وباء سے بچوں اور بزگوں کی ذہنی صحت متاثر

سرینگر// گورنمنٹ میڈیکل کالج سری نگر کے اسسٹنٹ پروفیسرشعبہ نفسیات ڈاکٹر جنید نبی نے کہا کہ تنہائی ، نقل مکانی ، معاشرتی اجتماع پر پابندی کی وجہ سے کورونا وَبائی بیماری نے لوگوں کی ذہنی صحت کو متاثر کیا ہے۔ڈاکٹر جنید نے کہا کہ ایک اور وجہ جس نے ذہنی صحت کو متاثر کیا ہے ، وہ کووِڈ مثبت مریضوں کو خوف ،نفرت کی نگاہ سے دیکھنا اور الگ تھلگ مدت ہے۔ماہر نفسیات کا کہنا ہے کہ انفیکشن اور اس کے نتیجے میں ہونے والی بیماریوں نے خوفناک ذہنوں کو زیادہ سے زیادہ نقصان پہنچایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس نفسیاتی خوف سے مثبت ذہن کے ساتھ قابو پانا ضروری ہے ۔اُنہوں نے کہا’’وبائی بیماری عارضی ہے اور یہ بھی گزر جائے گی‘‘۔اُنہوں نے کووِڈ مثبت مریضوں کے ساتھ لوگوں کے سلوک کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ کچھ لوگ متاثرہ مریضوں کی مدد کے لئے نہیں آتے بلکہ وہ ان سے بھاگ جاتے ہیں ۔یہ سلوک بالکل غلط ہے اور انہوں نے اس بیماری سے بچنے کے لئے مریضوں کے ساتھ ہمدردی کا رویہ اپنانے پر زور دیا۔ڈاکٹر جنید نے کہا کہ بچوں اور بزرگ اور عمر رسیدہ افراد میں دو حساس عمر گروپ ہیں جو خاموشی سے وبائی مرض سے متاثر ہوئے ہیں اور اس نے ان کی ذہنی صحت کو بھی متاثر کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وبائی بیماری کے باعث اب بچے ڈیڑھ سال سے سکول نہیں گئے ہیں، وہ اپنے دوستوں اور ہم جماعت کے ساتھ بات چیت ، کھیل اور اظہار خیال نہیں کرسکتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ اس تنہائی کی وجہ سے بچوں میں تناؤ اور بے چینی پیدا ہوتی ہے جس کا والدین کو خیال رکھنا چاہئے تاکہ بچے تنہا محسوس نہ ہوں۔مزید برآں، انہوں نے کہا کہ ایس او پیز کی پیروی مناسب طریقے سے اور معیاری طریقے سے کی جانی چاہئے اور اس خیال پر زور دینا چاہئے کہ ایس او پیز پر عمل کرنے کا مطلب یہ نہیں ہے کہ آپ کی زندگی دکھی ہو۔