کاروبار ہے۔انہوں نے کہا کہ اس اہم فیصلے سے اس شعبے پر کے بنیادی ڈھانچے پر اثرات مرتب ہوں گے اور وہ  جوکاروبار کو بہتر بنانا چاہتے ہیں، ان کے لئے بہتر مالیات کے اختیارات دے کر اسے باقاعدہ شکل دینے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس سے خوردہ ایم ایس ایم ایز کو "زندہ اور فروغ پذیر" ہونے میں مدد ملے گی۔ خوردہ اور تجارتی ایسوسی ایشنوں نے اس اقدام کا خیرمقدم کیا ہے ، اور کہا ہے کہ اس سے تاجروں کو COVID-19 وبائی امراض کی وجہ سے بہت زیادہ اثرانداز ہونے والے مطلوبہ سرمایے تک رسائی حاصل ہوسکے گی۔