سینٹرل یونیورسٹی کشمیرمیں یوم سیاحت پرسمینار

گاندربل//سینٹرل یونیورسٹی کشمیر میں شعبہ سیاحت کے زیر اہتمام پیر کے روز گرین کیمپس میں یوم عالمی سیاحت کے سلسلے میں’’سیاحت برائے شمولیتی ترقی‘‘کے موضوع پر ایک روزہ سیمینار کا اہتمام کیا گیا۔وائس چانسلر پروفیسر معراج الدین میر ،ہوٹل اور سیاحت مینجمنٹ کے ڈائریکٹر سینٹر برائے لائف سکلز اینڈ سافٹ سکلز پروفیسر آشیش دحیہ ، رجسٹرار سینٹرل یونیورسٹی کشمیر پروفیسر ایم افضل زرگر ،شعبہ سکول آف بزنس سٹڈیز کے سربراہ پروفیسر فاروق اے شاہ ، ونٹیج جنرل منیجر  جہانگیر احمد خان ، کوآرڈینیٹر ڈی ٹی ایس فیضان اشرف میر ، فیکلٹی ممبران ، اسکالرز اور طلبا نے سیمینار میں شرکت کی۔اپنے صدارتی خطاب میں وائس چانسلر پروفیسر معراج الدین میر نے کہا کہ پہلگام ، گلمرگ ، سونمرگ سمیت  دیگرمشہور سیاحتی مقامات پر کنکریٹ کے ڈھانچوں کی تعمیر وادی کے سیاحت کے شعبے کے لیے باعث برکت بن گئی ہے۔ پروفیسرمعراج الدین میر نے کہا،’’وقت کی ضرورت سیاحتی مقامات پر ایسی عمارتیں بنانا ہے ، جو اس مخصوص جگہ کے نازک ماحولیات اور ماحول کو نقصان نہ پہنچائیں اور یہ مقامی فن تعمیر اور ذائقہ کے مطابق ہوں‘‘۔  انہوں نے کہا کہ کئی ناکامیوں کے باوجود سیاحت کی صنعت ہر گزرتے دن کے ساتھ ترقی کر رہی ہے اور وادی کشمیر میں ہزاروں لوگوں کو روزی فراہم کر رہی ہے۔ سیاحت پر اپنے کلیدی خطاب میں پروفیسر آشیش دہیا نے کہاسیاحت کی صنعت دنیا بھر اور ہندوستان میں روزگار کا سب سے بڑا ذریعہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ سیاحت کے شعبے میں جامع ترقی کے حصہ داروں کے لیے مساوی مواقع مقامی معیشت سے زیادہ سے زیادہ معاشی روابط اور معیشت کے معاشی رساو کو کم کرنے کے ذریعے حاصل کی جا سکتی ہے۔اپنے خصوصی خطاب میں رجسٹرار پروفیسر ایم افضل زرگر نے کہا کہ دنیا بھر میں کووِڈ – 19 وبائی مرض کی وجہ سے سیاحت کی صنعت پر منفی اثرات مرتب ہونے سے سیاحت متاثر ہوئی ہے اور وقت کی ضرورت ہے کہ اسے دوبارہ زندہ کیا جائے۔کوآرڈینیٹر ڈی ٹی ایس  فیضان اشرف میر نے اپنے استقبالیہ خطاب میں یوم سیاحت منانے کے پیچھے کی تاریخ کے بارے میں تفصیلات دیتے ہوئے کہا کہ یہ دن ہر سال سیاحت کی صنعت کو مدد دینے اور معاشرے کی مجموعی نشوونما اور ترقی میں سیاحت کے کردار کے بارے میں عوام میں شعور پیدا کرنے کے لیے منایا جاتا ہے۔