احتجاج میں پھر شدت

نئی دہلی //کانگریس سمیت بارہ اپوزیشن پارٹیوں کے رہنماؤں نے بدھ کو منعقدہ سنیوکت کسان مورچہ کے ملک گیر احتجاج کی حمایت کا اعلان کرتے ہوئے مرکزی حکومت سے ضد چھوڑ کر کسانوں سے بات چیت کرنے کی اپیل کی ہے۔واضح رہے کسانوں نے26 مئی کو ملک گیر پیمانہ پر یوم احتجاج منانے کا اعلان کیا ہے جس کے تحت کسانوں کی تنظیم نے تمام ملک کے شہریوں سیاپنے گھراور گاڑیوں پر کالے جھنڈے لگانے کی اپیل کی ہے۔ملک میں کورونا کی دوسری لہر کے پھوٹ پڑنے کے بعد میڈیا نے بھلے ہی کسانوں کو نظر انداز کرکے یہ تاثر دینے کی کوشش کی ہو کہ دہلی کی سرحدوں پر کوئی احتجاج ہوہی نہیں رہاہے مگر کسان اپنی جدوجہد سے ایک قدم بھی پیچھے نہیں ہٹے ہیں۔ بدھ کو دہلی کی سرحدوں پر ان کے احتجاج کو 9 ماہ مکمل ہوں گے۔ یوم سیاہ میں شرکت کیلئے پنجاب اور ہریانہ سے جہاں ہزاروں کی تعداد میں کسانوں نے دہلی کی طرف کوچ کردیا ہے تووہیں دوسری جانب کانگریس سمیت ملک کی 12کلیدی اپوزیشن پارٹیوں نے بھی یوم سیاہ کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔