افغانستان میں سیلاب سے 40ہزار بچے بے گھر

یواین آئی
کابل// موسلا دھار بارشوں کے بعد جمعہ کو صوبہ بغلان اور شمالی افغانستان کے دیگر علاقوں میں آنے والے تباہ کن سیلاب کی وجہ سے تقریباً 40 ہزار بچے بے گھر ہو گئے۔ عالمی خیراتی ادارے سیو دی چلڈرن نے پیر کو یہ اطلاع دی۔افغانستان میں چیریٹی کے کنٹری ڈائریکٹر ارشد ملک نے کہا’’بچے خوفزدہ ہیں، بہت سے لوگ اپنا سب کچھ کھو چکے ہیں۔ نہ صرف ان کے گھروں اور سکول کے احاطے کو نقصان پہنچا بلکہ وہ جگہ جہاں وہ کھیلتے تھے بھی تباہ ہو گئے۔ اس نے اپنے آس پاس کے ہر اس شخص کو بھی کھو دیا ہے جسے وہ جانتا تھا۔ اب اس کا روزمرہ کا معمول پہلے جیسا نہیں رہا۔ورلڈ فوڈ پروگرام کے افغانستان کے دفتر اور مقامی افغان حکام کے مطابق، بغلان، تخار، بدخشاں اور غور سمیت دیگر صوبوں میں 330 سے زائد افراد سیلاب میں ہلاک ہوئے۔عالمی اداروں اور افغان حکام نے خبردار کیا کہ سیلاب سے پیدا ہونے والی بیماری سے بچے متاثر ہو سکتے ہیں اور یہ بھی کہا کہ اسسے مرنے والوں کی تعداد میں بھی اضافہ ہو سکتا ہے۔

انڈونیشیا میں لاوے کے سیلاب سے 52 ہلاک
یواین آئی
جکارتہ// انڈونیشیا کے مغربی سماترہ صوبے میں ٹھنڈے لاوے کے سیلاب سے 52 افراد ہلاک اور 17 لاپتہ ہیں۔مقامی ڈیزاسٹر ایجنسی کے ایک سینئر اہلکار نے آج یہ معلومات دی۔صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اور مٹیگیشن ایجنسی کے بحالی اور تعمیر نو کے یونٹ کے سربراہ الہام وہاب نے کہا کہ لاپتہ افراد کی تلاش کا کام آج دوبارہ شروع کر دیا گیا ہے۔ آپریشن میں مدد کے لیے جائے وقوعہ پر بھاری مشینری کے آلات کو تعینات کیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ اب ملنے والی لاشوں کی تعداد 52 ہے اور لاپتہ افراد کی تعداد 17 ہے۔ یہ اعداد و شمار بدلتے رہیں گے۔ لوگ اپنے خاندان کے لاپتہ افراد کی رپورٹ دیتے رہیں گے۔ وہاب نے کہا کہ ہنگامی امدادی کوششوں کے بعد تعمیر نو اور بحالی کا پروگرام جاری کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ماہرین اس بات پر غور کریں گے کہ کیا خطرناک علاقوں میں رہنے والے باشندوں کو منتقل کرنا ضروری ہے، جیسے کہ دریاؤں کے کناروں پر جن کا اوپری راستہ مارپی آتش فشاں اور سنگلانگ آتش فشاں کی ڈھلان پر ہے۔