لیفٹیننٹ گورنرآج کووڈ 19 کی خطرناک صورتحال کا جائزہ لے گا

جموں//لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا جموں و کشمیر میں کووڈ 19 کی ابھرتی ہوئی صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے ایک اہم میٹنگ کی صدارت کریں گے جس نے پچھلے سال کی دوسری لہر کا ریکارڈ توڑ دیا۔جمعرات کو جموں ضلع میں 1217 کوویڈ 19 مثبت کیس درج ہوئے ہیں جن میں 24 مسافر شامل ہیں۔اس صورتحال نے حکام کو پریشان کر دیا ہے۔ایک سرکاری عہدیدارنے بتایا کہ لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا کل شام 4:30 بجے جموں و کشمیر میں کوویڈ 19 کی صورتحال کے جائزہ اجلاس کی صدارت کریں گے۔انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کی طرف سے ہر ہفتے اس طرح کی میٹنگیں معمول کے مطابق منعقد کی جاتی ہیں تاکہ کووڈ کی صورتحال کا جائزہ لیا جا سکے اور وائرس کے پھیلاؤ کو کنٹرول کرنے کے لیے مناسب اقدامات کیے جا سکیں۔ان کاکہناتھا"ایل جی کوویڈ 19 کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے ایک میٹنگ کی صدارت کرے گا کیونکہ رجحانات بہت زیادہ ہیں حالانکہ ہسپتال میں داخلہ کم ہے۔ محکمہ صحت کے ساتھ آخری میٹنگ چیف سکریٹری ڈاکٹر ارون کمار مہتا کی زیر صدارت ہوئی تھی‘‘۔عہدیدار نے کہا کہ اس بات کا زیادہ امکان ہے کہ حکومت کوویڈ 19 کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے کوئی فیصلہ لے سکتی ہے۔دریں اثنا، گورنمنٹ سپرسپیشلٹی ہسپتال جموں کے احاطے نے ایک ویران شکل اختیار کر لی جس میں آؤٹ پیشنٹ ڈپارٹمنٹ میں مریضوں کی کم سے کم موجودگی کے ساتھ کووڈ 19 کے معاملات میں بہت سے انتظامی افسران، ڈاکٹروں اور پیرا میڈیکل سٹاف کو کووڈ 19 مثبت پایاگیا ہے۔او پی ڈی میڈیکل چیک اپ کے لیے مختلف شعبہ جات میں مریضوں کی کم از کم منزل تھی۔ہسپتال میں داخل ہونے پر مریضوں کو ریپڈ اینٹی جن ٹیسٹ کٹس کا استعمال کرتے ہوئے چیک کیا جاتا ہے۔ایک عہدیدارنے کہا "مثبت مریضوں کو ہسپتال میں داخلے کی اجازت نہیں ہے اور منفی رپورٹ والے لوگوں کو مزید او پی ڈی میں جانے کی اجازت ہے"۔عہدیدار نے بتایا کہ حکام نے روزانہ کی بنیاد پر ہر شعبہ میں صرف 50 مریضوں کو او پی ڈی چیک اپ کی اجازت دی ہے،حالانکہ 150 مریض جو معمول کے مطابق تھے ان محکموں میں چیک کیا گیا تھا۔انہوں نے کہا کہ ’’لوگ بھی ہوش میں آگئے ہیں اور وہ بھی ہسپتال آنے سے گریز کرتے ہیں جب تک کہ یہ ایمرجنسی نہ ہو۔ جبکہ معمول کی سرجری روک دی گئی ہے اور آپریشن تھیٹرز میں صرف ایمرجنسی سرجری کی جا رہی ہے۔عہدیدار کاکہناتھا"تقریباً 1/3 لوگ SSH میں OPD چیک اپ کے لیے آتے ہیں۔ چونکہ لوگوں کا ہسپتال میں داخلے پر ٹیسٹ کیا جا رہا ہے، بہت سے لوگ ہسپتال آنے سے گریز کرتے ہیں" ۔