اسپورٹس کمپنی نے فرانس میں حجاب کی فروخت بند کردی

پیرس// اسپورٹس ملبوسات تیار کرنے والی کمپنی ڈکاتھ لان نے فرانس میں سیاستدانوں کی جانب سے مسلم خواتین کے لباس اور خصوصی طور ان کے حجاب پر تنقید کیے جانے کے بعد حجاب کی فروخت بند کردی۔ ڈکاتھ لان اسپورٹس کی بہترین ملبوسات تیار کرنے والی کمپنیوں میں شمار ہوتی ہے، یہ کمپنی خواتین اور خصوصی طور پر مسلم خواتین کے لیے بہترین ڈیزائن کے لباس تیار کرنے میں شہرت رکھتی ہیں۔ ڈکاتھ لان کے سب سے زیادہ فروخت ہونے والے ملبوسات میں خواتین کا حجاب بھی ہے جو مختلف کھیل کھیلنے والی خواتین پہنتی ہیں۔ ڈکاتھ لان کا حجاب نہ صرف اسپورٹس خواتین بلکہ عام خواتین اور خصوصی طور پر نوجوان عرب خواتین شوق سے پہنتی ہیں اور یہ کمپنی مراکش سمیت دیگر مشرق وسطیٰ ممالک میں حجاب فروخت کرنے والی بڑی کمپنی بھی ہے۔ تاہم اس کمپنی نے فرانس میں حجاب کی فروخت کو بند کردیا۔ خبر رساں ادارے کے مطابق ڈکاتھ لان نے فرانس میں مسلم خواتین کے لباس اور خصوصی طور پر ان کے حجاب پر کیے گئے اعتراضات کے بعد حجاب کی فروخت بند کی۔ کمپنی نے فرانس میں حجاب کی فروخت کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ کمپنی نے فرانس میں فوری طور پر حجاب کی فروخت کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سے قبل کمپنی نے کہا تھا کہ کمپنی کا مقصد دنیا بھر کی خواتین کے لیے بہترین لباس تیار کرنا ہے اور وہ اپنے مقصد سے پیچھے نہیں ہٹے گی۔ تاہم فرانس کے سیاستدانوں کی جانب سے حالیہ چند ماہ کے دوران مسلم خواتین کے لباس کو تنقید کا نشانہ بنائے جانے کے بعد کمپنی نے دیگر ملبوسات کے بجائے صرف حجاب کی فروخت کو بند کردیا۔ فرانس کے سیاستدان مسلم خواتین کے مکمل لباس اور خصوصی طور پر حجاب میں ملبوس خواتین کو اپنے لیے خطرہ قرار دے چکے ہیں۔ فرانسیسی سیاستدانوں کے مطابق لباس سے اپنے جسم کو مکمل طور پر ڈھانپنے اور حجاب کرنے والی خواتین شدت پسند ہوسکتی ہیں۔ فرانسیسی سیاستدانوں نے عوامی مقامات پر ایسے لباس میں ملبوس خواتین پر پابندی کا مطالبہ بھی کیا۔ فرانسیسی سیاستدانوں اور تنگ نظر افراد کی جانب سے مسلمان خواتین کے لباس اور ان کے حجاب پر تنقید کیے جانے کے بعد کمپنی نے فوری طور پر فرانس میں حجاب کی فروخت بند کردی۔ تاہم کمپنی دیگر ممالک میں حجاب کی فروخت کو جاری رکھے گی۔