چھترگل گاندربل میں بنیادی سہولیات ندارد | ہزاروں نفوس پر مشتمل آبادی گوناگوں مشکلات سے دوچار

گاندربل// گاندربل کے مضافات چھتر گل میں بنیادی سہولیات کے فقدان کے سبب ہزاروں کی آبادی گوناگوں مشکلات کا سامنا کررہی ہیں۔کنگن سب ڈویڑن کے علاقہ چھترگل جس سے ملحقہ چھترگل بالا، بابا ریشی بھی ہیں، تمام تر بنیادی سہولیات سے محروم ہے۔ مقامی لوگوں کے مطابق ان علاقوں میں ہزاروں کی تعداد میں آبادی رہائش پذیر ہیں جن کو نہ ہی سڑک، پانی ،بجلی اور بہتر  طبی نگہداشت میسر ہے۔ یہ علاقے  تعمیر و ترقی کے لحاظ سے کافی پیچھے ہیں جس کے نتیجے میں آبادی کو گوناگوں مشکلات کا سامنا ہے۔ مقامی لوگوں کے وفد نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ اگرچہ حکومت نے وعدہ کیا تھا کہ وہ علاقہ کو پی ایم وائی اسکیم کے تحت ترقی دے گی، لیکن حیرانی کی بات ہے کہ اس اسکیم کے تحت آنے والے رقومات کو حکومت نے اب تک واگزار نہیں کیا جس کی وجہ سے علاقے کی حالت ناگفتہ بہہ ہے۔بارولہ سے چھترگل رابطہ سڑک کھنڈرات میں تبدیل ہوچکی ہے جس پر سفر کرنا خطرے سے خالی نہیں ہے ،جبکہ پینے کے پانی کی فراہمی بھی بہتر طریقے سے نہیں کی جارہی ہے۔ یہاں بغیر فلٹریشن کے پینے کا پانی سپلائی کیا جارہا ہے۔لوگوں کے مطابق مستحق اور غریبی کی سطح سے نیچے  کے درجے کے درجنوں افراد نے پی ایم وائی اسکیم کے تحت مکان بنانے کے لئے بلاک ڈیولپمنٹ دفتر کنگن میں برسوں پہلے درخواستیں جمع کرائی ہیں ، لیکن تاحال ان کومکان بنانے کیلئے رقومات نہیں دی گئی ۔ اس حوالے سے مقامی سرپنچ نے کہاجس وقت کشمیر میں سرپنچ الیکشن ہوئے ،اس وقت اس علاقے میںکوئی بھی شخص ووٹ ڈالنے کو تیار نہیں تھا۔ لیکن ہم نے حکومت کے بھروسے ان سے وعدہ کیا تھا کہ علاقہ کی تعمیر و ترقی کے لئے آگے بڑھے تاہم برسوں گزرے گئے لیکن ان کی دیرینہ مانگیں جوں کی توں ہیں۔