زرد آنگن کی دھوپ

کھردرے موسم کے پنکھ
سردیوں کی تلاش میں سرگرداں
دھوپ سینکنے اُترے ہیں
میرے آنگن میں ۔۔۔
دھول سے اٹی اُڑانیں سستانے لگیں
بدلتے موسم کی بُجھی بُجھی دھوپ
کُھلے آسمان کی گلیاریاں تکتی ہے
کرنوں کے راستوں پہ کپکپاتی دھند اُگ آئی ہے
دور کوہ ِقاف پہ کوئی پرانی شفق اونگھ رہی ہے
سنہرے خوابوں کی سلوٹوں  پر
 تازہ کہرے کی چادر سے نکل کر
زرد پتوں کی مہک
 آوارہ گردی کررہی ہے
میرے آنگن میں۔۔
میرا آنگن ہجر کی مٹی پہ ٹھہرا ہے
جس میں ان گنت اشکوں کی نہریں دفن ہیں
آہوں کی کئی صدیاں رُکی پڑی ہیں
رات دھیرے دھیرے اُتر رہی ہے
دعاؤں کے موسمی پرندے لوٹ رہے ہیں
نئے موسم کی نئی صبح میں سوجائیں گے
بُجھی بُجھی دھوپ جاگے گی
تو ٹھٹھرتے موسم کے پنکھ
پھر دھوپ سینکنے اتریں گے
میرے آنگن کی زرد مسہری پر۔۔۔۔۔۔۔۔!!
علی شیدؔا
 نجدون نیپورہ اسلام آباد، موبائل نمبر؛9419045087