کپواڑہ میں5 پولیس اہلکاروں کی مبینہ مارپیٹ فوج نے واقعہ کو ’’معمولی اختلافات‘‘کا نتیجہ قرار دیا

 عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر// کپواڑہ ضلع میں سیکورٹی فورسز کے مبینہ طور پر پولیس اسٹیشن میں گھسنے اور پولیس اہلکاروں کے “مارا پیٹ” کے بعد ایک افسر سمیت کم از کم پانچ پولیس اہلکار زخمی ہو گئے۔سری نگر میں مقیم دفاعی ترجمان نے ان الزامات کو مسترد کیا کہ اس کے فوجیوں نے کپواڑہ میں کچھ پولیس والوں کو مارا پیٹا بلکہ اس واقعہ کو پولیس اور علاقائی فوج کے درمیان “معمولی اختلافات” کا نتیجہ قرار دیا۔ترجمان نے کہا”پولیس اور فوج کے اہلکاروں کے درمیان جھگڑے اور اس میں پولیس اہلکاروں کی پٹائی کی خبریں غلط ہیں۔ ایک آپریشنل معاملے پر پولیس اہلکاروں اور علاقائی فوج کے یونٹ کے درمیان معمولی اختلافات کو خوش اسلوبی سے حل کر لیا گیا ہے،” ۔

 

تاہم کہا جارہا ہے کہ یہ واقعہ منگل کی رات اس وقت پیش آیا جب پولیس اسٹیشن کپواڑہ کی ایک ٹیم نے ایک کیس کی تحقیقات کے دوران کپواڑہ کے بٹہ پورہ گائوں میں ٹیریٹوریل آرمی کے ایک جوان کے گھر پر چھاپہ مارا اور اسے پوچھ گچھ کے لیے حراست میں لے لیا۔ جب پولیس ٹیم گائوں سے واپس آئی تو رات کے وقت ٹیریٹوریل آرمی کے یونٹ کے ایک افسر کی قیادت میں سپاہی تھانے میں گھس گئے اور مبینہ طور پر ایک افسر سمیت پولیس والوں پر حملہ کیا۔ بتایا جاتا ہے، “اس واقعے میں ایک افسر سمیت پانچ پولیس اہلکار زخمی ہوئے،” ۔ مزید کہا گیا ہے کہ چار پولیس اہلکاروں کو علاج کے لیے میڈیکل سائنسز (SKIMS) منتقل کیا گیا ۔چار زخمی پولیس اہلکاروں کی شناخت کانسٹیبل سلیم مشتاق، کانسٹیبل ظہور احمد، امتیاز احمد ملک اور رئیس خان(ایس پی اوز)کے نام سے ہوئی ہے۔ تمام زخمیوں کی حالت مستحکم بتائی جاتی ہے۔ تھانے سے نکلنے سے پہلے ایک پولیس اہلکار کو فوج نے حراست میں لیا اور صبح 3 بجے کے بعد چھوڑ دیا۔اگرچہ پولیس کی طرف سے کوئی سرکاری بات نہیں کہی گئی ہے، تاہم بتایا جاتا ہے کہ فوج کے خلاف کپواڑہ کے پولیس اسٹیشن میں فسادات، قتل کی کوشش، اغوا اور ڈکیتی سمیت کئی دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔