مزید خبریں

جموں وکشمیر کے لوگوں کا بجلی اور پانی کا فیس معاف کیا جانا چاہئے: آل جموں و کشمیر پنچایت کانفرنس

جموں// آل جموں و کشمیر پنچایت کانفرنس نے یونین ٹریٹری کے لوگوں کو بجلی اور پانی کا فیس معاف کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔کانفرنس کے ایک عہدیدار نے بدھ کے روز یہاں میڈیا کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ جموں و کشمیر میں تمام سیاسی جماعتیں لوگوں کے مسائل حل کرنے میں ناکام ہوئی ہیں اور سیاسی لیڈران لوگوں کو دفعہ370  اور دفعہ 35 اے کے نام پر بے وقوف بنا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے لوگوں کے مسائل کے حل کے لیے پانچ نکاتی پروگرام بنایا ہے جس کو عوام اور سیاسی جماعتوں کے سامنے رکھا جائے گا۔موصوف نے کہا کہ جموں کشمیر کے لوگوں کو بجلی اور پانی کا فیس معاف کیا جانا چاہئے کیونکہ ہم ہی ملک کو بجلی فراہم کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر میں پی آر سی سرٹیفکیٹ بحال کی جانی چاہئے اور اس میں صرف مشرقی پاکستان کے پناہ گزینوں کو شامل کیا جانا چاہئے۔ان کا کہنا تھا کہ جموں و کشمیر میں پراپرٹی ٹیکس نافذ نہیں کیا جانا چاہئے کیونکہ گذشتہ تیس برسوں کے دوران ہم جنگ سے جوجھ رہے ہیں۔موصوف نے کہا کہ یونین ٹریٹری میں نوکریاں بھی یہاں کے نوجوانوں کے لئے ہی مخصوص رہنی چاہئے اور کان کنی وغیرہ کے ٹھیکے بھی مقامی ٹھیکے داروں کو ہی ملنے چاہئے۔انہوں نے کہا کہ غیر مقامی ٹھیکیداروں کو یہ ٹھیکے ملنے سے ریت، باجری وغیرہ کی قیمتیں کافی بڑھ گئی ہیں جس کے باعث لوگ پریشان ہیں۔
 

ڈھلواس میں ڈھانچوں کی منتقلی ، مالکان کی بازآبادکاری کیلئے پینل تشکیل

جموں//جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ نے قومی شاہراہ 44 کے رام بن ناشری میں ڈھلواس میں زمین کے حصول کے مقدمہ کے تحت آنے والے ڈھانچوں کے مالکان کی تعمیر نو اور بازآبادکاری کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی۔"جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ ، کمشنر سیکرٹری منوج کمار دویدی کی طرف سے جاری کردہ ایک حکم میںکہاگیا ہے’’ ڈھلواس (ناشری بانہال این ایچ 44) کیس میں ڈھانچوں کو منتقل کرنے اور زمین کے حصول کے تحت آنے والے ڈھانچوں کے مالکان کی باز آبادکاری کیلئے صوبائی کمشنر جموں کی سربراہی اور ڈی سی رام بن کی ممبر کنوینر کی حیثیت میں ایک پانچ رکنی کمیٹی کے قیام کومنظوری دی جاتی ہے‘‘۔ اس کمیٹی میں چیف کنزرویٹر آف فارسٹ جموں ،جنگلات و ماحولیات کے نمائندے ، پبلک ورکس محکمہ کے نمائندے ، ریونیو ڈیپارٹمنٹ کے نمائندے اور پروجیکٹ ڈائریکٹر این ایچ اے آئی ، پی آئی یو   رام بن کوبطور ارکان نامزد کیا گیا ہے۔
 

 ماسٹر پلان خلاف ورزی پر تعمیرات سیل

جموں//جموں ڈیولپمنٹ اتھارٹی نے انسداد تجاوزات مہم چلائی اور ماسٹر پلان 2032 کی خلاف ورزی کرنے کی پاداش میں جموں کے سرور علاقے میں غیر قانونی تعمیرات کو سیل کردیا۔یہ مہم پولیس محکمہ اور ضلعی انتظامیہ جموں کے تعاون سے کی گئی۔اتھارٹی کی جانب سے سیل کی گئی غیر قانونی تعمیر میں تین کمرشل ڈھانچے شامل تھے۔ جے ڈی اے نے خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف مضبوطی سے کام کرتے ہوئے اس مہم کو کامیابی سے سرانجام دیا اور لوگوں پر زور دیا کہ وہ کوئی بھی تعمیر شروع کرنے سے پہلے اپنے نقشوں کی منظوری اور ان کے حق میں اجازت جاری کریں۔ اتھارٹی کی جانب سے ایک واضح پیغام بھی دیا گیا کہ خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف مستقبل میں بھی ایسی مہم جاری رہے گی۔
 

کووڈ ایس ا وپیز کی خلاف ورزی پر48ہزار کا جرمانہ |  2446 ٹیکے لگائے گئے ، 1403 نمونے جمع کیے گئے 

رام بن//ضلع رام بن میں کووڈ پروٹوکول کے نفاذ کی مہم کو جاری رکھتے ہوئے انفورسمنٹ ٹیموں نے چہرے کے ماسک نہ پہننے اور جسمانی فاصلہ برقرار نہ رکھنے پر متعدد خلاف ورزی کرنے والوں پر جرمانہ عائد کیا۔نافذ کرنے والی ٹیموں نے اپنے متعلقہ دائرہ کار میں معائنہ کے دوران 47ہزار800 روپے جرمانہ وصول کیا۔انفورسمنٹ افسران نے لوگوں پر زور دیا کہ وہ چہرے کے ماسک پہنیں اور جسمانی فاصلہ برقرار رکھیں اس کے علاوہ اپنے قریبی سی وی سی پر کووڈ ویکسی نیشن کی خوراکیں لیں۔ ڈسٹرکٹ امیونائزیشن آفیسر ڈاکٹر سریش نے بتایا کہ بدھ کو ضلع رام بن میں 2446 افراد کو پہلی اور دوسری کووڈ ویکسین کی خوراک دی گئی۔چیف میڈیکل آفیسر ڈاکٹر محمد فرید بھٹ کی طرف سے جاری کردہ روزانہ بلیٹن کے مطابق محکمہ صحت نے 1403 نمونے جمع کیے ہیں جن میں 355، RT-PCR اور 1048، RAT نمونے شامل ہیں جبکہ اس کے علاوہ 2446 افراد کو وقف ٹیکہ کاری مراکز میں کووڈ ویکسین فراہم کی گئیں۔
 

ڈی سی رام بن نے نیل پرندھر میں عوامی رسائی کیمپ کا انعقاد کیا | افسران کو پبلک سروس ڈیلیوری سسٹم میں مزید بہتری لانے کی ہدایت

رام بن//ڈپٹی کمشنر رام بن مسرت الاسلام نے ہفتہ وار عوامی آؤٹ ریچ پروگرام کے تحت رامسو سب ڈویژن کے دور دراز علاقے نیل پرندھر اور چملواس کا دورہ کیا اور لوگوں کی شکایات سنیں۔ اس کے علاوہ ترقیاتی منظر نامے کا جائزہ لیا اور مختلف سماجی اور مالی امداد پر عملدرآمد کاجائزہ لیا۔ راستے میں ڈی سی نے دیہی ترقی سیکٹر کے تحت انجام پانے والے نئے مکمل ہونے والے ترقیاتی کاموں کا افتتاح اور معائنہ بھی کیا۔ انہوں نے لوگوں پر زور دیا کہ وہ ویکسی نیشن لیں اور انفیکشن میں تازہ اضافے کو روکنے کے لیے کوویڈ مناسب رویے پر عمل کریں۔نیل کے علاقے میں ایمبولینسوں کی فراہمی کے مطالبے کا جواب دیتے ہوئے ڈپٹی کمشنر نے متعلقہ ہیلتھ اتھارٹیز کے ساتھ مطالبہ اٹھانے کی یقین دہانی کرائی۔ انہوں نے چملواس نیل روڈ کی اپ گریڈیشن کی بھی یقین دہانی کرائی۔ڈی سی نے چیف ایجوکیشن آفیسر کو ہدایت کی کہ وہ سکولوں میں داخلہ بڑھانے اور شرح خواندگی کو بہتر بنانے کے علاوہ علاقے کے طلباء کو معیاری تعلیم کی فراہمی کے لیے تمام ضروری اقدامات کریں۔ڈی سی نے لوگوں کو یقین دلایا کہ نیل کے لیے سی ڈی بلاک کا ان کا مطالبہ متعلقہ حلقوں کے ساتھ اٹھایا جائے گا۔ انہوں نے تمام افسران کو ہدایت کی کہ وہ اپنے متعلقہ محکموں کی پبلک سروس ڈیلیوری میکانزم کو بہتر بنائیں تاکہ عوام کو سہولت فراہم کی جا سکے۔ڈی سی نے عوام پر زور دیا کہ وہ آیوشمان صحت اسکیم کے لیے اندراج کریں تاکہ عالمگیر ہیلتھ انشورنس اسکیم کا فائدہ اٹھایا جاسکے۔انہوں نے نوجوانوں کو روزگار پر مبنی مختلف اسکیموں سے فائدہ اٹھانے کی ترغیب بھی دی جن میں ممکن اور تیجسوانی شامل ہیں جو کہ جموں و کشمیر حکومت کے ذریعہ لاگو کی جا رہی ہیں۔ڈی سی نے جل شکتی ڈیپارٹمنٹ کو ہدایت دی کہ وہ جے جے ایم کے تحت نیل کے علاقے میں پانی کی مناسب فراہمی کو یقینی بنائے۔عوامی مسائل سننے کے بعد ڈی سی نے انہیں جلد از جلد حل کرنے کی یقین دہانی کرائی۔
 

ایڈیشنل ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کمشنر کشتواڑ کا بلاک بونجواہ کا دورہ | پاٹ شالہ ، نالی میں لوگوں کی شکایات سنیں،دونادی بونجواہ سڑک کے کام کا معائنہ کیا

 کشتواڑ //لوگوں کی شکایات کا ازالہ کرنے کے مقصد سے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کمشنرکشتواڑ شام لال نے ضلع کشتواڑ کے بلاک بونجواہ کا دورہ کیا۔ انہوں نے بی ڈی سی کی چیئرپرسن مریم بیگم ، ڈی ڈی سی ممبر آمنہ بانو کی موجودگی میںپاٹشالہ اور نالی علاقوں میں پی آر آئی اور مقامی لوگوں کی شکایات سنیں ۔پاٹشالہ ، موری ، کیوا کے مقامی لوگوں نے اپنی شکایات اور مسائل پیش کیے۔ انہوں نے پانی کی مناسب فراہمی ، دنیاوی سے بنجواہ تک تیز رفتار سے سڑک کو بلیک ٹاپ کرنے ، لکڑی کے بوسیدہ کھمبوں کو تبدیل کرنے ، ٹپری پر پنچایت گھر ، سیلاب کی وجہ سے تباہ ہونے والی عیدگاہ کی بحالی ، پی ٹی جی ایس وائی کے تحت مجوزہ پاٹشالہ سے گرسل تک سڑک کا کام فوری شروع کرنے کا مطالبہ کیا۔ موری میں ہائی سکول ، پاٹشالہ میں سکول کی عمارت کی مرمت ، موری گاؤں کے لیے لنک روڈ کی تعمیر ، اس کے علاوہ آواس پلس میں حقیقی چھوڑے گئے مستحقین کو شامل کر نے پرزوردیا۔پی آر آئی کی قیادت میں وفد نے سردیوں کے آغاز سے قبل دنیاوی بونجواہ ، کیواپول ، کیتھر ، ٹیپری پٹنازی ، پٹنازی-کیتھر سڑکوں پر کام کو تیز کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔بات چیت کے دوران پی ایچ سی نالی کے لیے حاصل کردہ زمین کی حد بندی ، بنجواہ میں کمیونٹی ہال کی تعمیر ، مقامی لوگوں کو بنیادی سہولیات کی فراہمی کے لیے نالی سے ڈیلی پٹن تک کی سڑک کو بھی اٹھایا گیا۔ہیلتھ پی ایچ سی نالی میں عملے کی کمی ، پی ایچ سی نالی میں مناسب جگہ/رہائش اور پی ایچ سی میں گائناکالوجسٹ کی تعیناتی مقامی لوگوں کے پیش کردہ دیگر مطالبات میں سے تھے۔مقامی لوگوں کے مطالبات اور مسائل کو صبر سے سننے کے بعد اے ڈی ڈی سی نے انہیں یقین دلایا کہ متعلقہ افسران نے ہر نقطہ نوٹ کیا ہے اور مطالبات کے ازالے کے لیے اس کے مطابق کارروائی کی جائے گی۔پانی کی قلت کے بارے میں انہوں نے علاقے کے متعلقہ افسران کو ہدایت کی کہ وہ اس مسئلے کو دیکھیں اور عوام کو جل زندگی مشن -گھر گھر جل سکیم کے بارے میں آگاہ کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اسکیم کے تحت کام جاری ہے اور جلد ہی ضرورت مند دیہات کو پانی کی سپلائی کو باقاعدہ کردیا جائے گا۔دریں اثنا ، اے ڈی ڈی سی نے دنادی بونجواہ سڑک کے کام کی پیش رفت کا بھی معائنہ کیا اور انجینئرز کو ہدایت کی کہ اس کی بروقت تکمیل کے لیے کام کی رفتار کو تیز کیا جائے۔
 

 انتظامیہ کی لاپرواہی کی وجہ سے |  بنی میں ہزاروں لوگوں کا سڑک رابطہ منقطع 

 کٹھوعہ//ضلع ڈوڈہ کے اسمبلی حلقہ بنی کے کاٹلی ملہار میں متعلقہ محکمہ کی لاپرواہی کی وجہ سے ہزاروں لوگ سڑک رابطہ سے محروم ہیں۔ اپنی پارٹی لیڈر یاسر چوہدری نے کہاکہ بدقسمتی کی بات ہے کہ کٹھوعہ میں محکمہ اور انتظامیہ لوگوں کی  طرف کوئی توجہ نہیں دے رہی۔ کاٹلی۔ ملہار سڑک جوکہ پسیاں گرآنے اور مٹی کے کٹاؤ کی وجہ سے آمدورفت کے لئے بند ہوگئی تھی ، جس کی تعمیر ومرمت کا کام بارہا گذارشات کے باوجود شروع نہ کیاگیا۔ انہوں نے کہا’’ایک ماہ گذر جانے کے بعد بھی متعلقہ محکمہ نے سڑک رابطہ بحال کرنے کے لئے کوئی اقدامات نہ اُٹھائے گئے جس سے ہزاروں لو گ پریشان حال ہیں۔ انہوں نے کہاکہ حکومت کو چاہئے کہ اِس معاملہ کو سنجیدگی سے لے اور متعلقہ محکمہ کے ذمہ دار افسران کے خلاف کارروائی کی جائے جن کی لاپرواہی کی وجہ سے غریب آباد سڑک رابطہ سے محروم ہے۔ انہوں نے کہاکہ پچھلے ماہ سڑک کا بڑا حصہ بہہ گیا تھا جس کی مرمت کا کام ابھی تک شروع نہ کیاگیا۔
 

بھیم سنگھ نے فاروق عبداللہ کے بیان کی تائید کی

جموں// نیشنل پینتھرس پارٹی کے صدرپروفیسر بھیم سنگھ نے نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ کی افغانستان میں سیکولرازم ، جمہوریت اور قانون کی حکمرانی کی حمایت کرنے پر تعریف کی ہے۔ پروفیسر بھیم سنگھ نے کہا کہ ڈاکٹر فاروق عبداللہ کا افغان حکومت کے بارے میں بیان بہت جرات مندانہ ، دلیرانہ اور ہندوستان کے خودمختار ، سیکولر ، سوشلسٹ اور جمہوری آئین کا واضح پیغام دیتا ہے۔ انہوں نے یہ بھی امید ظاہر کی کہ طالبان حکومت پٹھانوں کی پرانی روایت کو بھی برقرار رکھی گی ۔پروفیسر بھیم سنگھ نے آرٹیکل 370 اور انتخابات کے ذریعے اسمبلی کی بحالی پر ڈاکٹر فاروق عبداللہ کے موقف کی بھی تعریف کی۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر فاروق عبداللہ کے ناقدین کو سمجھنا چاہیے کہ قومی اور بین الاقوامی مسائل پر ان کے بیانات جرات مندانہ ، سیکولر اور دوستانہ ہیں جنہیں سبھی کو ذہن میں رکھ کر اچھی طرح سمجھنا چاہیے کہ کشمیر نے 1947 میں اپنے والد شیخ محمد کے دور میں اپنا پیغام دیا تھا ۔