محبوبہ کا پاسپورٹ معاملہ

 سرینگر// جموں وکشمیر پولیس نے محبوبہ مفتی کے خلاف "منفی رپورٹ" پیش کرتے ہوئے پاسپورٹ دینے کی مخالفت کی ہے۔ جموں وکشمیر ہائی کورٹ میں محبوبہ کے پاسپورٹ کی اجرائی میں تاخیر پر ایک عرضی دائر کی گئی ہے ، جسکی سماعت کے دوران پولیس نے ایک رپورٹ پیش کی ہے۔محبوبہ نے پچھلے سال 31 مئی کو میعاد ختم ہونے کے بعد گذشتہ سال دسمبر میں ایک تازہ پاسپورٹ کے لئے درخواست دی تھی ، لیکن پولیس تصدیق کی رپورٹ کی عدم موجودگی میں درخواست منظور نہیں کی گئی ہے۔ حکام نے بتایا کہ محکمہ فوجداری تحقیقاتی (سی آئی ڈی) کے ذریعہ ان کے خلاف "ایک منفی رپورٹ" پیش کی گئی ہے ، لیکن انہوں نے تفصیلات بتانے سے انکار کردیا کہ معاملہ ہائی کورٹ کے سامنے اٹھایا جائے گا۔23 مارچ کو درخواست کی سماعت کرتے ہوئے وزارت خارجہ اور علاقائی پاسپورٹ آفس کی نمائندگی کرتے ہوئے ایڈیشنل سالیسیٹر جنرل ٹی ایم شمسی نے اس وقت معاملہ التوا میں رکھنے کا مطالبہ کیا تھا، جب سی آئی ڈی کی نمائندگی کرنے والے وکیل نے جسٹس علی محمد ماگرے کی عدالت میں بتایا تھا کہ  محبوبہ کی پاسپورٹ اجرائی کی درخواست پر رپورٹ 18 مارچ کو جمع کروائی گئی ہے۔تاہم ، شمسی نے عدالت کو بتایا کہ اسے 22 مارچ کو سری نگر میں پاسپورٹ آفیسر کی طرف سے ایک مکتوب موصول ہوا ہے اور اس کے مندرجہ ذیل مواد سے پتہ چلتا ہے کہ درخواست گزار کی تصدیق کا عمل جاری ہے اور جیسے ہی تصدیق کا عمل مکمل ہوجائے گا ،  فوری طور پر مزید کارروائی کے لئے لازمی رپورٹ پیش کی جائے گی "۔جسٹس ماگرے نے 29 مارچ کو معاملے کی مزید سماعت کرتے ہوئے کہا ، "مکتوب میں مزید انکشاف ہوا ہے کہ درخواست گزار کے سلسلے میں سی آئی ڈی کی توثیق کی رپورٹ پیش نہیں کی گئی ہے‘‘۔محبوبہ کے وکیل نے کہاتھا کہ جے کے سی آئی ڈی سے رپورٹ کی عدم دستیابی کے حوالے سے ریجنل پاسپورٹ آفیسر سری نگر نے جو موقف اٹھایا ہے ، اس نے درخواست گزار کے حق میں پاسپورٹ جاری کرنے میں تاخیر کی ہے۔درخواست میں ، محبوبہ نے کہا کہ اس کا پاسپورٹ گذشتہ سال 31 مئی کو ختم ہوگیا تھا اور اسی کے مطابق اس نے 11 دسمبر 2020 کو متعلقہ حکام کے سامنے ایک نیا پاسپورٹ جاری کرنے کے لئے درخواست دی تھی۔محبوبہ کے وکیل نے کہا کہ وزارت خارجہ کی جاری کردہ ہدایات کے مطابق ، کسی فرد کا پاسپورٹ 30 دن میں جاری کرنا ہے لیکن ، تین ماہ گزر جانے کے باوجود ، درخواست گزار کو پاسپورٹ جاری نہیں کیا گیا ہے، کیونکہ پولیس کی تصدیق زیر التوا ہے۔