ٹیلی کام اسپیکٹرم کی نیلامی اختتام پذیر | ریلائنس جیو بولی دینے والوں میں سب سے آگے

نئی دہلی//ہندوستان میں ٹیلی کام اسپیکٹرم کی پانچ سالوں میں پہلی نیلامی منگل کے روز اختتام پذیر ہوئی جس میں 77814.80 کروڑ ایئر ویوز حاصل کی گئیں ۔ریلائنس جیو نے 57122.65 کروڑ میں سپیکٹرم اٹھایا۔ محکمہ ٹیلی کام نے کہا کہ وہ اس نتیجے پر مطمئن ہے کیونکہ ٹیلی کام کی صنعت میں وبائی امراض اور تناؤ کے باوجود یہ تعداد داخلی تخمینے سے تجاوز کر چکی ہے۔کل آمدنی میں حکومت کو رواں مالی سال میں 19000 سے 2000000 کروڑ روپئے ملیں گے اور اگلے مالی سال میں 6000-7000 کروڑ روپے کی آمدنی ہوگی کیونکہ نیلامی بولی دہندگان کو پیشگی اور موخر ادائیگی (سالانہ قسطوں) کی پیش کش کرتی ہے۔جیو نے گذشتہ دو دنوں کے دوران آدھے سے زیادہ ٹیلی کام سپیکٹرم کی نیلامی کی تھی ، جس نے تقریبا  57123 کروڑ روپئے کی پیش کش کی تھی کہ اس کے اس وسائل کو مضبوط بنانے کے لئے جو موبائل کال اور ڈیٹا سگنل لے کر جاتے ہیں۔جیو نے 800 میگاہرٹز ، 1800 میگا ہرٹز اور 2300 میگا ہرٹز جیسے بینڈ میں 488.35 میگاہرٹز سپیکٹرم حاصل کیا۔بھارتی ایئرٹیل نے ٹیلیکوس کے ذریعہ حاصل کردہ 855.60 میگا ہرٹز ریڈیو فریکوینسی میں سے 355.45 میگا ہرٹز (میگاہرٹز) لینے کے لئے لگ بھگ 18699 کروڑ روپئے کی بولی لگائی ہے ، جس سے ملک میں یہ سب سے زیادہ "سپیکٹرم" ہے۔ووڈافون آئیڈیا لمیٹڈ ، جو ماضی کے غیر معاوضہ قانونی واجبات کی بھاری ذمہ داری کا سامنا کر رہی ہے ، نے 1180 میگا ہرٹز سپیکٹرم 1993.40 کروڑ روپے میں خریدا۔تاہم پریمیم 700 میگا ہرٹز اور 2500 میگا ہرٹز بینڈ میں ایئر ویو فروخت نہیں ہوئی۔ٹیلی کام سکریٹری انشو پرکاش نے بتایا کہ دو روزہ نیلامی میں 855.60 میگا ہرٹز سپیکٹرم 77814.80 کروڑ میں خریدی گئی۔ نیلامی کے پہلے دن 77146 کروڑ روپے کی بولی لگائی گئی ، منگل کو 668 کروڑ روپے سے زائدکی اضافی بولی لگ گئی۔ نیلامی کے نتائج کی جانچ ایک وزارتی پینل کرے گی اور اس کے بعد وزیر مواصلات اور وزیر خزانہ اس کی منظوری دیں گے۔ توقع ہے کہ پوری مشق اگلے 10 دن میں مکمل ہوجائے گی۔