! ہمارے والدین ہمارے ہیرو ہیں فکرو ادراک

ہارون ابن رشید ۔ ہندوارہ

ہمارے والدین ہمارے ہیرو ہیں۔ اس روئے زمین پر کوئی بھی اتنا وفادار نہیں جتنا ماں باپ اپنے بچوں کے لیے ہوتے ہیں۔ وہ ہر ممکن کوشش کرتے ہیں اور کبھی واپسی کا مطالبہ نہیں کرتے ہیں۔ وہ غیر مشروط اور اٹل محبت کی بہترین مثال ہیں۔ہنری وارڈ بیچر نے بالکل درست کہا ہے، ’’ہم والدین کی محبت کو اس وقت تک نہیں جان سکتے جب تک کہ ہم خود والدین نہ بن جائیں۔ والدین ہر ایک کے لیے نایاب خزانہ ہوتے ہیں۔پہلا لفظ جو ہم بچپن میں بولتے ہیں وہ ہمیں ہمارے والدین نے سکھایا ہے۔وہ اس وقت تک انتظار کرتے ہیں جب تک کہ ہم نگل نہ لیں اور لقمہ ختم کر لیں۔ہمارا ہاتھ پکڑنا، راتوں کی نیندکو قربان کرنا اور ہماری دیکھ بھال کرنا انہیں اعلیٰ انسان بناتا ہے۔وہ اپنے بچوں کو بیرونی دنیا کا سامنا کرنے کے لیے تیار کرتے ہیں۔

درحقیقت ان کے ذہنی، جسمانی اور مالی مسائل سے نمٹنے میں ان کی مدد کریں۔ وہ زندگی کی جدوجہد سے لڑنے کی طاقت دیتے ہیں۔جیسا کہ انہوں نے زندگی میں میٹھی سے کڑوی چیزوں کا تجربہ کیا ہے، وہ ہمیں زندگی میں آنے والے حالات کے بارے میں خبردار کرتے ہیں۔ کوئی دن ایسا نہیں گزرتا جب انہیں ہماری پرواہ نہ ہو۔ جب ہم ٹھیک نہیں ہوتے تو وہ ڈر جاتے ہیں۔ ہم میں سے ہر ایک نے دیکھا ہے کہ اگر ہم گھر میں دیر سے آتے ہیں تو ہمارے والدین پریشان ہو جاتے ہیں۔ والدین بچوں کو آرام دہ بنانے کے لیے اپنی طرز زندگی کو تبدیل کرتے ہیں، خاص طور پر ایک ماں جو بچے کی پیدائش کے بعد بہت سی جسمانی تبدیلیوں سے گزرتی ہے۔ایک ماں اپنے بچوں کے لیے خوبصورتی اور صحت کی قربانی دینے کے لیے تیار ہوتی ہے جبکہ باپ خاندان کا کمانے والا ہوتا ہے جو اپنے بچوں کی تمام تر خواہشات پوری کرتا ہے۔ جب والدین جوان ہوتے ہیں تو وہ ہمارے ساتھ خصوصی سلوک کرتے ہیں۔

چند دہائیوں میں والدین اور بچوں کا رشتہ بدل گیا ہے۔ آج کل والدین خاندان کی واحد اتھارٹی نہیں ہیں۔ جوں جوں وہ بڑے ہونے لگتے ہیں بچے ان کے ساتھ بوجھ سمجھتے ہیں۔یہ وہ مرحلہ ہے جہاں انہیں مدد کی ضرورت ہے۔ان کا بچہ ہی ان کی واحد امید ہے۔ وہ اپنی پوری زندگی میں بچوں کی پرورش پیار اور شفقت سے کرتے ہیں اور بدلے میں ان کے آخری ایام میں ان کے ساتھ رہنے کی امید کرتے ہیں لیکن جو توقع کی جاتی ہے وہ حقیقت سے بالکل مختلف ہے۔ اس مادیت پرست دنیا میں والدین بڑھاپے کو پہنچتے ہی نظر انداز کیے جاتے ہیں۔انہیں ان کے بیٹوں کی طرف سے مسلسل ہراساں کیا جاتا ہے اور ان کے گھروں سے بھی نکال دیا جاتا ہے جو کہ ایک شرمناک فعل ہے۔

ان کے اخراجات ان کے بچے برداشت نہیں کرتے اور جب وہ مشورہ دیتے ہیں تو ان کے بیٹے برداشت کرتے ہیں۔ ایک بیٹا شادی کے بعد اپنی بیوی کے لیے نیا گھر خریدتا ہے۔ والدین کو نظر انداز کیا جاتا ہے اور طویل عرصے میں تنہا چھوڑ دیا جاتا ہے لیکن پھر بھی وہ خوش رہنے کا بہانہ کرتے ہیں۔ بچوں کو وہ کوششیں یاد نہیں ہیں جو انہوں نے ان سالوں میں ان کے لیے کی ہیں۔ بہت سے ممالک میں والدین گھر چھوڑنے پر مجبور ہیں اور ان کے پاس بھیک مانگنے یا اولڈ ایج ہوم جانے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہے۔ کچھ سفاک قاتلوں نے ان کے والدین کو مارا۔آج کل والدین اور بچے ایک دوسرے سے بات چیت نہیں کرتے۔بچے ان کے ساتھ بہت بدتمیز اور بے عزت سے پیش آتے ہیں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ بچے اعلیٰ قابلیت رکھتے ہیں لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ وہ زیادہ سمجھدار ہیں۔ بچوں کو اپنے والدین کی تعریف کرنی چاہیے۔ کتاب مقدس میں بھی والدین کو بڑا درجہ دیا گیا ہے۔ یہ قیمتی رشتہ محبت اور احترام کے اظہار کا متقاضی ہے۔ جو اپنے والدین کی بے عزتی کرے گا، اللہ اسے سزا دے گا۔ آپ موجودہ وقت میں اپنے والدین کے ساتھ جو کرتے ہیں وہ آپ کے والدین بننے کے بعد آپ کے پاس واپس آئے گا۔

بلا شبہ ہمارے والدین ہمارے ہیرو ہیں۔ جو کچھ بھی وہ اپنی اولاد کے لئے کرتے ہیں،کبھی بھی اُس کی واپسی کا مطالبہ نہیں کرتے ہیں۔ وہ غیر مشروط اور اٹل محبت کی بہترین مثال ہیں۔والدین اپنی پوری زندگی اپنے بچوں کی پرورش کے لیے وقف کر دیتے ہیں۔ وہ ان کی زبان، ان کی ضروریات کو سمجھتے ہیں جب بچہ بول بھی نہیں سکتا۔ وہ اپنے بچوں کو محفوظ اور خوشگوار مستقبل فراہم کرنے کی خاطر اپنی ضروریات، خواہشات، خواب اور خواہشات کو قربان کر دیتے ہیں۔ لیکن جب بچے بدلے میں انہیں بے عزتی، نافرمانی، بدتمیزی اور کوئی اہمیت نہیں دیتے تو یہ سب سے بڑی بدقسمتی ہے۔ یہ کبھی نہ بھولیں کہ والدین سب سے قیمتی تحفہ اور اولاد کے لیے اللہ کا سایہ ہیں۔قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ’’اور تمہارے رب نے فیصلہ کر دیا ہے کہ تم اس کے سوا کسی کی عبادت نہ کرو۔ اور یہ کہ تم اپنے والدین کے ساتھ حسن سلوک کرو۔ اگر آپ کی زندگی میں ان میں سے کوئی ایک یا دونوں بڑھاپے کو پہنچ جائیں تو ان سے بے عزتی کی بات نہ کہو اور نہ ہی ان پر چیخیں بلکہ عزت کے ساتھ مخاطب کریں۔ (قرآن 17:23)
اپنے والدین کو خوش کرنے کا ایک طریقہ ان کے احکامات کو سننا اور ان پر عمل کرنا ہے۔ہمیں ان چیزوں سے دور رہنا چاہیے جن سے وہ ہمیں دور رہنے کے لیے کہتے ہیں، اس لیے وہ ہمیں صرف ہماری بھلائی کے لیے منع کرتے ہیں، اپنے مفاد کے لیے نہیں۔آج کل والدین کو درپیش سب سے بڑے مسائل میں تنہائی اور بوریت شامل ہیں۔ یہ انہیں مارتی ہے۔ہم اپنے والدین کو خدا کے رحم و کرم پر چھوڑ دیتے ہیں۔ ہم ان کے ساتھ وقت نہیں گزارتےہیں۔ اپنے والدین سے محبت کرو، جیسا کہ وہ بچپن میں وہ آپ سے محبت کرتے تھے۔

آپ کو کانٹا چبھتا، تو اُن کے دل میں چبھتا ہے۔ تصور کریں کہ آپ ماں، باپ ہیں اور سوچیں کہ آپ اپنے بچے سے کیا توقع رکھیں گے، اور اسی طرح اپنے والدین کے ساتھ سلوک کریں۔ہمیں قدر کرنی چاہیے اور ہمیشہ ان کو خوش رکھنے کی کوشش کرنی چاہیے ،اس سے پہلے کہ بہت دیر ہو جائے اور ہم اپنے کرتوتوں پر پچھتائے خالی ہاتھ رہ جائیں۔ ہم سب کچھ واپس حاصل کر سکتے ہیں یا والدین کے علاوہ اس دنیا میں کسی بھی چیز کا متبادل تلاش کر سکتے ہیں۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’ہر نیک اولاد جو اپنے والدین پر رحم اور شفقت کی نگاہ ڈالے گا، اسے اُس کی ہر نظر کے بدلے ایک مقبول حج کے برابر اجر دیا جائے گا۔‘‘اس لیے ہمارا فرض ہے کہ ہم والدین کا احترام کریں، ان کی صحت کا خیال رکھیں، ان کی رائے اور فیصلوں کی قدر کریں اور اُن کا سہارا بنیں۔ ہمیں اپنی ذمہ داریوں کا احساس کرتے ہوئے والدین کے ساتھ صحت مندانہ تعلق قائم رکھنا چاہیے۔یہ چیزیں ہمیں اُن کی برکات حاصل کرنے میں مدد کر سکتی ہیں جو زندگی کا اصل اثاثہ ہے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اپنے والدین کا خیال رکھنے کی توفیق عطا فرمائے جس طرح انہوں نے جب ہم بے سہارا تھے، ہمارا خیال رکھا اور اللہ تعالیٰ ہمارے والدین کو صحت و تندرستی والی لمبی عمر عطا فرمائے۔ آمین
[email protected]