کشمیریونیورسٹی کے سر ایک اورسہرا | گلیشروں اورآب وہوا کی تبدیلی کامطالعہ کرنے کا مرکزقرار

سرینگر// مغربی ہمالیہ میں گلیشیروں پانی اور آب و ہوا کی تبدیلی کے اثرات کا مطالعہ کرنے کی خاطر حکومت ہند کے محکمہ سائنس اینڈ ٹکنالوجی نے کشمیر یونیورسٹی کو سنٹر آف ایکسیلنس فار گلیشیئر اسٹڈیز سے نوازا ہے۔(ڈی ایس ٹی) سیکریٹری پروفیسر آشوتوش شرما نے جمعہ کے روز بھارتی ہمالیہ ریجن (آئی ایچ آر) میں گلیشیوجیکل ریسرچ سرگرمیوں کو فروغ دینے کیلئے ایک تقریب کے دوران 8 8 کروڑ روپے کے بجٹ سے تیار کئے گئے اسCoEGSکا افتتاح کیا۔کشمیر یونیورسٹی میں CoEGS ان تین مراکز میں شامل ہیں جو ڈی ایس ٹی کے ذریعہ ہمالیائی ماحولیاتی نظام (این ایم ایس ایچ ای) کو برقرار رکھنے کے قومی مشن کے ایک حصے کے طور پر دیئے گئے ہیں۔جبکہ سکم اور تیج پور یونیورسٹیوں میں 2 دیگر CoEs کا قیام عمل میں لایا گیا ہے۔ سنٹر آف ایکسیلنس فار گلیسیئر اسٹڈیز کا مقصد مغربی ہمالیہ کے خطے میں ماضی ، حال اور مستقبل کی آب و ہوا کی تبدیلیوں کاپتہ لگانا ہے اور مغربی ہمالیہ میں گلیشیروں اور پانی پر آب و ہوا کی تبدیلی کے اثرات کا مطالعہ کرناہے اسی طرح خطوں میں چشموں اور جھیلوں کی پائیدار ترقی کیلئے طویل مدتی حکمت عملی تجویز کرنا بھی شامل ہیں ۔ پروفیسر آشوتوش نے افتتاحی تقریب کے دوران کہا کہ مجھے اس پروجیکٹ کا افتتاح کرنے کے دوران کافی خوشی ہوئی، کیونکہ موسمی تبدیلی سب سے بڑا چیلنج ہے۔انہوں نے کہا کہ موجودہ اور ممکنہ آب و ہوا کی تبدیلی کے اثرات ، جیسے غیر معمولی سیلاب ، خشک سالی ، لینڈ سلائیڈنگ ، حیاتیاتی تنوع میں کمی ، خوراک ، پانی اور توانائی کی حفاظت کیلئے خطرہ ہیں۔انہوں نے کہا کہ حالیہ دنوں میں موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے گلیشیروں کے پگلنے سے عالمی تشویش پائی جاتی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ ہمالیائی ماحولیاتی نظام میں کسی بھی معمولی تبدیلی سے لاکھوں افراد کی زندگیوں پر زبردست منفی اثر پڑ سکتا ہے۔اس موقع پر اپنے خصوصی ریمارکس میں ، کشمیر یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر طلعت احمد نے عظیم معاشرتی اور سائنسی اہمیت کے معاملات پر ملک کی تحقیق اور ترقیاتی اقدامات کا حصہ بننے کیلئے یونیورسٹی کی سخت کوششوں کو تسلیم کرنے پر ڈی ایس ٹی کا شکریہ ادا کیا۔انہوں نے کہا ’’اتنے اہم مراکز آف ایکسی لینس کی وجہ سے ہمیں نہ صرف ماحولیاتی تبدیلی اور برفانی مطالعات جیسے اہم علاقوں میں تحقیق کی زیادہ سے زیادہ مہارت حاصل ہوسکتی ہے ،بلکہ قومی اور بین الاقوامی سطح پر باہمی تعاون کے ساتھ تحقیقاتی سرگرمیوں اور تبادلہ پروگراموں کیلئے ہماری یونیورسٹی کے دروازے بھی کھل جاتے ہیں۔‘‘کشمیر یونیورسٹی میں شعبہ ارضیات کے سربراہ پروفیسر شکیل احمد رامشو نے کہا کہ پہاڑی علاقہ جموں وکشمیر میں سنٹر آف ایکسیلنس فار گلیسیئر اسٹڈیز سے صدی کے دوران گذشتہ آب و ہوا کا مطالعہ ہزار سالہ وقت کے پیمانے پر کرے گی ، ماضی اور مستقبل کی گلیشیکشن کی تشکیل نو کرے گی ، اور گلیشیروں اور پانی کے دیگر وسائل پر بدلنے والی آب و ہوا کے اثرات کا بھی جائزہ لے گی۔ انہوں نے کہا اس سے  موسمیاتی تبدیلیوں کے بارے میں ہماری پیش گوئوں کو بہتر بنانے میں مدد ملے گی۔"