سوشل میڈیا پر قابلِ اعتراض مواد شیئر کرنے والوں کو بخشا نہیں جائے گا: ڈی جی پی

File Image

عظمیٰ ویب ڈیسک

جموں// جموں و کشمیر پولیس کے ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی پی) آر آر سوین نے جمعرات کو کہا کہ سوشل میڈیا پر فرقہ وارانہ مواد ، قابلِ اعتراض پوسٹس، دہشت گردی اور علیحدگی پسندی کو فروغ دینے والی ویڈیوز، مواد اور پیغامات شیئر کرنے والوں کو کسی بھی صورت معاف نہیں کیا جائے اور قانون کے مطابق سخت کاروائی کی جائے گی۔
ڈی جی پی نے مزید کہا کہ جموں و کشمیر پولیس کا فرض ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائے کہ کوئی بھی امن کو خراب کرنے اور تشدد کو ہوا دینے کے لیے پیغمبر اسلام (ص) یا کسی بھی مذہبی گروہ یا برادری کے تئیں کسی قسم کی بے حرمتی کرنے کی کوشش نہ کرے۔
جموں میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے ڈی جی پی سوین نے کہا کہ انہوں نے این آئی ٹی کے طالب علم کی جانب سے سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی توہین آمیز ویڈیو کے پس منظر میں سینئر پولیس افسران کے ساتھ کشمیر کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا ہے۔
انہوں نے کہا ، “کسی بھی قسم کی قابل اعتراض ویڈیو، پیغامات، متن یا پوسٹس جو امن میں خلل ڈالنے، فرقہ وارانہ تشدد کو ہوا دینے، تشدد کو بھڑکانے، سڑکوں پر مظاہروں، دہشت گردی کو فروغ دینے اور علیحدگی پسندی کو فروغ دینے والوں کے خلاف قانون کے مطابق سختی سے نمٹا جائے گا۔
اُنہوں نے کہا،” سماج دشمن عناصر، امن دشمن عناصر اور مفاد پرست عناصر مناسب تحقیقات کے بعد کچھ بیک ڈور ایجنڈے پر کام کر رہے ہیں”۔
انہوں نے کہا کہ اگر کسی کو ایسے پیغامات یا ویڈیوز موصول ہوں جن میں امن کو خراب کرنے کا خدشہ ہو تو وہ فوری طور پر متعلقہ تھانے سے رابطہ کرے۔
ڈی جی پی نے کہا، ”اس شخص کو ایسی ویڈیو یا متن کی گردش کا حصہ نہیں بننا چاہیے جو فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو ہوا دے اور امن میں خلل ڈالے“۔
اس سوال کے جواب میں کہ آیا سیاسی جماعتوں کے خلاف کوئی کارروائی ہوگی جو مبینہ طور پر بدامنی پھیلانا چاہتی ہیں، ڈی جی پی نے کہا، “جموں و کشمیر پولیس قانون کی محافظ ہے۔ قانون کے پہیے اس لحاظ سے چلیں گے کہ اگر کوئی خاص کارروائی جان بوجھ کر بدنیتی کے ساتھ کی گئی ہے جس سے جانی نقصان، حملے، املاک کا نقصان ہوتا ہے تو وہ (سیاسی رہنما) ذمہ دار ہوں گے”۔
ڈی جی پی نے کہا کہ پولیس پیغمبر اسلام (ص) کا احترام کرتی ہے اور اس کا فرض ہے کہ کسی کو بھی پیغمبر اسلام (ص) کی توہین کی اجازت نہ دی جائے۔ کسی بھی عنصر کو فرقہ وارانہ ہم آہنگی میں خلل ڈالنے کی اجازت نہیں دی جائے گی جس کے لیے کشمیر صدیوں سے ایک ساتھ جانا جاتا ہے۔ کسی کو بھی کسی مذہبی برادری کو نقصان پہنچانے یا ان کی بے عزتی کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی“۔ اس سوال کا جواب دیتے ہوئے کہ آیا این آئی ٹی کے طالب علم کو کارروائی کا سامنا کرنا پڑے گا، ڈی جی پی نے کہا، “قانون اپنی مرضی کے مطابق کارروائی کرے گا”۔