مزید خبریں

کولگام میں ہٹ اینڈ رن کیس حل

 ملزم گرفتار،ڈرائیور گرفتار

سرینگر// کولگام تھانہ کی ایک اطلاع کے مطابق لارو نامی گاؤں میں ایک موٹر سائیکل سوار جہانگیر احمد ڈار ولد محمد سبحان ڈار ساکن چرٹ کولگام کو ایک نامعلوم گاڑی نے ٹکر مارا جس کے نتیجے میں اس کی موقع پر ہی موت ہوگئی اورگاڑی کاڈرائیور جائے واردات سے فرار ہو گیا۔پولیس نے اس سلسلے میں ایف آئی آر نمبر 258/2021 کے تحت ایک کیس درج کرکے تحقیقات کا آغاز کیا گیا۔پولیس نے ’ہٹ اینڈ رن‘ کیس کی تحقیقات کیلئے ایک خصوصی تحقیقاتی ٹیم تشکیل دی ۔ تفتیشی ٹیم جدید آلات، تکنیکی شواہد اور انسانی معلومات سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ملزم ڈرائیور کی شناخت کرنے میں کامیاب رہی اور واقعہ وقوع پذیر ہونے کے دو دن بعد اسے (ڈرائیور)گرفتار کیا گیا۔مذکورہ ڈرائیور کی شناخت معشوق احمد ڈار ولد عبدالسلام ڈار ساکن ڈی ایچ پورہ کے طور پر ہوئی ہے اور اس کی سوئفٹ کار زیر نمبر9240 DL5CK-بھی ضبط کر لی گئی۔اسے تھانے منتقل کر دیا گیا ہے جہاں وہ زیر حراست ہے۔ کیس کی مزید تفتیش جاری ہے۔
 
 
 

مارشل میک لوہان کو خراج عقیدت

اسلامک یونیورسٹی ممیں پروفیسر قدوائی کا خصوصی لیکچر 

اونتی پورہ// مشہور کمیونی کیشن تھیورسٹ مارشل میک لوہان کی برسی پر انہیںشعبہ صحافت اور ماس کمیونی کیشن ، اسلامک یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی نے جمعہ کو ایک ورچوئل خصوصی لیکچر کا انعقاد کیا۔ایوارڈ یافتہ کمیونی کیشن سائنسدان پروفیسر شفیع قدوائی جو علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں تین دہائیوں کے زیادہ عرصے سے ابلاغی علوم، ثقافتی نظریات اور پرنٹ میڈیا پڑھا رہے ہیںنے خصوصی لیکچر میںمارشل میک لوہان کو خراج تحسین پیش کیا جو کمیونیکیشن تھیوریسٹ مانے جاتے ہیں اور جنہوں نے کمیونیکیشن اسٹڈیز میں انقلاب برپا کیا ۔انہوںنے میڈیا کے فیصلہ کن اثر و رسوخ اور ان کے نظریاتی تصور کا خلاصہ کیا۔ تقریب کے دوران پروفیسر شفیع قدوائی نے مارشل میک لوہان کے کلیدی فلسفیانہ نظریات پر گفتگو کی اور کمیونیکیشن تھیوری کے شعبے میں ان کی اہم شراکت پر روشنی ڈالی۔مارشل میک لوہان کے نظریات کی عصری مطابقت کے بارے میں بات کرتے ہوئے پروفیسر قدوائی نے کہا کہ کمیونی کیشن ٹیکنالوجیز پر مسلسل بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ اور بھروسے نے مواصلات اور معاشرے کے بارے میں میک لوہان کے پیشن گوئی کے دلائل کی مطابقت کی تصدیق کی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ مارشل میک لوہان کے تصورات اور نظریات نے اس وقت کے موجودہ میڈیا تھیوری کو فلسفیانہ بنیاد فراہم کی اور عصری دور میں جب ہمارے پاس میڈیا کی بہتات موجود ہے۔قدوائی نے کہا کہ ٹیکنالوجی کے تعین کے بارے میں ان کا نظریہ کمیونیکیشن اسکالروں کیلئے زیادہ قابل مطالعہ بن جاتا ہے۔انہوںنے میک لوہان کے کام’’انڈرسٹینڈنگ میڈیا"پر تفصیل سے روشنی ڈالی اور کہا کہ میڈیم کی نوعیت کو نظریہ بنانے کے لیے میک لوہان کا بے مثال نقطہ نظر خود مواصلاتی مطالعات میں ایک اہم شراکت رہا ہے جس نے میرے عزم کی تحقیق کے بارے میں ایک نیا پورا شعبہ کھول دیا۔قبل ازیں ہیڈ آف ڈیپارٹمنٹ ڈی جے ایم سی ڈاکٹر مجیب لیاقت نے اپنے خطبہ استقبالیہ کے دوران مارشل میک لوہان کی خدمات پر اپنے خیالات کا اظہار کیا اور کہا’’میڈیا کے اثرات میک لوہان جیسے ان کے باقی خیالات عصر حاضر میں کافی حد تک مطابقت رکھتے ہیں اور ہم اس کا مظاہرہ کرنے کی کوشش کرتے ہیں‘‘۔سینئر اسسٹنٹ پروفیسر ڈی جے ایم سی اور سیشن ماڈریٹر ڈاکٹر مونسہ قادری نے بھی میک لوہان کے نظریاتی اور عصری میڈیا رسرچ میں کلیدی تصورات کی علمی اہمیت کو اجاگر کیا۔ڈی جے ایم سی کے فیکلٹی ممبران ڈاکٹر رابیہ نور، ڈاکٹر عارف نداف، ڈاکٹر سیار احمد میر اور ڈاکٹر توصیف مجید بھی اس دوران موجود تھے۔
 
 
 
 
 

 بڈگام میں یوم جمہوریہ کیلئے انتظامات کا جائزہ لیاگیا

بڈگام//ڈپٹی کمشنر بڈگام شہباز احمد مرزا نے یوم جمہوریہ 2022 کی تقریبات کی تیاریوں کا جائزہ لینے کے لیے ضلعی افسران اور مختلف سیکورٹی ایجنسیوں کی ایک میٹنگ کی صدارت کی۔میٹنگ میںبتایا گیا کہ اس دن کی مرکزی تقریب سپورٹس سٹیڈیم بڈگام میں منعقد کی جائے گی جبکہ اسی طرح کی تقریبات سب ڈویژن اور تحصیل صدر مقامات پر بھی منعقد کی جائیں گی۔ میٹنگ میں بتایا گیا کہ JKP، CRPF، NCC کے دستے، مختلف سرکاری اسکولوں کے طلباء مارچ پاسٹ پریڈ میں حصہ لیں گے۔اس کے علاوہ مختلف ثقافتی پروگرام بھی تقریبات کا حصہ ہوں گے اور ایک پروقار تقریب بھی منعقد کی جائے گی۔اس موقع پر مختلف کمیٹیاں تقریبات کے احسن انعقاد کے لیے تشکیل دی گئی۔محکمہ جات کے سربراہان کو یہ بھی ہدایت کی گئی کہ وہ اپنے محکموں کے بینر عوام کے لیے اپنی سرگرمیوں کی نمائش کے لیے لگائیں۔
 
 
 
 
 

غیر سکولوں بچوں کیلئے ہنرمندی تربیت

سماگرا شکھشا مہمکا آغاز

جموں //سماگرا شکشا کے تحت جموں و کشمیر میں وزارت تعلیم اور ہنر مندی کی ترقی اور انٹر پرنیور شپ کی وزارت نے مشترکہ طور پر’ ہُنر ہب انیشیٹو ‘پروگرام کا باقاعدہ آغاز کیا تھا ۔ ایس کے آئی پردھان منتری کوشل وکاس یوجنا ( پی ایم کے وی وائی ) 3.0 کا ایک حصہ ہے اور اسے ملک بھر میں یکم جنوری 2022 کو شروع کیا جا رہا ہے ۔ پروگرام کو نیشنل اسکل ڈیولپمنٹ کارپوریشن نئی دہلی کے ذریعے عمل میں لایا جائے گا ۔ اس اسکیم کا مقصد اسکول سے باہر بچوں / نوجوانوں اور ڈراپ آؤٹس کیلئے این ایس ڈی سی کے سرٹیفائیڈ اسکل کورسز فراہم کرنا ہے اور انہیں تقرریوں کے ساتھ ساتھ خود کار کاروبار کیلئے تیار کرنا ہے ۔ اس اسکیم کو ریاستی ہنر مندی کے فروغ کے مشنوں سے بھی تعاون حاصل ہو گا ۔ پراجیکٹ ڈائریکٹر سماگرا شکشا دیپ راج کنیتھیا نے انکشاف کیا کہ جموں و کشمیر میں 40 اسکولوں کی شناخت وزارت تعلیم ، حکومت ہند نے ’ ہنر کے مرکز ‘ کے طور پر کی ہے ۔ تا ہم ابتدائی طور پر یہ پروگرام صرف 9 سرکاری اسکولوں میں پائیلٹ پروجیکٹ کے طور پر شروع کیا جا رہا ہے ۔ یہ اسکول سے باہر /ڈراپ آؤٹ زمرے سے تعلق رکھنے والے اندراج شدہ امیدواروں کو این ایس ڈی سی کے تسلیم شدہ کورسز میں تربیت فراہم کریں گے ۔ انہوں نے مزید انکشاف کیا کہ آخر کار پروگرام کو بڑھایا جائے گا تا کہ مقررہ وقت میں زیادہ سے زیادہ اسکولوں کا احاطہ کیا جا سکے ۔ تربیت کا آغاز تمام اسکولوں میں بیک وقت نئے سال کے موقع پر شاندار طریقے سے کیا گیا ۔ SMDCs/SMCs کے اراکین ، مقامی لوگ ، پنچائتوں /میونسپل کمیٹیوں کے نمائندے اور اساتذہ ان تمام اسکولوں میں افتتاحی تقریب میں شامل ہوئے ۔ ذرائع کے مطابق ان سکولوں کے ذریعے مزید اندراج کی مہم چلائی جائے گی تا کہ پروگرام کی زیادہ سے زیادہ رسائی فراہم کی جا سکے ۔ پروگرام کو جموں و کشمیر میں جوگندر سمیال اور ڈاکٹر رویندر جنگرال ، کوارڈینیٹر ووکیشنل ایجوکیشن سماگرا شکشا نے ترتیب دیا تھا ۔