حَسد ایک بڑی بیماری

آئیے اس موضوع کا آغاز نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی اس حدیث سے کرتے ہیں انھوں نے فرمایا: ’’اپنے سے نیچے والوں کو دیکھو لیکن اپنے سے اوپر والوں کی طرف مت دیکھو ،ایسا نہ ہو کہ تم اللہ تعالیٰ کی طرف سے آپ پر احسانات کو حقیر سمجھنا‘‘۔ (صحیح مسلم)اس کا مطلب ہے ’’نیچے‘‘ اور ’’اوپر‘‘ کو دیکھنے سے مراد دنیاوی دولتیں ہیں جیسے کہ دولت اور رُتبہ۔ یہ مابعد جدید معاشرہ مادیت کو برقرار رکھتا ہے، حسد کی حوصلہ افزائی کرتا ہے اور دولت اور حیثیت کو زندگی کی آخری اشیاء کے طور پر توجہ دیتا ہے۔ سوشل میڈیا کے اثر و رسوخ میں پروان چڑھنا، – ایسے پلیٹ فارمز جو بدقسمتی سے صارفین کو اپنی زندگیوں کا دوسروں سے موازنہ کرنے، خوش مزاج طرز زندگی کی طرف متوجہ ہونے اور زیادہ جوش کے ساتھ مادی اہداف کے حصول کی ترغیب دیتے ہیں۔
مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ جب مادیت پسندانہ اہداف کسی کی زندگی کے مرکزی عوامل بنتے رہتے ہیں تو افسردگی کی سطح، تندرستی اور یہاں تک کہ جسمانی صحت بھی بری طرح متاثر ہوتی ہے۔ ٹِم کیسر، ایک امریکی ماہرِ نفسیات بجا طور پر کہتے ہیں: ’’ہماری پہلی تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ جب نوجوان یہ رپورٹ کرتے ہیں کہ مالی کامیابی ان کی خواہشات میں نسبتاً مرکزی حیثیت رکھتی ہے، تو کم صحت، زیادہ پریشانی اور زندگی کو ایڈجسٹ کرنے میں دشواری بھی واضح ہوتی ہے۔ اگرچہ ہم ان نتائج سے اس بات کا یقین نہیں کر سکتے کہ آیا مادیت پسند اقدار ناخوشی کا باعث بنتی ہیں، یا دیگر عوامل کام کر رہے ہیں، لیکن نتائج ایک حیران کن نتیجے کی طرف اشارہ کرتے ہیں: امریکی خواب کا ایک تاریک پہلو ہے، اور دولت اور املاک کا حصول درحقیقت کمزور ہو سکتا ہے۔ ہماری خیریت‘‘۔ (مادیت کی اعلی قیمت)
’’جو بالغ افراد پیسے، شبیہہ اور شہرت پر توجہ مرکوز کرتے تھے، ان اقدار سے کم فکر مند افراد کے مقابلے میں کم جیورنبل، اور زیادہ افسردگی کی اطلاع دیتے ہیں۔ مزید کیا ہے، انہوں نے جسمانی علامات کے نمایاں طور پر زیادہ تجربات کی بھی اطلاع دی۔ یعنی جن لوگوں کا خیال تھا کہ مال، مقبولیت اور اچھی شکل کے لیے کوشش کرنا ضروری ہے، انہوں نے بھی ایسے اہداف پر کم توجہ دینے والے افراد کے مقابلے میں زیادہ سر درد، کمر میں درد، پٹھوں میں خراش اور گلے کی سوزش کی اطلاع دی۔ یہ واقعی ہمارے لیے مادیت پسند اقدار کے وسیع منفی ارتباط کے اولین اشارے میں سے ایک تھا ، نہ صرف لوگوں کی نفسیاتی صحت خراب ہوتی ہے جب وہ پیسے پر توجہ مرکوز کرتے ہیں بلکہ ان کی جسمانی صحت بھی خراب ہوتی ہے‘‘۔
آسٹریلین نیشنل یونیورسٹی، کینبرا کے نیشنل سینٹر فار ایپیڈیمولوجی اینڈ پاپولیشن ہیلتھ کے فیلو رچرڈ ایکرزلی نے اس صورت حال کو بیان کرتے ہوئے کہا:
حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے خاص طور پر دولت پر توجہ نہ دینے کی تنبیہ کی تھی اور دوسروں کی کامیابی، بلکہ ہمیں یاد دلایا کہ جو کچھ ہمارے پاس پہلے سے موجود ہے ان کے بارے میں سوچ کر شکر گزار ہوں جن کے پاس وہ نعمتیں نہیں ہیں۔ اگر اس نصیحت پر عمل نہ کیا گیا تو انسانیت کے تاریک پہلو کھل کر سامنے آ جائیں گے۔ حسد – انسانوں کو ’’حسد‘‘سے آگے نکلنے اور ایک ایسے مرحلے میں داخل ہونے کی طرف لے جاتا ہے جہاں وہ خوشی، یا خود اطمینان محسوس کرتے ہیں جو کسی دوسرے کی پریشانیوں، ناکامیوں، یا ذلت کو سیکھنے یا اس کا مشاہدہ کرنے سے حاصل ہوتا ہے۔ معاشرہ تشکیل پا چکا ہے، اپنے خیالات کا خود جائزہ لے کر اور پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشاد پر عمل کر کے ہم اندرونی شیطان کو روک سکتے ہیں۔ مشہور شخصیت کے کلچر میں غرق ہونا، مادی دولت کے حصول کے لیے آنکھیں بند کر کے محنت کرنا اور سوشل میڈیا پر دوسروں کی زندگیوں سے اپنا موازنہ کرنا صرف ذہنی، جسمانی اور روحانی پریشانی لاتا ہے۔ جو کچھ ہمارے پاس ہے اس کا شکر ادا نہ کرنا اور پھر دوسروں سے حسد کرنا بھی نقصان دہ ہے۔ سورہ ابراہیم آیت نمبر 8 میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ’’اگر تم شکر گزار بنو گے تو میں ضرور تم پر اور زیادہ احسان کروں گا۔ لیکن اگر تم ناشکری کرتے ہو تو جان لو کہ میری سزا واقعی سخت ہے‘‘۔
ایک ایسے معاشرے میں جو مادیت اور دنیاوی خواہشات کے لیے کھاد کا کام کرتا ہے، بحیثیت مسلمان، ضروری ہے کہ ہم ایک قدم پیچھے ہٹیں، ہوشیار رہیں اور اس پر عمل کریں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی نصیحت ان لوگوں کی طرف دیکھ کر جو ہماری دولت اور آسائشوں سے لطف اندوز نہیں ہوتے۔ اپنی زندگیوں کا موازنہ کرنا اور دوسروں کے آرام، حیثیت یا دولت کو دیکھنا انسانیت کو افسردگی، لافانی اور ناشکری کی تاریک گلی میں لے جائے گا۔ اس طرح حسد نہ صرف شکار کو تباہ کرتا ہے بلکہ حملہ آور کو بھی زیادہ نقصان پہنچاتا ہے۔ بحیثیت مسلمان ہمیں اس خطرناک بیماری حسد سے دور رکھنے کے لیے اللہ سے مدد مانگنی چاہیے۔ حسد سے بچنے کے لیے ہمیں قرآن مجید کی سورہ فلق کی تلاوت کرنی چاہیے۔
(| طالب علم قانون یونیورسٹی آف کشمیر)