مزید خبریں

اسرائیل فلسطینیوں سے جینے کا حق چھیننے کی کوشش میں مصروف : مفتی عبدالرحیم ضیائی

عظمیٰ یاسمین
 تھنہ منڈی // فلسطین پر اسرائیل کی جانب سے حالیہ بربریت اور حشیانہ حرکت پر انسانی حقوق کی تنظیموں اور عالمی برادری کی بے وقت خاموشی کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے مرکزی جامع مسجد تھنہ منڈی کے خطیب و امام مفتی عبدالرحیم ضیائی نے اسے ظلم اور بربریت کی انتہا قرار دیتے ہوئے ان حملوں کو انسانیت پر ایک سنگین حملے سے تعبیر کیا۔ اپنے ایک بیان میں مفتی عبدالرحیم نے کہا کہ سچ یہ ہے کہ عالمی برادری اور خاص طور پر مسلم ممالک کی خاموشی سے شہہ پا کر اسرائیل اب نہتے اور لاچار فلسطینی عوام سے ان کے جینے کا حق چھین لینے کی مذموم کوشش کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ معاملہ صرف فلسطین کا نہیں ہے بلکہ یہ مسجد اقصی کا معاملہ ہے جس کی وجہ سے یہ پوری امت مسلمہ کا معاملہ ہوجاتا ہے لیکن مسلم ممالک نے جو بے حسی دکھائی ہے ہم اس کی مذمت کرتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ اسرائیل کی جانب سے جس طرح سے فلسطین پر مظالم ڈھائے گئے اس کی سخت مذمت کی جانی چاہیے اور تمام مسلم ممالک کو ایک ساتھ مل کر فلسطین کے ساتھ کھڑا ہونا چاہئے۔ مفتی موصوف نے کہا کہ صہیونی جارحیت سے پوری دنیا واقف ہے ایسے میں جس طرح سے حماس اور فلسطینی نوجوانوں نے مسجد اقصیٰ کی حفاظت کی اس کے لیے ہم انہیں داد و تحسین پیش کرتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ غزہ میں اسرائیل اور فلسطین کے درمیان گیارہ روز تک جاری رہنے والے حملوں کے بعد فریقین نے غیر مشروط جنگ بندی کا اعلان کیا تھا، اس دوران غزہ میں 65 معصوم بچوں سمیت 256 سے زائد افراد ہلاک ہوئے جبکہ 12 اسرائیلی افراد بھی ہلاک ہوئے تھے۔ مفتی عبدالرحیم نے کہا کہ فلسطین سے ہمارا ایمانی رشتہ ہے کیونکہ یہ ارض مقدسہ جسے انبیاء کرام کا مدفن ہونے کا شرف حاصل ہے، جس کے ارد گرد برکت ہی برکت کا نزول ہے۔انھوں نے کہا کہ اسرائیل ایک غاصب ملک ہے جس نے فلسطین کی سرزمین پر بعض عالمی طاقتوں کی پشت پناہی سے جبرا قبضہ کر رکھا ہے۔ جو اس سرزمین سے فلسطینی عوام کے وجود کو ختم کردینے کے درپے ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہاسرائیل اقوام متحدہ کی جانب سے منظور شدہ قرار دادوں کو بھی اپنے پیروں تلے روند رہا ہے اور اب اس کے ناپاک حوصلے اتنے بڑھ گئے ہیں کہ مسجد اقصی میں عبادت میں مصروف فسلطینی مرد و خواتین یہاں تک کہ معصوم بچوں کو بھی اپنی بربریت کا نشانہ بنانے سے دریغ نہیں کر رہا۔ مفتی عبدالرحیم نے اقوام متحدہ یورپین یونین،ورلڈ مسلم لیگ، حکومت ہند اور تمام انصاف پسند بین لاقوامی اداروں سے اپیل کی کہ وہ اسرائیل کی جارحانہ دہشت گردی کے خلاف پختہ قدم اٹھائیں۔اس کے ساتھ ہی اسرائیلی فوج کو بلاتاخیر مسجد اقصی کی حدودسے باہر کیا جائے اور مشرقی یروشلم میں اس کی مداخلت کو روکا جائے۔
 
 
 
 

 دبڑ ،بگنوئی میں مناور دریا پر پل تعمیر نہ ہو سکا | 12دیہات کی عوام کو عبور ومرورمیں مشکلات درپیش

رمیش کیسر 
نوشہرہ //سب ڈویژن نوشہرہ کے دبڑ اور بگنوئی علاقہ میں دریائے مناور پر پل تعمیر نہ ہونے کی وجہ سے مکینوں کو دریا عبور کرنے میں شدید مشکلات کا سامنا کرناپڑرہا ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ دریا میں پانی کم ہونے کی صورت میں ہی وہ پیدل آر پار آتے جاتے ہیں لیکن خراب موسم بالخصوص برسات میں ان کی عبور ومرور شدید مشکل ہو جاتی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ دریا کے ملحقہ علاقوں میں آباد12دیہات کی عوام کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔مکینوں نے انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ گزشتہ 7دہائیوں سے ہزاروں کی آبادی پیدل ہی دریا عبور کرنے پر مجبور ہیں لیکن وہ کئی برسوں سے دریا پر پل کی تعمیر کی مانگ کررہے ہیں لیکن ابھی تک انتظامیہ کی جانب سے کوئی دھیان ہی نہیں دیا گیا ہے ۔وید پرکاش ،محمد رشید ،ماسٹر رشید ،محمد قاسم ودیگران نے بتایا کہ دریا پر پل نہ ہونے کی وجہ سے مشکل وقت میں ان کو 25کلو میٹر کا اضافی سفر کرنا پڑرہا ہے لیکن حالیہ کئی برسوں سے وہ انتظامیہ کے اعلیٰ آفیسران و منتخب نمائندوں سے رجوع کررہے لیکن ان کی آواز کو سنا ہی نہیں جارہا ہے ۔مقامی لوگوں نے انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ دریا مناور پر جلدازجلد پل تعمیر کیاجائے تاکہ ان کو دوران آمد ورفت آسانیا ں پیدا ہو سکیں ۔
 
 
 
 

پہاڑی طبقہ کو آبادی کے تناسب سے مراعات دینے کی مانگ 

حسین محتشم
پونچھ//جموں و کشمیر میں موجود تیسرا بڑا طبقہ جسے پہاڑی طبقہ کے نام سے جانا جاتا ہے، کے ساتھ مسلسل ناانصافیوں کے خلاف صدائے احتجاج بلند کرتے ہوئے جموں کشمیر انصاف موؤمنٹ نے ایک پریس بیان جاری کر لیفٹیننٹ گورنر والی انتظامیہ سے گزارش کی کہ وہ طبقہ کا تفصیلی سروے کرواکر پہاڑیوں کو ان کی آبادی کے تناسب سے مراعات دی جائیں۔ موؤمنٹ کے چیئر مین جاوید ریشی نے پریس بیان میں اس بات پر حیرت کا اظہار کیا ہے کہ جموں کشمیر کے خطہ پیر پنچال، چناب اور وادی ہے اوڑی، کرنا، بارہمولہ علاقوں میں پہاڑی لوگوں کی کثیر ابادی ہے جن کی تہذیب و تمدن گوجر و بکروال طبقہ کے برابر ہے مگر مراعات میں اس طبقہ کے ساتھ امتیازی سلوک برتا جا رہا ہے۔ انہوں نے اس موقع پر مزید کہا کہ معمولی سی ریزرویشن کا وعدہ کرکے حکومت نے اس طبقہ کی انکھوں میں دھول جھونکنے کا کام کیا ہے جس طبقہ کے لوگوں کو قبول نہیں ہے۔ انہوں نے لیفٹیننٹ گورنر انتظامیہ سے گزارش کی کہ جموں و کشمیر میں پہاڑی طبقہ کی مکمل نشاندہی کرکے، ان کی ابادی کے تناسب سے ان کیلئے سرکاری سکولوں، کالجوں، یونیورسٹیوں میں داخلہ کیلئے نشستیں مختص کی جائیں، نیز کہا کہ یہ لوگ بھی گوجر و بکروال طبقہ کے طرز پر بھیڑ بکریوں و بھینسوں کے چرانے کا کام کرتے ہیں لہذا ان لوگوں کو بھی سرکاری اراضی جات پر مالکانہ حقوق دئے جائیں تاکہ یہ طبقہ بھی خوشحال شہری کی طرح زندگی بسر کر سکے۔
 
 
]

۔3کلو میٹر سڑک 10برسوں میں مکمل نہیں ہوسکی | 1ہزار سے زائد آبادی متاثر ،سڑک کا حلیہ ہی تبدیل کردیاگیا 

جاوید اقبال 
مینڈھر //مینڈھر سب ڈویژن کی پنچایت کانگڑھ گلہوتہ میں محکمہ تعمیرات عامہ کی جانب سے 10برسوں میں محض 3کلو میٹر سڑک بھی مکمل نہیں کی جاسکی جس کی وجہ سے مذکورہ علاقہ کی 1ہزار سے زائد آبادی متاثر ہو رہی ہے ۔مکینوں نے محکمہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہائے کہاکہ ہائی سکول کیری تا محلہ قریشیاں 3کلو میٹر سڑک کی تعمیر کا کام 2010میں شروع کیا گیا تھا لیکن صرف کٹائی کے بعد پروجیکٹ کو ہی چھوڑ دیا گیا ہے جس کی وجہ سے کٹائی والی جگہ اب ایک عام راستہ بن چکی ہے جبکہ مقامی لوگ پیدل سفر کرنے پر مجبور ہو چکے ہیں ۔مکینوں نے محکمہ تعمیرات عامہ پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ محکمہ نے فنڈز ہڑپنے کیلئے صرف زمینی کٹائی کی جس کے بعد پروجیکٹ کو پوری طرح سے چھوڑ ہی دیا گیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ اس جدید دور میں بھی وہ مریضوں کو کئی کلو میٹر تک چارپائیوں پر اٹھا کر سڑک تک منتقل کرتے ہیں جبکہ مقامی سطح پر شروع کر دہ پروجیکٹ 10برسوں بعد مکمل ہونے کے بجائے ٹھپ ہی پڑ گیا ہے جس کی وجہ سے اب و اپنی زمینوں میں ٹریکٹر بھی نہیں لے جاسکتے ۔مکینوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ پروجیکٹ کو جلدازجلد مکمل کرنے کیساتھ ساتھ محکمہ تعمیرات عامہ کی جانب سے خرچ کئے گئے فنڈز کا معائینہ کیاجائے۔
 
 
 
 
 

ہیر وئن سمیت سمگلر گرفتار 

راجوری //سرحدی ضلع راجوری میں جموں وکشمیر پولیس کی جانب سے کی گئی کارروائی کے دوران ہیر وئن نما منشیات سمیت ایک شخص کو گرفتار کرلیا گیا ہے ۔پولیس نے بتایا کہ راجوری پولیس سٹیشن کی ایک ٹیم 28مئی کو فتح پور علاقہ میں معمولی کی گشت کر رہی تھی تاہم اس دوران ایک شخص نے مشکوک حالت میں فرار ہونے کی کوشش کی تاہم پولیس اہلکاروں نے اس کو روکنے میں کامیابی حاصل کر لی ۔مذکورہ شخص کی شناخت طارق محمود ولد محمد کبیر سکنہ نیروجال راجوری کے طورپر ہوئی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ مذکورہ شخص کی تلاشی کے دوران اس کے قبضہ سے 25گرام ہیر وئن نما اشیاء برآمد کرلی گئی ۔پولیس نے ملزم کو گرفتار کرتے ہوئے اس سلسلہ میں ایک مقدمہ زیر ایف آئی آر نمبر 341/2021درج کر کے مزید تحقیقات شروع کر دی ہیں ۔
 
 
 
 

پولیس کی شراب مافیا کیخلاف کارروائی | 27لیٹر دیسی شراب ضبط ،400لیٹر کچی شراب ضائع کی گئی 

رمیش کیسر +سمت بھارگو
نوشہرہ //جموں وکشمیر پولیس نے راجوری ضلع کے نوشہرہ اور سندر بنی سب ڈویژن میں غیر قانونی طورپر بنائی جارہی شراب کیخلاف مہم کو جاری رکھتے ہوئے شراب کی بھاری مقدار ضبط اور ضائع کر کے اس سلسلہ میں ایک کیس بھی درج کرلیا گیا ہے ۔پولیس نے بتایا کہ ایک خفیہ اطلاع موصول ہونے کے بعد نوشہرہ ،سندر بنی اور تریاٹھ علاقوں میں کی گئی کارروائی کے دوران 27لیٹر شراب ضبط کر لی گئی جبکہ اس دوران 400لیٹر کچی شراب ضبط بھی کی گئی ۔پولیس نے بتایا کہ ایس ایچ او سندر بنی ایس ڈی سنگھ کی قیادت میں ایک پولیس ٹیم معمول کی گشت کررہی تھی کہ اس دوران ہتھل علاقہ میں دو افراد وکاس شرما ولد رمیش لعل اور پورن چند ولد مکھ راج کو روک کر ان کی تلاشی لی گئی ۔اس دوران دونوں کے قبضہ سے مجموعی طورپر 7لیٹر شراب ضبط کرلی گئی ۔پولیس نے دونوں افراد کو گرفتار کر کے اس سلسلہ میں مقدمات زیر ایف آئی آر نمبر 44/2021اور 45/2021درج کر لئے ۔اسی طرح ایس ایچ او نوشہرہ پنکج شرما کی قیادت میں پولیس کی ایک ٹیم نے نونیال گائوں میں ایک شخص کو مشکوک حالت میں دیکھا جس کے دوران پولیس ٹیم نے تجیندر سنگھ ولد جسبیر سنگھ کو دیسی شراب بناتے ہوئے پکڑلیا ۔پولیس نے کارروائی کے دوران شراب تیار کرنے والے برتن ضبط کرلئے جبکہ 400لیٹر کچی شراب ضائع کی گئی ۔پولیس نے اس سلسلہ میں ایک معاملہ زیر ایف آئی آر نمبر 103/2021درج کر لیا ۔اسی طرح تریاٹھ علاقہ میں ایک کارروائی کے دوران ایک گاڑی زیر نمبر JK02AG-7810کو رو ک کر تلاشی لی جس مذکورہ گاڑی میں سے 10لیٹر شراب ضبط کر لی گئی ۔
 
 

کووڈ کی بیداری کیلئے مصور ی مقابلے کا اہتمام 

مینڈھر //سرحد ی ضلع پونچھ کے مینڈھر سب ڈویژن میں فوج نے کووڈ کے سلسلہ میں عوام کو بیدار کرنے کیلئے مصوری مقابلے کا اہتمام کیا ۔سب ڈویژن کے اپر ڈھرانہ علاقہ میں منعقدہ اس مصوری مقابلے کے دوران بچوں کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی ۔مقابلے میں طلباء نے اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کرتے ہوئے مختلف موضوع پر مصوری کی ۔فوجی حکام نے مقابلے میں شرکت کرنے والوں کو دو زمروں میں تقسیم کیا ہوا تھا ۔ایک زمرے میں دس برس سے کم عمر کے بچوں کو شامل کیا گیا تھا جبکہ دوسرے گروپ میں دس برس سے زائد عمر کے بچوں کو شامل کیا گیا تھا ۔اس مقابلے میں کل 40طلباء نے شرکت کی ۔فوج کی جانب سے مقابلے میں معیاری کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والوں کی حوصلہ افزائی کی گئی ۔اس موقعہ پر فوجی آفیسران نے کہاکہ کووڈ کیخلاف جنگ کیلئے سماج کے ہر ایک طبقہ کو معیاری خدمات انجام دینے کیلئے سامنے آنا پڑے گا ۔انہوں نے لوگوں سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ وہ کووڈ ایس او پیز پر عمل کریں ۔