پاکستان ٹی وی چینلز پر بھارتی مواد کی نشریات کی اجازت نہیں دیںگے: پاکستان

   اسلام آباد//پاکستان کے چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ پاکستان کی ٹی وی چینلز پر دکھائے جانے والے ہندوستانی مواد کی اجازت نہیں دے گی کیونکہ یہ ہماری ثقافت کو نقصان پہنچاتی ہیَََََ۔ چیف جسٹس نثار نے پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پمرا) کی جانب سے درج کردہ اپیل کی سماعت کرتے ہوئے پاکستان میں ٹی وی چینلز پر بھارتی مواد کی نشریات پر پابندی عائد کرنے کے فیصلے کے خلاف اپیل کی تھی۔ پیمرا  کے وکیل ظفر اقبال کالیانوری نے چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بینچ کو بتایا کہ  عدالت کے احکامات پر غیر ملکی مواد پر پابندی عائد کردی گئی تھی جس پر ہائی کورٹ نے سٹے لگا دیا تھا۔پیمرا کے چیئرمین سلیم بیگ نے عدالت سے بتایا کہ فلمازیا چینل پر  65 فیصد مواد جو دکھایا جاتا ہے وہ مواد  غیر ملکی ہوتا ہے، اس پرچیف جسٹس نے کہا، ’’ہم ہندوستانی مواد کو (پاکستانی) چینلز پر نشر کرنے کی اجازت نہیں دیں گے‘‘۔پمرا  کے  وکیل نے چیف جسٹس کو بتایا کہ فلمازیا  کوئی نیوز چینل نہیں ہے لیکن ایک تفریحی چینل ہے، یہ کوئی پروپیگنڈا نہیں کرتا۔پاکستان سپریم کورٹ کے کے ایک اعلی ٰجج نے جواب دیا،  یہ ہے، تاہم، ہماری ثقافت کو نقصان پہنچا ہے۔جسٹس نثار  نے مشاہدہ کیا کہ پاکستان براڈکاسٹر ایسوسی ایشن کے وکیل فیصل صدیقی عدالت میں موجود نہیں تھے۔انہوں نے کہا کہ ہم اس کے غیر موجودگی اور ان کی وضاحت کے بغیر میں کوئی بھی فیصلہ نہیں سنا سکتے ،  بعد میںسماعت فروری کے پہلے ہفتے تک ملتوی کی گئی۔یاد رہے 2016 میں،  پمرا  نے مقامی ٹیلی ویڑن اور ایف ایم ریڈیو چینلز پر ہندوستانی مواد کو بند کرنے پر مکمل پابندی عائد کی تھی۔وہ فیصلہ ’جیسی کرنی ویسی بھرنی‘ کی بنا پر کیا گیا تھا جس میں ہندوستان نے پاکستان کے مواد کو نشر رنے اور پاکستانی کلاکار وں پر پابندی عائد کر دی تھی۔ 2017 میں، لاہور ہائیکورٹ نیپمرا عائد کردہ پابندی کو ہٹایا، جس کو غیر معمولی  قرار دیا کیونکہ اس پر وفاقی حکومت نے بھی کوئی اعتراض نہیں کیا تھا۔اکتوبر 2018 میں  لاہور ہائیکورٹ کے احکامات کو الگ رکھ کر  اپیکس کورٹ نے مقامی ٹیلی ویڑن چینلز پر بھارتی مواد کی منتقلی پر پابندی کو بحال تھا۔