ہجرت کرنے والے موسمی تعلیمی مراکز کے قبائلی طلباء

جموں//جموں و کشمیر کی حکومت نے موسمی تعلیمی مراکز میں داخلہ لینے والے 34,000 سے زائد طلباء ،جو 6 ماہ کے لیے سالانہ ہجرت کے دوران پہاڑی چراگاہوں میں کام کرتے ہیں،کے لیے خصوصی سکالرشپ پالیسی کا مسودہ تیار کرنے اور تیار کرنے کے لیے افسران کا ایک پینل تشکیل دیا ہے ۔قبائلی امور کا محکمہ غیر انسانی نقل مکانی کرنے والی کمیونٹیز میں پرائمری تعلیم کی ترغیب دینے اور اسے فروغ دینے کے لیے ٹھوس اقدامات پر کام کر رہا ہے۔اسپیشل سیکرٹری قبائلی امور محمد ہارون ملک کی سربراہی میں پینل میں ڈائریکٹر قبائلی امور، مشیر احمد مرزا سیکرٹری ایڈوائزری بورڈ، مختار احمد ایڈیشنل سیکرٹری سکول ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ اور ڈپٹی ڈائریکٹرز، قبائلی امور محکمہ جموں و کشمیر شامل ہیں۔ کمیٹی ماہرین کے ارکان کو بھی پینل میں شامل کرے گی اور ایک ہفتے میں رپورٹ پیش کرے گی۔قبائلی امور کے محکمہ کے سکریٹری ڈاکٹر شاہد اقبال چودھری نے بتایا کہ 2021 میں کئے گئے سروے کے مطابق 6.12 لاکھ کی آبادی پہاڑی چراگاہوں کے ساتھ ساتھ دیگر UTs اور ریاستوں کی طرف دو سالہ نقل مکانی کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تقریباً 12,000 موسمی تعلیمی مراکز میں 34,000 سے زائد طلباء نے داخلہ لیا ہے۔انہوں نے بتایا کہ محکمہ نے پرائمری سطح پر کم انرولمنٹ کے پیش نظر اور پرائمری تعلیم کو فروغ دینے کے لیے موسمی مراکز پر خصوصی اسکالرشپ سکیم کی تشکیل کے لیے عمل شروع کر دیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اسکالرشپ کی شرحوں پر نظر ثانی ایک دہائی سے زائد عرصے سے زیر التوا ہے اور ہجرت کرنے والے طلباء کے لیے ایک خصوصی اسکیم کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ اس کے ساتھ ساتھ دیگر پری میٹرک کلاسز کے لیے اسکالرشپ سلیبس پر نظر ثانی پر کام کر رہا ہے۔ اس وقت پرائمری اسکول کے طلبہ کو لڑکوں کے لیے 450 روپے اور لڑکیوں کے لیے 675 روپے سالانہ کا معمولی وظیفہ ملتا ہے، جس میں اضافہ کیا جا رہا ہے۔قابل ذکر بات یہ ہے کہ قبائلی امور کے محکمے نے مارچ 2022 کو ختم ہونے والے مالی سال 2021-22 کے لیے اب تک کی سب سے زیادہ 31.12 کروڑ روپے کی اسکالرشپ فراہم کی تھی جس میں زیادہ سے زیادہ قبائلی طلباء کو شامل کیا گیا تھا۔ 13.50 کروڑ روپے کے پری میٹرک بجٹ میں پہلی سے آٹھویں جماعت کے طلباء کو شامل کیا گیا تھا جبکہ 9ویں اور 10ویں جماعت کے طلباء کو 2.22 کروڑ روپے اور گریجویٹ اور پوسٹ میٹرک طلباء کو 15.40 کروڑ روپے فراہم کیے گئے تھے۔ اسکالرشپ بجٹ کو اب مزید بڑھا کر 45.00 کروڑ روپے ریکارڈ کیا گیا ہے تاکہ ہجرت کرنے والے موسمی تعلیمی مراکز میں داخلہ لینے والے طلباء کے لیے خصوصی اسکالرشپ اسکیم اور دیگر کلاسوں میں بھی اضافہ کیا جاسکے۔ اس کے علاوہ رواں سال موسمی تعلیمی مراکز میں بہتر سہولیات کی فراہمی کے لیے بھی اقدامات کیے جا رہے ہیں۔