جموں و کشمیر میں 2018 سے منتخب حکومت کے قیام سے انکار کیا جا رہا ہے: عمر عبداللہ

عظمیٰ ویب ڈیسک

نئی دہلی// جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے ہفتہ کو کہا کہ جموں و کشمیر میں سال 2018 سے منتخب حکومت کے قیام سے انکار کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست نے 2014 کے بعد سے اسمبلی انتخابات نہیں دیکھے ہیں، 1996 میں اسمبلی کا الیکشن ہوا، جب حالات بہت خراب تھے، تو آپ 2024 میں بھی کر سکتے ہیں۔
بی جے پی پر طنز کرتے ہوئے، عبداللہ نے کہا ، “بی جے پی کو الیکشن جیتنے کے لیے جو کچھ کرنا پڑتا تھا، وہ کر چکی ہے… اس کے باوجود، آپ جموں و کشمیر میں اسمبلی انتخابات نہیں کر رہے ہیں”۔
عبداللہ نے کہا کہ انہیں امید نہیں تھی کہ دفعہ 370 ختم ہو جائے گا جب تک یہ حقیقت میں نہیں ہو جاتا۔
اے بی پی نیٹ ورکس کے آئیڈیا آف انڈیا سمٹ سے خطاب کرتے ہوئے عبداللہ نے کہا، ”گورنر نے ہمیں یقین دلایا تھا کہ جموں و کشمیر کی آئینی حیثیت کو ختم کرنے کا کوئی منصوبہ نہیں ہے۔ اس لیے اس کی توقع نہیں تھی“۔
انہوں نے زیر حراست اپنے ذاتی تجربے پر بھی بات کی۔
عمر نے کہا، “میرے گھر کو غیر قانونی طور پر باہر سے بند کر دیا گیا تھا۔ انہوں نے مجھے یہ کہہ کر حراست میں لیا کہ میں امن کے لیے خطرہ ہوں۔ چھ ماہ بعد، انہوں نے مجھے پبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت حراست میں لے لیا، کیونکہ میں علیحدگی پسندوں کی مخالفت کرتا تھا۔ عبداللہ نے کہا کہ مجھے بھارت میں انتخابات کو کامیاب بنانے کیلئے پاکستان کے انتخابی بائیکاٹ کی کال کے خلاف سرگرم مہم چلا کر حراست میں لیا گیا تھا”۔
عبداللہ نے اعتراف کیا کہ جموں و کشمیر اب نسبتاً پرسکون ہے۔
اُنہوں نے کہا، “یہ کوئی راز نہیں ہے کہ سڑکوں پر احتجاج نہیں ہوتا ہے… یہ خیال کہ دفعہ 370 جموں و کشمیر کے مسائل کا سبب تھا، درست نہیں ہے۔ جب اسے منسوخ کیا گیا تو کہا گیا کہ دہشت گردی، علیحدگی پسندی، ترقی کی بظاہر کمی دفعہ 370 کی وجہ سے ہے۔ لیکن ہم منسوخی کی 5 ویں سالگرہ تک پہنچ رہے ہیں۔ علیحدگی پسند اب بھی موجود ہیں”۔
ان کا مزید کہنا تھا کہ تقریباً ہر ہفتے ایک دہشت گردانہ حملے کی اطلاع ملتی ہے۔ وہ علاقے جو دہشت گردی سے پاک تھے، جیسے راجوری اور پونچھ، اب عسکریت پسندوں کے حملے دیکھ رہے ہیں۔
عبداللہ نے کہا، ”جب میں وزیر اعلیٰ تھا تو اقلیتوں پر کوئی حملہ نہیں ہوا۔ آج، یہ ایک باقاعدہ واقعہ ہے، کشمیری پنڈت جو سرکاری ملازمتوں اور دیگر پیکجوں کے ساتھ کشمیر میں دوبارہ آباد ہوئے تھے اب چیخ رہے ہیں کہ اُنہیں چھوڑنے اور جموں واپس جانے کی اجازت دی جائے“۔