ربیع الاوّل کا پیغام

  محسن انسانیت صلی اللہ علیہ و سلم نے اللہ تعالیٰ سے وحی کردہ دستورِ زندگی دنیا کے تمام انسانوں کو دیا۔ یہ صرف ایک تحریری دستور کی حد تک نہ تھا بلکہ اللہ کے رسول ؐ نے اس کے ایک حرف ایک حرف ایک ایک لفظ اور ایک ایک حکم پر عمل فرماکر اس خدائی دستورِ حیات کو نافذ کرکے دکھادیا۔ حتی کہ اللہ کی طرف سے یہ اعلان کر دیا گیا کہ جو کوئی اس دستور خداوندی کا عملی نمونہ دیکھنا چاہے وہ مصطفی جانِ رحمت ؐکی سیرت دیکھ لے اور اسی کی روشنی میں اپنی زندگی گزارے۔ ارشاد باری ہے:ترجمہ: بے شک تمہاری رہنمائی کے لئے اللہ کے رسول (کی زندگی) میںبہترین نمونہ (مثال) ہے۔ یہ نمونہ اس کے لئے جو اللہ سے ملنے کی اور قیامت کے آنے کی امید رکھتا ہے اور کثرت سے اللہ کو یاد کرتاہے۔ (القرآن، الاحزاب ۳۲/۲۱)
رسول اللہ ﷺ کی زندگی تمہارے لئے ہر موڑ پررہنمائی ہے اور ہر مرحلہ پر عمل کرنا اور ان کی تعلیمات پر کاربند ہونا اور تمہارے لئے رسول ؐکی زندگی ہی نمونہ عمل ہے۔ اسی لئے اللہ نے اپنی مخلوق پر صرف قرآن نازل کرنے پر اکتفا نہیں کیابلکہ اس کی تبلیغ کرنے کے لئے اپنے محبوب کومنتخب فرمایا تاکہ وہ ارشاد خدا وندی پر خود عمل کرکے دکھائیں، ان پر ایمان لانے والے بھی ان کی زندگی کو نمونہ مان کر عمل پیرا ہوں۔اس وقت دنیا جن ناگفتہ بہ حالات سے گزر رہی ہے اور انسانی آبادی ساری ترقیوں اور سہولتوں کے باوجود انسانیت جن خطرات میں گھری ہوئی ہے، ظلم و زیادتی کی جو گرم بازاری ہے اور انسانی خو ن کو جس پیمانے پرپانی کی طرح بہایا جا رہا ہے، فلسطین ، مصر ،عراق، ایران، پاکستان ، افغانستان وغیرہ وغیرہ میں خون کی ارزانی ہے ،اس صورت حال کا علاج اگر کہیں مل سکتا ہے تو اسی پیغامِ محمدیؐ کے دستور حیات میں ہے۔ 
ربیع الاول اسلامی سال کا تیسرا مہینہ ہے۔ تاریخ انسانی میںیہ وہ مبارک مہینہ ہے جس میں حضرت محمد ؐ اس دنیا میں تشریف لائے۔ آپ ؐکے ذاتی نام احمد اور محمدؐ ہیں۔ صفاتی نام بہت سے ہیں ۔ مشہور نام ۹۹ ہیں جن میں سے چند یہ ہیں۔ مصطفی، مجتبیٰ، حامد ، محمود، قاسم، صادق، امین صلی اللہ علیہ وسلم ۔ آپؐ نے فرمایا، میں سید الاولین والآخرین اور خاتم النبیین ہوں۔ اسی لئے آپؐ کالقب سید المرسلین، افضل الانبیاء اور خاتم الانبیاء ہے۔۵۷۱ء؁، بروز پیر بوقت صبح آپؐ مکہ میں تولد ہوئے۔بھولی بھٹکی ہوئی انسانیت کے لئے فلاح کی راہ دکھانے والا دستورِ زندگی یعنی قرآن مجید لے کر آپؐ ہی تشریف لائے جو ہر قوم و ہر ملک کے لوگوں کے لئے نسخۂ اکسیر ہے ۔ اس دستورِ حیات میں نہ کالے گورے کا فرق رکھا گیا نہ عربی و عجمی کا، نہ امیر و غریب کا نہ بادشاہ و فقیر کا۔ کرئہ زمین پر جہاں کہیں بھی انسانی آبادی پائی جاتی ہے یہ دستورِ حیات سب کی مکمل اور مفصل ومکرم رہنمائی کرتا ہے۔
حضور صلعم نے خطبۂ حجتہ الوداع میں واضح الفاظ میں یہ اعلان فرمایا : اے لوگو! خبر دار ہو جاؤ کہ تمہارا رب ایک ہے اور بے شک تمہارا باپ(حضرت آدم علیہ السلام) ایک ہے۔ کسی عرب کو غیر عرب پر اورکسی غیر عرب کو عرب پر کوئی فضیلت نہیں اور نہ کسی سفید فام کو سیاہ فام پر اور نہ سیاہ فام کو سفید فام پر فضیلت حاصل ہے سوائے تقویٰ کے۔آپؐ نے مزید ارشاد فرمایا:تمام انسان آدم کی اولاد ہیں اور آدم مٹی سے پید اکئے گئے ہیں(احمد بن حنبل، المسندجلد۵، صفحہ۴۱۱، حدیث نمبر۲۳۵۳۶، کنزالعمال، جلد۵ صفحہ۲۹، حدیث نمبر۱۲۳۵۴ )
اس طرح دین اسلام نے تمام قسم کے امتیازات اور ذات پات، رنگ، نسل، جنس ، زبان، حسب و نسب اور مال و دولت پر مبنی تعصبات کو جڑ سے اکھاڑ پھینک دیا اور تاریخ میںپہلی بار تمام انسانوں کو ایک دوسرے کے برابر قرار دیا۔ انسانی مساوات کی اس سے بڑی مثال اور کیا ہوسکتی ہے کہ دنیا کے مختلف ملکوں، نسلوں اور زبانوں سے تعلق رکھنے والے ہر سال مکتہ المکرمہ میں ایک ہی لباس( احرام ) میںملبوس حج ادا کرتے دکھائی دیتے ہیں۔ اسی دستورِ حیات میں عزت و شرف کا معیار امیر و غریب، قوم و قبیلہ کونہیں بلکہ حسن ِکردار ( اخلاق) کو بتایا گیا ہے۔
ارشاد باری تعالیٰ ہے: ترجمہ: اے لوگو! ہم نے تمہیں ایک مرد اور ایک عورت سے پیداکیا اور تمہیں شاخیں اور قبیلے کیا کہ آپس میںپہچان رکھو، بے شک اللہ کے یہاں تم میںزیادہ عزت والا وہ ہے جو تم میں زیادہ پرہیز گار ہے۔(سورہ الحجرات ۴۹/۱۳)
اہم بات یہ ہے کہ پیدائشی لحاظ سے تمام انسان یکساں ہیں۔ انعاماتِ الٰہیہ سے سب انسان نوازے گئے مگر ان کا صحیح اور بر محل استعمال کرکے خدا کا خوف تقویٰ حاصل کرنے والا انجام کار میں سب سے بہتر و افضل ہے۔
حضرت علی مرتضیٰ رضی اللہ عنہ نے فرمایا’’ شکل و صورت کے لحاظ سے سب انسان برابر ہیں، آدم علیہ السلام ان سب کے باپ اور حوّا سب کی ماں ہیں۔‘‘ اسی صنفی برابری کے باعث آدم و حوّا کی سب اولاد آپس میں بھائی بھائی ہیں۔ الگ الگ قومیں اور جداجدا خاندانوں اور قبیلوں کا مصرف یہ ہے کہ انسانوں کو باہمی تعارف میں آسانی ہو اور ملنے جلنے میں سہولت ہو۔ قبیلے اور قوموں کے ذریعہ فخر و مباہات یا کسی کی تحقیر و تذلیل ہرگز نہیں ہونی چاہیے۔ اسلام نے بھید بھاؤ کی خاردار جھاڑیوں کو کاٹ کر پھینک دیا ہے لیکن آج ترقی یافتہ کہلانے کے باوجود سار ی دنیا خاص کر مغربی ممالک میں یہ عصبیت مضبوط سے مضبوط تر ہوتی جارہی ہے۔طاقت ور ممالک غریب اور مفلس علاقوں کو آج تک اسی طرح ظلم و ستم کا نشانہ بناتے ہیں جس طرح بڑی مچھلی چھوٹی کو لقمہ تر سمجھ کر ہڑپ کر جاتی ہے۔اسلام سے پوچھئے تو وہ ببانگ دہل یہی کہے گا کہ نہ صرف امریکہ کی سرزمین پر رہنے والے انسانوں کاخون قابل تعظیم ہے اور امریکیوں کے لئے تمام انسانی حقوق قابل ِقدر ہیں، بالکل اسی طرح فلسطین ، افغانستان، مصر ، لیبیا، افریقی ممالک اور پوری انسانیت کے انسان بھی قابل عزت اور لائق اکرام ہیں چاہے وہ کسی بھی رنگ،نسل ، قومیت، زبان ، مذہب سے تعلق رکھتے ہوں۔
بارہ ربیع الاوّل کو ولادت سعادت پانے والے محسن کائنات صلی اللہ علیہ وسلم کا پیغام ماننا ہی دنیا کی ساری قوموں کے لئے نسخۂ کیمیا ہے، باعث ِترقی ہے ، وجہ امن وقرار ہے ، مسائل کے حل کی شاہ کلید ہے،۔ تمام بھٹکے ہوئے انسانوں کے لئے اسی پیغام ِ حق میں جو سب کے لئے ہے، سب زمانوں کے لئے ہے اور ساری جگہوں کے لئے ہے، راحت وآرام ہے۔ اس میں مرد وعورت، بوڑھے ، جوان ، کنبہ و خاندان، حاکم و محکوم سبھی کے لئے سکون و اطمینان ہے اور اس کا عملی نمونہ بھی خلافت راشدہ ؓ کے زمانے میں پورے ۳۶؍سال تک دنیا دیکھ چکی ہے اور اس کا میٹھا پھل بھی کھا چکی ہے۔ آپ  ؐ کی عطا کردہ تعلیم سے نسلی و قبائلی برتری کے تمام بت پاش پاش ہوگئے ۔ یہ مساواتِ اسلامی زندگی کے ہر گوشے میں نظر آتی ہے۔ بارہ ربیع الاوّل کو دنیا میں آنے والے رسول اللہ ؐ نے انسانوں کے لئے جو دستورِ حیات دیا وہی اسوئہ حسنہ کہلاتا ہے یعنی مومنانہ زندگی گزار نے کے حوالے سے فرائض وحقوق اور ذمہ داریوں اور آسائشوں کانقش ِراہ ۔
آپ  ﷺ کا فرمان ہے:میری بعثت اس لئے ہوئی کہ میں اخلاق کی تعلیم کو مکمل کروں۔رسول اللہ ؐ کے اخلاق عالیہ ، اوصاف جمیلہ اور حلیہ مبارک ، اوصافِ کریمہ اور فضائل ِشریفہ کا ذکر صحابیِ رسول ہند ابی ہالہ رضی اللہ عنہ نے (جو ام المومنین حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا کے فرزند اور حضرت حسن و حسین رضی اللہ عنہما کے ماموں ہیں) آپ کوا وصاف النبی(حضور کے اوصاف بتانے والے) بھی کہا جاتا ہے،بہت جامع اور بلیغ انداز میں کیا ہے۔ ان کے الفاظ یہ ہیں:
’’آپ ؐ طبعاً بدکلامی اور بے حیائی و بے شرمی سے دور تھے اور تکلفاً بھی ایسی کوئی بات آپ سے سرزد نہیں ہوتی تھی۔ بازاروں میں آپ کبھی آواز بلند نہ فرماتے، برائی کا بدلہ برائی سے نہ دیتے، بلکہ عفو درگزر کا معاملہ فرماتے۔ آپ نے کسی پر کبھی دست درازی نہ فرمائی، سوائے اس کے کہ جہاد فی سبیل اللہ کا موقع ہو، کسی خادم یا عورت پر آپ نے کبھی ہاتھ نہیں اٹھایا۔ ہند ابی ہالہؓ فرماتے ہیں : میں نے آپ کو کسی ظلم و زیادتی کا انتقام لیتے ہوئے بھی نہ دیکھا جب تک کہ اللہ تعالیٰ کی مقرر کردہ حدود کی خلاف ورزی نہ ہو اور حدود اللہ کی حرمت و ناموس پر آنچ نہ آئے۔ ہاں، اگراللہ تعالیٰ کے کسی حکم کو پامال کیا جاتااور اس کے ناموس پر حرف آتا تو آپؐ ہر شخص سے زیادہ غصہ فرماتے۔ دو چیزیں سامنے ہوتیںتو ہمیشہ آسان چیز کا انتخاب فرماتے۔ جب اپنے دولت خانہ پر تشریف لاتے تو اپنے کپڑوں کو صاف فرماتے، بکری کا دودھ دوہتے اور اپنی ضرورتیں خود انجام دیتے، اپنی زبان مبارک محفوظ رکھتے، صرف اور صرف اسی چیز کے لئے کھولتے جس سے آپ کو کچھ سروکار ہوتا۔ لوگوں کی دلداری فرماتے اور ان کو متنفر نہ کرتے۔
آپؐ ہر وقت آخرت کی فکر میں اور امورِ آخرت کی سوچ میں رہتے، اس کا ایک تسلسل قائم تھا کہ کسی وقت آپ کو چین نہیں ہوتا تھا۔ غلاموں سے بھی محبت کا سلوک فرماتے ۔ آپؐ مدینہ منورہ کے بازار میں تشریف لے گئے ۔ وہاں ملاحظہ فرمایا کہ ایک غلام یہ کہہ رہا ہے کہ جو مجھے خرید ے وہ مجھے حضورؐ کے پیچھے پنج گانہ نماز سے نہ روکے۔ اسے ایک شخص نے خریدلیا۔ کچھ دنوں کے بعد وہ غلام سخت بیمار ہوگیا ۔ اللہ کے رسول ؐ اس کی تیمار داری کو تشریف لے گئے پھر اس کی وفات ہوگئی تو حضورؐ اس کی تدفن میں شریک ہوئے ۔ اس پر بہت سے لوگوں نے حیرانی کا اظہار کیا کہ غلام اور اس پر اتنا انعام!!! آپ ؐکے اخلاقِ کریمانہ پر یہ آیت نازل ہوئی۔ترجمہ: تم میں زیادہ عزت والا وہ ہے جو تم میں متقی پرہیزگارہو ، نسب و حسب کی کوئی حقیقت نہیں۔۴۹/۱۲۔ہند بن ابی ہالہ ؓ فرماتے ہیں ،آپ ؐ اکثر طویل سکوت اختیار فرماتے ، بلا ضرورت کلام نہ فرماتے، آپ کی گفتگو اور بیان بہت صاف ، واضح اور دو ٹوک ہوتا، نہ اس میں غیر ضروری طوالت ہوتی نہ زیادہ اختصار۔ آپ ؐنرم مزاج و نرم گفتار تھے، درشت اور بے مروت نہ تھے۔ آپؐ کسی کی اہانت نہ کرتے اور نہ اپنے لئے اہانت پسند کرتے تھے۔ نعمت کی بڑی قدر کرتے اور اس کو بہت زیادہ جانتے خواہ کتنی ہی قلیل ہو۔ نعمت کی برائی نہ فرماتے۔ دنیا اور دنیا سے متعلق جو چیز ہوتی اس پر آپ کوکبھی غصہ نہ آتا لیکن جب رب العالمین کے کسی حق کو پامال کیا جاتا تو اس وقت آپ کے جلال کے سامنے کوئی چیز نہ ٹھہر سکتی تھی، یہاں تک کہ آپ ؐاس کا بدلہ لے لیتے۔ آپ ؐکو اپنی ذات کے لئے غصہ نہ آتا نہ ہی اپنی ذات کے لئے انتقام لیتے۔جب اشارہ فرماتے تو پورے ہاتھ کے ساتھ اشارہ فرماتے۔ غصہ اور ناگواری کی بات ہوتی تو روئے انور اس طرف سے پھیر لیتے اور اعراض فرما لیتے۔ خوش ہوتے تو نظریں جھکا لیتے۔ آپؐ کا ہنسنا زیادہ تر تبسم تھا جس سے صرف آپؐ کے دندانِ مبارک ،جو بارش کے اولوں کی طرح پاک شفاف تھے ، ظاہر ہوتے۔
حضرت علی  رضی اللہ عنہ  فرماتے ہیں : آپ ؐہمہ وقت کشادہ رو اور انبساط و بشاشت کے ساتھ رہتے تھے۔ بہت نرم اخلاق، نرم پہلو تھے۔ نہ سخت طبیعت کے تھے نہ سخت بات کہنے کے عادی ، نہ چلاکر بولنے والے نہ کسی کو عیب لگانے والے، نہ تنگ دل نہ بخیل۔ تین باتوں سے آپ نے اپنے کو بالکل بچا کر رکھا ۔ ایک جھگڑا، دوسرے تکبر اور تیسرے غیر ضروری اور لا یعنی کام۔ لوگوں کو بھی تین باتوں سے آپؐ نے بچارکھا تھا۔ نہ کسی کی برائی کرتے نہ اس کو عیب لگاتے تھے اور نہ اس کی کمزوریوں اور پوشیدہ باتوں کے پیچھے پڑتے تھے۔ صرف وہ کلام فرماتے تھے جس پر ثواب کی امید ہوتی تھی۔ جب گفتگو فرماتے تو شرکائے مجلس ادب سے اس طرح سر جھکا لیتے تھے کہ معلوم ہوتا تھا کہ ان سب کے سروں پر چڑیا ں بیٹھی ہوئی ہیں۔اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی ؐ کو لباس و جمال و کمال سے آراستہ فرمایا تھااور آپؐ کو محبت و دلکشی اور رعب و ہیبت کا حسین و جمیل پیکر بنایا تھا۔ہند بن ابی ہالہ رضی اللہ عنہ  بیان کرتے ہیں: آپ ؐخود دار اور باوقار اور شان و شوکت کے حامل تھے اور دوسروں کی نگاہ میں بھی نہایت پر شکوہ ، آپ کا روئے انور چودھویں رات کے چاند کی طرح دمکتا تھا۔ 
براء بن عازب رضی اللہ عنہ بیان فرماتے ہیں:رسول اللہؐ میانہ قد تھے۔ میں نے آپؐ کو ایک مرتبہ سرخ قبا میں دیکھا اس سے اچھی کوئی چیز میں نے کبھی نہیں دیکھی۔حضرت ابو ہریرہ  رضی اللہ عنہ بیان فرماتے ہیں کہ آپؐ میانہ قد تھے ،طول کی طرف کسی قدر مائل، رنگ نہایت گورا،ریش مبارک کے بال سیاہ، دہانہ نہایت متناسب اور حسین، آنکھوں کی پلکیںدراز ، چوڑے شانے۔ آخر میں کہتے ہیں کہ میں نے آپؐ جیسا آپ ؐکے پہلے یا آپؐ کے بعد کبھی نہیں دیکھا۔ حضرت انس  رضی اللہ عنہ  راوی ہیں کہ میں نے حریر و دیباج کو بھی آپؐ کے دست مبارک سے زیادہ نرم نہیں پایا۔ نہ آپؐ کی خوشبو سے بڑھ کر کوئی خوشبو سونگھی۔ اللہ کے رسول ﷺ کے اخلاق و شمائل کا یہ ایک مختصر خاکہ ہے۔ آپ کی سیرت لکھنے کے لئے بڑے سے بڑے دفتر بھی کم پڑ جائیں گے۔
طَلْـعَ الْـبَدْرُ عَلَیْـَنا مِنْ شَنِیَّاتِ الْوِدَاعٖ
وَجَب الشُّکْرُ عَلَیْنَا مَا دَعَا لِلّٰہِ دَاعٖ
(وہ مثل ماہِ کامل ہم میں آئے، شنیات الوداع کے راستے سے۔اب ان کا شکر واجب ہم پہ ٹھہرے کہ داعی حق کی دعوت دینے آئے)
ضرورت اس بات کی ہے کہ تمام اہل ِ ایمان آپؐ کی سیرت مقدس ،آپ ؐکی ایمان و محبت بھری تعلیم پر عمل پیرا ہو کر نہ صرف اپنی دنیا و آخرت سنواریں بلکہ ساری دنیا کو بھی اس پیغام سے کماحقہ روشناس کرائیں۔ اسلام کی تبلیغ میں جہاں قرآن پاک ، کلامِ الٰہی و احادیث نبوی ؐکا کردار ہے، وہیں سیرت نبوی آپ ؐکی عملی زندگی ، صحابہ کرامؓ ، اولیاء اللہؒ کی زندگیاں اور ان کا اخلاق و کردار بھی اسلام کی تبلیغ کا ذریعہ بنا۔ ہم سب کو بھی پہلے اپنی زندگی میں اسلام لاکر پھر دنیا کی بھلائی کے لئے اسلام کاسفیر بننا چاہیے اور عملاً دوسروں تک اسلام کا پیغامِ امن پہنچانے کی پوری کوشش کرنی ہوگی، تبھی توہم بہترین امت کہلانے کے حقدار ہوں گے، تبھی تو ہم ساری دنیا سے ہر نوع اور ہر شکل میں دہشت گردی، انتہا پسندی اور ظلم و جبر کا خاتمہ کرنے کی پوزیشن میں آئیں گے۔المختصر ہم سب ربیع الاول کے پیغامِ محمدی ؐکو اپنے سینے سے لگائیں۔ ربیع الاول کے دوران اپنا محاسبہ کریں ، اپنے اعمال کا جائزہ لیں کہ ہمارے اندر تعلیماتِ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کا عملی حصہ کتنا پایا جاتا ہے۔ اللہ ہم تمام مسلمانوں کو عمل کی توفیق وہمت عطا فرمائے۔ آمین
……………………..
  E-mail : [email protected]