مزید خبریں

بدعنوانی کے معاملے میں دو پولیس اہلکاروں پر الزامات عائد

جموں// انسداد بدعنوانی بیورو (اے سی بی) کے ترجمان نے بتایا کہ ایک خصوصی پولیس افسر (ایس پی او) سمیت دو پولیس اہلکاروں کو رشوت ستانی کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے۔ ، ترجمان نے کہا کہ ہیڈ کانسٹیبل سوہن لال اور ایس پی او امیت شرما ( اب سبکدوش) پر روک تھام بدعنوانی ایکٹ کے تحت 20018 میں مقدمہ درج کیا گیا تھا جب بعد میں گھروٹا کے علاقے میں پکڑے گئے مویشیوں کی رہائی کے بدلے دلال کی جانب سے 10ہزار روپے رشوت لینے کے الزام میں لال رنگے ہاتھوں پکڑا گیا تھا۔انہوں نے بتایا کہ ایک شخص نے اے سی بی میں شکایت درج کرائی ، جس میں یہ دعوی کیا گیا ہے کہ اس نے ایک بھینس ایک دو دن کے بچھڑے کے ساتھ ساٹھ ہزار میں خریدی ہے ، اور جانوروں کو ایک گاڑی میں اپنے گھر لے جارہا تھا ، جسے کچھ مقامی لوگوں نے روک لیا۔ بعد میں اسے گاڑی سمیت پولیس تھانہ گھروٹا کے حوالے کردیا۔ ترجمان نے بتایا کہ عدالت نے پولیس کو مویشیوں کو اپنے حق میں رہا کرنے کی ہدایت کی لیکن تفتیشی افسر کے عہدے پر تعینات لال نے 10 ہزارروپے رشوت مانگے۔انہوں نے کہا کہ ٹریپ ٹیم تشکیل دی گئی تھی اور ایس پی او شرما لال کی ہدایت پر غیرقانونی خوشی قبول کرتے ہوئے رنگے ہاتھوں پکڑے گئے تھے جنہوں نے عدالتی حکم کے باوجود جانوروں کو رہا نہیں کیا بلکہ صرف ڈاکوؤں کی رہائی ظاہر کرنے والی ڈیلی ڈائری میں داخلہ لیا۔ترجمان نے بتایا کہ تحقیقات کی تکمیل اور خدمت کے ملزم سرکاری ملازم (لال) کے خلاف قانونی چارہ جوئی کی منظوری حاصل کرنے کے بعد ، دونوں ملزمان کے خلاف چارج شیٹ عدالتی عزم کے لئے خصوصی جج اینٹی کرپشن جموں کی عدالت میں دائر کی گئی ، ترجمان نے بتایا۔انہوں نے کہا کہ سماعت کی اگلی تاریخ 30 اپریل کو مقرر کی گئی ہے۔
 
 
 

 سرکاری ملازمت حاصل کرنے کیلئے مردہ بھائی کا سرٹیفکیٹ استعمال کرنے کا الزام 

جموں //جموں و کشمیر پولیس کی کرائم برانچ نے مبینہ طور پر تین دہائی قبل اپنے نوزائیدہ بھائی کی تعلیمی سرٹیفکیٹ استعمال کرکے سرکاری ملازمت حاصل کرنے والے ایک شخص کو چارج شیٹ کردیا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ تفتیش سے یہ بھی پتہ چلا ہے کہ ملزم نے کلاس 9 کا امتحان بھی نہیں پاس کیا ہے۔کرائم برانچ جموں کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ شکتی بندھو عرف "کاکا جی" کے خلاف چارج شیٹ ، جو اصل میں پلوامہ کے گاؤں اچھن کا رہنے والا تھا اور اس وقت جموں کے پونی چک میں رہتا ہے ، عدالتی عزم کے لئے یہاں مسافر ٹیکس کی عدالت میں دائر کیا گیا۔اس میں کہا گیا ہے کہ گذشتہ سال بندھوکے خلاف جوائنٹ ڈائریکٹر ، ریجنل سنٹر ، انسٹیٹیوٹ آف مینجمنٹ ، پبلک ایڈمنسٹریشن اور محکمہ رورل ڈیولپمنٹ (آئی ایم پی اے) کی ایک تحریری شکایت کے ساتھ ایک انکوائری رپورٹ کے بعد ایک مقدمہ درج کیا گیا تھا جس میں یہ الزام لگایا گیا تھا کہ ملزم نے انسٹی ٹیوٹ میں ملازمت کے حصول کے لئے اپنے مرنے والے چھوٹے بھائی کی اسناد فراہم کیں۔ شکایت میں بتایا گیا ہے کہ ملزم اشوک کمار کے نام پر گذشتہ 30 سال سے آئی ایم پی اے میں ملازمت کر رہا تھا اور نویں کلاس بھی پاس نہیں کیا تھا۔ملزم کا بھائی کمار 1977 میں اس وقت ڈوب گیا تھا جب وہ جنوبی کشمیر کے کو ایجوکیشن کالج اننت ناگ میں بی اے کے دوسرے سال میں تعلیم حاصل کررہا تھا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ اس کی موت کے کئی سال بعد ملزم نے اپنے ہلاک بھائی کا سرٹیفکیٹ فراہم کرکے کچھ عہدیداروں کی ملی بھگت سے آئی ایم پی اے میں نوکری حاصل کرلی۔اس میں کہا گیا ہے کہ کرائم برانچ نے انکوائری کے دوران کی گئی غلطیوں اور کمیشنوں کی بنیاد پر ملزموں کے خلاف فوجداری کارروائی کا آغاز کیا ، جس کے تحت ابتدائی طور پر تعزیرات ہند کی مختلف شقوں کے تحت قابل سزا جرم ہیں۔اسی کے مطابق ملزم کے خلاف گہرائی سے تفتیش کے لئے پولیس اسٹیشن کرائم برانچ جموں میں باضابطہ مقدمہ درج کیا گیا تھا اور اس کے بعد آئی ایم پی اے جموں ، جے اینڈ کے بورڈ آف اسکول ایجوکیشن سری نگر ، گورنمنٹ ہائیر سیکنڈری اسکول اچھن ، بوائز پرائمری اسکول اچھن اور چوکیدار اچھن سے متعلقہ ریکارڈ کو قبضہ میں لیا گیا۔ تفتیش کے دوران استغاثہ کے گواہوں کے بیانات بھی ریکارڈ کیے گئے جس سے یہ ثابت ہوا ہے کہ بندھو نے اپنے متوفی بھائی کی تعلیمی سرٹیفکیٹ استعمال کیا تھا اور آئی ایم پی اے میں ملازمت سنبھالی تھی۔
 
 

پہلی سنیٹری مینوفیکچرنگ یونٹ کا بٹوت میں افتتاح

رام بن// بٹوت میں سینیٹری پیڈ کے مینوفیکچرنگ یونٹ کا افتتاح کیا گیا جس کی سرپرستی نبارڈ نے کی تھی۔نبارڈکے ڈپٹی ڈیولپمنٹ منیجر کے مطابق رام بن ضلع جموں کشمیر UT کا واحد ضلع ہے جس کا مرکزی حکومت نے پائلٹ پروجیکٹ "'میرا پیڈ ، میرا حق" کے تحت ہندوستان کے 30 اضلاع میں سے انتخاب کیا ہے تاکہ تیزی سے آگاہی پھیل سکے اور سینیٹری پیڈ کی آسانی سے فراہمی ہوسکے۔ یونٹ کا افتتاح ڈی ایف او بٹوت کلدیپ سنگھ اور ڈپٹی ڈیولپمنٹ مینیجر نبارڈ رام بن آروشی شرما نے مشترکہ طور پر کیا۔دہلی سے ایک ٹرینر کے ذریعے سینیٹری پیڈ کی تیاری کے لئے سیلف ہیلپ گروپ مانسروور کی تمام 30 خواتین ممبروں کی دو روزہ فری ٹرایننگ اختتام پذیر ہوگئی۔ٹریننگ مکمل کرنے کے بعد ٹرینیوں نے خود ہی پیڈ تیار کرنا شروع کردیئے ہیں جن کی اب ان کے ذریعہ مقامی طور پر مارکیٹنگ کی جائے گی تاکہ خواتین خاص طور پر دیہی خواتین میں بھی آگاہی پھیلائی جاسکے۔ڈپٹی ڈیولپمنٹ منیجر کے مطابق نبارڈ نے یونٹ قائم کیا ہے جس میں سیلف ہیلپ گروپ نے 2 ماہ سے لگ بھگ 2 لاکھ روپے کی مشینیں خریدی ہیں اور کرایہ کی عمارت کا کرایہ ایک سال تک برداشت کرے گا ، اس کے علاوہ ہمیشہ کے لئے ہاتھ تھامے گا۔اس موقع پر خواتین ٹرینیوں میں سے ہر ایک میں سینیٹری پیڈ بھی تقسیم کیا گیا۔
 
 

آر ایس پورہ میں ڈکیتی کامعاملہ حل | چوری شدہ سونا ، چاندی اور موٹرسائیکلیں برآمد

جموں//پولیس نے بدنام زمانہ چوروں کو گرفتار کرنے کا دعوی کرتے ہوئے ان کے قبضہ سے چوری شدہ سونے کے تقریباً 30تولے اور چاندی کے 22 تولے اور 10 موٹرسائیکلیں برآمد کیں۔پولیس نے بتایا کہ ایس ایچ او تھانہ آر ایس پورہ انسپکٹر جئے پال شرما اور ایس ایچ او تھانہ میران صاحب انسپکٹر اعجاز وانی کی سربراہی میں آر ایس پورہ پولیس کی خصوصی ٹیمیں ایس ڈی پی او آر ایس پورہ شبیر خان اور ایس پی ہیڈ کوارٹر جموں عادل حامد کی زیرقیادت ایس ایس پی جموں چندن کوہلی کی نگرانی میں تشکیل دی گئیں۔ سب ڈویژن آر ایس پورہ میں مختلف تھانوں میں چوری کے کچھ مقدمات درج ہونے کے بعد چوروں کو گرفتار کیا گیا۔تکنیکی اور انسانی ذہانت پر کام کرنے والی پولیس کی خصوصی ٹیموں نے چکروئی کے رہائشی ایک بدنام چور سوہن لال عرف سونو ولد ترسیم لال کو گرفتار کیا۔ان کے انکشافات پر پولیس ٹیموں نے پنجاب میں کچھ مقامات پر چھاپے مارے اور سونے کے علاوہ چاندی کے زیور بھی برآمد کیے۔ پولیس نے مزید کہا کہ کارٹار چند M / S اوم جیولر کے جالندھر کو سونے کے ایک اسمتھ نے بھی بڑی سازش کا پتہ لگانے کے لئے پولیس نے گرفتار کیا تھا۔پولیس نے بتایا کہ انہوں نے سونے چاندی کے زیورات کی بازیابی کے ساتھ آر ایس پورہ ، بشناہ ، ارنیا اور میران صاحب کے مختلف تھانوں میں چوری کے 8 مقدمات حل کرلئے ہیں۔اسی کے ساتھ تھانہ میران صاحب کی ٹیم نے دو چور نامی شبام کمار عرف شوٹر ولد رتن لال ولد بشلی کے دیوالی کا رہائشی اور انکو کمار ولد بابو رام سکنہ کناہ چک سکنہ آر ایس پورہ کو گرفتار کیا۔ انکشافات پر پولیس نے بتایا کہ ان سے 10 مسروقہ موٹرسائیکلیں برآمد ہوئی ہیں۔اس کے ساتھ ہی جموں اور سانبہ اضلاع کے تھانوں میں درج بہت سے معاملات حل ہو ئے۔
 
 

بونجواہ یوتھ ایسوسی ایشن نے ٹیلنٹ ہنٹ نمائش کا اہتمام کیا 

بونجواہ//ایک سادہ لیکن متاثر کن تقریب میں بونجواہ یوتھ ایسوسی ایشن نے آج دھرمنی نالی میں ٹیلنٹ ہنٹ نمائش کا انعقاد کیا ، جس میں تحصیلدار بونجواہ ارشاد احمد بٹ مہمان خصوصی تھے۔اس تقریب کا اہتمام طلباء کی چھپی ہوئی صلاحیتوں کو فروغ دینے اور ان کی بہترین کارکردگی کے لئے ان کی حوصلہ افزائی کے لئے کیا گیا تھا۔اس موقع پر مفزلہ ، مگیسہ (جڑواں) پائل کماری ، محمد رطیب ،شیما خورشید ، سہرش تبسم نے ثقافتی تقریبات میں حصہ لیا۔ کلاس ساتویں کے طالب علم  کلیم اللہ ، ہاتھ سے بنی ایل اینڈ ٹی مشین کو فضلہ کے کاغذات ، ڈرپ پائپوں اور سرنجوں کا استعمال کرکے چلایا۔ اس عمدہ کارکردگی اور ایل اینڈ ٹی مشین کی تیاری کے لئے عام طور پر طلبا اور خصوصی طور پر محمد کلیم اللہ کو ایوارڈ اور عزت افزائی کی گئی۔بونجواہ یوتھ ایسوسی ایشن کے ایگزیکٹو ممبر عاشق وانی نے سٹیج سیکرٹری کی حیثیت سے کام کیا اور ٹیلنٹ ہنٹ نمائش کے انعقاد کی پوری ذمہ داری ادا کی۔
 
 

گاندھی نگر جموں میں گولیاں چلیں 

جموں//ہفتہ کی رات دیر گئے پوش گاندھی نگر علاقے میں ایک ٹھیکیدار چودھری نگر سنگھ کی رہائش گاہ کے دروازے پر تین سے چار مسلح افراد نے فائرنگ کردی۔ درجن بھر راؤنڈ فائرنگ کے بعد حملہ آور کسی گاڑی میں فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے ۔جموں کے گاندھی نگر علاقے میں ایک ٹھیکدار چودھری نگر سنگھ کی رہائش گاہ پر چند نامعلوم بندوق برداروں نے گولیاں برساکر راہ فرار اختیار کی ۔ ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ ٹھیکدار کی رہائش گاہ کے باہر مسلح افراد نے اپنی کار کھڑی کی اور اس وقت فائرنگ کی جب چوہدری خاندان ایک کارمیں گھر پہنچا۔ خوش قسمتی سے فائرنگ میں کوئی شخص زخمی نہیں ہوا۔ چودھری کے گھر کے اندر کھڑی مرکزی دروازے اور بی ایم ڈبلیو کار پر دو گولیوں کے نشانے لگے۔ چودھری نگر سنگھ کے بھائی راکیش چودھری نے بتایا کہ انہوں نے چودھری فیملی کو لگاتار دھمکیوں سے متعلق پولیس کو اس معاملے میں رپورٹ کیا تھا۔ پولیس کو ملزمان کے نام پہلے ہی دیئے گئے ہیں۔ تاہم کچھ نہیں کیا گیا۔