حد بندی کمیشن قائم ہوچکا | اسمبلی انتخابات کی تیاری جاری | دفعہ 370کی منسوخی کے بعد ترقی نظر آنے لگی :مودی

نئی دہلی// وزیراعظم نریندر مودی نے جموںکشمیر میں جمہوریت کے قیام پر اپنے عزم کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ مرکز کے زیرانتظام خطے میں انتخابی حلقوں کی حد بندی کا کام اور مستقبل میں اسمبلی انتخابات کی تیاری شروع ہوچکی ہے ۔ مودی نے 75ویں یوم آزادی کے موقع پر لال قلعہ کی فصیل سے خطا ب کرتے ہوئے کہا کہ جموںکشمیر میں تمام حلقوں میں متوازن ترقی کا نتیجہ نظر آنے لگا ہے ۔انہوں نے کہاکہ تمام کی صلاحیت کو مناسب موقع فراہم کرنا، یہی جمہوریت کی اصل روح ہے ۔ جموں ہو یا کشمیر، ترقی کا توازن اب زمین پر نظر آرہا ہے ۔ جموں کشمیر میں انتخابی حلقوں کی حدبندی کیلئے کمیشن قائم ہوچکا ہے او رمستقبل میں اسمبلی انتخابات کے لئے بھی تیاری چل رہی ہے ۔ مودی نے کہاکہ لداخ بھی ترقی کی اپنے لامحدود امکانات کی طرف آگے بڑھ چکا ہے ۔ ایک طرف وہاں جدید انفراسٹرکچر کی تعمیر ہورہی ہے تو وہیں دوسری طرف ‘سندھو سنٹرل یونیورسٹی’ لداخ کو اعلی تعلیم کا مرکز بھی بنانے والی ہے ۔ وزیراعظم نے علیحدگی پسندی سے متاثر ہونے والے شمال مشرق خطے کو سفر ترقی کی بنیاد قرار دیا اور کہا کہ دہشت گردی سے نبرد آزما جموں و کشمیر میں بھی ترقی نظر آ رہی ہے ۔ مودی نے کہا کہ شمال مشرق اور پورا ہمالیہ خطہ سفر ترقی کی بنیاد بنے گا۔ انہوں نے جموں و کشمیر کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ترقی نظر آ رہی ہے ۔ ڈی لیمیٹیشن کمیشن کی تشکیل ہو گئی ہے اور اسمبلی انتخابات کی تیاری کی جا رہی ہے ۔ لداخ میں بنیادی ڈھانچوں کی تعمیر کی جا رہی ہے اور سندھو سینٹرل یونیورسٹی اعلیٰ تعلیم کا مرکز ہوگا۔ وزیراعظم نے کہا کہ لداخ جدید بنیادی ڈھانچے کی تعمیر کے ساتھ ساتھ اعلیٰ تعلیم کے مرکز کے طور پر بھی ترقی پا رہا ہے ۔ انہوں نے کہا’’آج میں ایک خوشی ملک کے باشندوں سے بانٹ رہا ہوں، مجھے لاکھوں بیٹیوں کے پیغام ملتے تھے کہ وہ بھی آرمی اسکولوں میں پڑھنا چاہتی ہیں، ان کے لیے بھی فوجی اسکولوں کے دروازے کھولے جا ئیں، آج ہندوستان کی بیٹیاں، اپنا اسپیس لینے کو بے چین ہیں، دو، اڈھائی سال پہلے میزورم کے آرمی اسکول میں پہلی بار بیٹیوں کو داخلہ دینے کا تجربہ کیا گیا تھا۔ اب حکومت نے طے کیا ہے کہ ملک کے تمام آرمی اسکول کو ملک کی بیٹیوں کے لیے بھی کھول دیا جائے گا’۔