کیرو ہائیڈرو پاور کرپشن کیس: سی بی آئی کے ستیہ پال ملک کے گھر سمیت 29 مقامات پر چھاپے

عظمیٰ ویب ڈیسک

نئی دہلی// سی بی آئی نے 2,200 کروڑ روپے کے کیرو ہائیڈرو پاور پروجیکٹ میں مبینہ بدعنوانی کے سلسلے میں جمعرات کو جموں و کشمیر کے سابق گورنر ستیہ پال ملک کے احاطے اور 29 دیگر مقامات پر چھاپے مارے۔
وفاقی ایجنسی نے جمعرات کی صبح اپنی کارروائی شروع کی، تقریباً 100 افسران جموں و کشمیر، پنجاب، ہریانہ، اتر پردیش، بہار اور راجستھان کے علاوہ دہلی اور ممبئی کے متعدد شہروں میں 30 مقامات پر چھاپے مارے گئے۔
انہوں نے مزید کہا کہ گروگرام اور باغپت کے علاوہ آر کے پورم، دوارکا اور دہلی کے ایشین گیمز ولیج میں ملک سے منسلک احاطوں کی تلاشی لی گئی۔
عہدیداروں نے بتایا کہ تلاشیوں میں ملک کے مبینہ ساتھیوں، چناب ویلی پاور پروجیکٹس پرائیویٹ لمیٹڈ کے سابق چیئرمین نوین کمار چودھری اور پٹیل انجینئرنگ لمیٹڈ کے عہدیداروں کے احاطے کا بھی احاطہ کیا گیا۔
ستیہ پال ملک نے ایکس پر ایک پوسٹ میں کہا، “میں پچھلے 3 سے 4 دنوں سے بیمار ہوں اور ہسپتال میں داخل ہوں۔ اس کے باوجود میرے گھر پر ڈکٹیٹر سرکاری اداروں کے ذریعے چھاپے مار رہا ہے۔ میرے ڈرائیور اور میرے اسسٹنٹ پر بھی چھاپے مارے جا رہے ہیں اور غیر ضروری طور پر ہراساں کیا جا رہا ہے۔ میں ایک کسان کا بیٹا ہوں، میں ان چھاپوں سے نہیں ڈروں گا۔ میں کسانوں کے ساتھ ہوں”۔
حکام نے بتایا کہ یہ کیس کیرو ہائیڈرو الیکٹرک پاور پروجیکٹ (ایچ ای پی) سے متعلق 2,200 کروڑ روپے کے سول ورک کنٹریکٹ دینے میں مبینہ بدعنوانی سے متعلق ہے۔
ملک، جو 23 اگست 2018 سے 30 اکتوبر 2019 تک جموں و کشمیر کے گورنر تھے، نے دعویٰ کیا تھا کہ انہیں پروجیکٹ سے متعلق ایک فائل سمیت دو فائلوں کو کلیئر کرنے کے لیے 300 کروڑ روپے کی رشوت کی پیشکش کی گئی تھی۔
سنٹرل بیورو آف انویسٹی گیشن (سی بی آئی) نے کہا کہ یہ کیس 2019 میں ایک نجی کمپنی کو کیرو ہائیڈرو الیکٹرک پاور پروجیکٹ (ایچ ای پی) کے سول ورکس کے تقریباً 2,200 کروڑ روپے کا ٹھیکہ دینے میں بدعنوانی کے الزامات پر درج کیا گیا تھا۔
ایجنسی نے نوین کمار چودھری اور چناب ویلی پاور پروجیکٹس پرائیویٹ لمیٹڈ کے دیگر سابق عہدیداروں – ایم ایس بابو، ایم کے متل اور ارون کمار مشرا – اور پٹیل انجینئرنگ لمیٹڈ کے خلاف مقدمہ درج کیا ہے۔
حکام نے مزید بتایا، “اگرچہ CVPPPL (چناب ویلی پاور پراجیکٹس (P) لمیٹڈ) کے 47ویں بورڈ میٹنگ میں ای ٹینڈرنگ کے ذریعے دوبارہ ٹینڈر کرنے کا فیصلہ کیا گیا تھا جس میں جاری ٹینڈرنگ کے عمل کی منسوخی کے بعد ریورس آکشن کے ساتھ اس پر عمل درآمد نہیں کیا گیا تھا۔ 48ویں بورڈ میٹنگ میں لیے گئے فیصلے کے مطابق) اور ٹینڈر آخر کار پٹیل انجینئرنگ لمیٹڈ کو دیا گیا“۔
ایجنسی نے اس کیس کے سلسلے میں جنوری میں پانچ لوگوں کے گھر کی تلاشی لی تھی۔