۔500 میگاواٹ تھرمل پاور معاہدہ | عمل آوری کے بعد بجلی بلوں میں اضافہ متوقع

عظمیٰ ویب ڈیسک

سرینگر// حالیہ 500 میگاواٹ کے تھرمل پاور پرچیز معاہدے کی عمل آوری کے بعد پن بجلی کے موجودہ ٹیرف کے مقابلے میں بجلی کرائے میں ایک روپیہ فی یونٹ اضافہ ہونے کا امکان ہے۔
پرنسپل سکریٹری پاور ڈیولپڈ ڈپارٹمنٹ (پی ڈی ڈی) ایچ راجیش پرساد نے کہا کہ نئے خریدے گئے 500 میگاواٹ کو چینلائز کرنے کا عمل جلد ہی موصول ہو جائے گا۔ اُنہوں نے کہا،”ہم ہائیڈرو پاور پر زیادہ انحصار کرتے ہیں۔ تاہم، ہم نے پہلے ہی 1600 میگاواٹ کا شمسی توانائی کی خریداری کا معاہدہ کیا ہے جو پن بجلی سے زیادہ ہے”۔
پرنسپل سکریٹری نے تاہم کہا کہ شمسی توانائی میں سورج کی روشنی کے دن اور دیگر مدھم دنوں میں تغیر پذیر عنصر ہوتا ہے اس لیے اس کی بھی کچھ حدود ہوتی ہیں۔ پرساد نے کہا، “کوئلے یا گیس سے صرف تھرمل بجلی کی پیداوار ہی موسم کی بنیاد پر نہیں ہوتی۔ تھرمل انرجی کے تحت ہمارے پاس 24 گھنٹے بجلی کی فراہمی ہوگی“۔
500 میگاواٹ بجلی کی خریداری کے حالیہ معاہدے کے بارے میں بات کرتے ہوئے پرنسپل سیکرٹری نے مزید کہا کہ حکومت پہلے ہی اس کی اجازت دے چکی ہے۔ 500 میگاواٹ نئی بجلی کی خریداری کے معاہدے کے لیے فی یونٹ نظرثانی شدہ ٹیرف کے بارے میں پوچھنے پر پرساد نے کہا کہ یہ معاہدہ تھرمل پاور کے لیے ہے۔
اُنہوں نے کہا،”تھرمل پاور کی بنیادی شرح ممکنہ طور پر ہائیڈرو اور سولر پاور سے تھوڑی زیادہ ہوگی”۔ پن بجلی کی قیمت تقریباً 4 روپے 50 پیسے فی یونٹ ہے تاہم تھرمل بجلی کی قیمت موجودہ شرح سے تقریباً ایک روپے فی یونٹ بڑھ کر 5 روپے 25 پیسے یا 5 روپے 50 پیسے ہو سکتی ہے۔ یہ ممکنہ طور پر تھوڑا مہنگا ہوگا لیکن ہمیں سپورٹ کے لیے اس بیس بوجھ کی ضرورت ہے۔ یہ ایک بہت ہی معقول ریٹ ہے”۔
انہوں نے کہا کہ 500 میگاواٹ تھرمل انرجی کے پاور پرچیز ایگریمنٹ کے حوالے سے مجھے لگتا ہے کہ آنے والے دنوں میں سپلائی آجائے گی۔
پرساد نے کہا کہ اس دوران محکمہ پی ڈی ڈی پاور ایکسچینج سے بجلی خرید رہا تھا۔ “پاور ایکسچینج بہت غیر مستحکم ہے، یہ شیئر مارکیٹ کی طرح ہے”۔ پاور ایکسچینج ایک تجارتی پلیٹ فارم ہے جہاں بجلی پیدا کرنے والے اور بجلی کے صارفین آپس میں ملتے ہیں۔ پاور ایکسچینج کی دو قسمیں ہیں۔ فزیکل ٹریڈنگ میں مہارت رکھنے والے پاور ایکسچینجز میں، بجلی پیدا کرنے والے اور صارفین تجارت کرتے ہیں جس کا مقصد پروڈیوسر سے صارف تک بجلی کی فزیکل ڈیلیوری ہے۔
انہوں نے کہا، “ہمارے پاس بنیادی بوجھ کم کرنے کے لیے بجلی کی خریداری کے لیے صحت مند اور کافی معاہدے ہیں”۔
پرساد نے یہ بھی کہا، “اگرچہ ہمیں 500 میگاواٹ تھرمل پاور خریدنے کی اجازت مل گئی ہے، لیکن قیمت کی منظوری کے لیے مرکزی بجلی اتھارٹی سے کچھ طریقہ کار سے گزرنا باقی ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ یہ عمل 2سے 3 دنوں میں مکمل ہو جائے گا”۔