کرکٹ آسٹریلیا نے ڈے نائٹ ٹیسٹ کھیلنے سے انکار کا بدلہ لیا :بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ

ڈھاکہ/کرکٹ آسٹریلیا کی جانب بنگلہ دیش کی میزبانی کرنے سے انکار پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ نے اپنے رد عمل میں کہا ہے کہ کرکٹ آسٹریلیا نے ہم سے ڈے نائٹ ٹیسٹ کھیلنے سے انکار کا بدلہ لیا ہے ، بورڈ کے مطابق ہم نے ان کی خواہش پوری نہیں کی،اس لئے سیریز ختم کردی گئی ہے ۔واضح رہے کہ کرکٹ آسٹریلیا نے مالی وجوہات کے سبب پر رواں برس بنگلہ دیش کے خلاف شیڈول ہوم سیریز منسوخ کر نے کا اعلان کیا تھا ،طے شدہ شیڈول کے تحت بنگلہ دیشی ٹیم نے اگست اور ستمبر میں 2 ٹیسٹ اور3 ون ڈے میچوں کی سیریز کے لیے آسٹریلیا کا دورہ کرنا تھا لیکن کرکٹ آسٹریلیا نے سیریز منافع بخش نہ ہونے کی وجہ سے ہوم سیریز کی میزبانی سے ہی انکار کر دیا۔کرکٹ آسٹریلیا کے مطابق بنگلہ دیش کے خلاف ہوم سیریز آسٹریلیا میں فٹ بال سیزن سے متصادم ہے اور براڈ کاسٹر بھی کرکٹ میچ نشر کرنے میں دلچسپی نہیں رکھتے ۔بورڈ نے کہا کہ ہمیں اس سیریز میں کوئی مالی فائدہ نظر نہیں آ رہا جس کے باعث سیریز کو منسوخ کرنے کا فیصلہ کیا گیا اور بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ کو بھی آگاہ کر دیا گیا ہے ۔دوسری جانب بی سی بی کے چیف ایگزیکٹو نظام الدین چوہدری نے آسٹریلیا کے فیصلے پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انتہائی افسوس کی بات ہے کہ مالی فوائد نہ ہونے کے سبب سیریز منسوخ کردی حالانکہ ہمیں دوطرفہ سیریز کے معاہدوں کی لاج رکھنی چاہیے چاہے وہ مالی لحاظ سے فائدہ مند ہو ں یا نہیں۔بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر نظام الدین چوہدری نے ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کرکٹ آسٹریلیا جیسے بورڈز سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ ایسی ٹیموں کی میزبانی کریں چاہے اس کو فائدہ نہ ہو۔انہوں نے بنگلہ دیش کا ہی مثال دی جس نے بہت سے دوروں سے کوئی فائدہ نہ ہونے کے باوجود میزبانی کی۔بنگلہ دیش کو تب ہی اقتصادی طور پر فائدہ ہوا ہے جب ہندستان ، پاکستان، انگلینڈ اور آسٹریلیا جیسی ٹیموں نے اس کا دورہ کیا ہے ۔چودھری نے کہا کہ یہ مایوس کن ہے ۔وہ صرف اپنا فائدہ دیکھ رہے ہیں جو واقعی مایوس کن ہے ۔ہمیں اپنی بہت سے گھریلو سیریز سے فائدہ نہیں ہوا ہے لیکن وعدوں کو برقرار رکھنے کے لئے ہم بہت سے ممالک کی میزبانی کرتے ہیں جبکہ مالی طور پر یہ سیریز فائدہ مند نہیں ہوتی ہیں۔اگر بنگلہ دیش ایسی سیریز منعقد کر سکتا ہے تو ہم امید کرتے ہیں تو بڑے کرکٹ بورڈ بھی ایسا کریں۔انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے کرکٹ آسٹریلیا کو آئندہ برس ورلڈ کپ کے بعد دورے کی دعوت سمیت کئی دوسرے آپشن کی تجاویز دی ہیں تاہم کرکٹ آسٹریلیا کی جانب سے تاحال کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔
واضح رہے کہ بنگلہ دیش نے آخری بار 2003 میں آسٹریلیا کا دورہ کیا تھا۔