چھوٹی اور درمیانہ صنعتوں کیلئے یک وقتی تصفیہ سکیم بینکوں کو قرضے وصولنے میں آسانی اورانڈسٹری پردبائو ختم ہونے کا امکان

 کمیٹی تشکیل دینے کاچیمبرآف انڈسٹری کاخیرمقدم

بلال فرقانی

سرینگر//حکومت نے جموں کشمیر میں مائیکروں،چھوٹی اور درمیانہ درجے کی صنعتوں کو درپیش یک وقتی تصفیہ معاملات کو حل کرنے کے لیے کمیٹی تشکیل دی، جبکہ فیڈریشن آف چیمبر آف انڈسٹریز کشمیر نے اعلیٰ سطحی کمیٹی کی تشکیل کے بارے میں حکومتی فیصلے کا خیر مقدم کیا ہے۔مائیکروں،چھوٹی اور درمیانہ درجے کی صنعتوںکی طرف سے ریزرو بنک آف انڈیا کے رہنما خطوط کے مطابق، یک وقتی تصفیہ کی درخواستوں کو حل کرنے کے لیے، محکمہ خزانہ کے پرنسپل سیکریٹری کی سربراہی میںکمیٹی کی تشکیل کے لیے منظوری دی گئی ہے۔اس کمیٹی میںمحکمہ صنعت و حرفت کے کمشنر سیکریٹری اور جموں کشمیر بنک کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر کو ممبران کے طور پر نامزد کیا گیا ہے۔3رکنی کمیٹی قائم کردہ رہنما خطوط کے مطابق، تصفیہ کی زیادہ سے زیادہ مدت سمیت کسی بھی بقایا مسائل کا جائزہ لے گی جبکہ تمام متعلقین کے درمیان اس کی وضاحت اور تشہیر کرے گی ۔اس دوران فیڈریشن چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹرئزنے مائیکروں،چھوٹی اور درمیانہ درجے کی صنعتوں اور جموں کشمیر بنک کے درمیان غیر فعال کھاتوں(این پی اے)کے حوالے سے پیدا ہونے والے تنازعہ میں مداخلت کے اس کے مطالبے کو تسلیم کرنے اور یکساں اور غیر امتیازی یک وقتی تصفیہ اسکیم کو انتہائی ممکنہ رعایتوں اور رہنما خطوط کے ساتھ شروع کرنے پر حکومت کا شکریہ ادا کیا ہے۔ فیڈریشن نے کہا’’یہ بڑی راحت کی بات ہے کہ آخر کار حکومت نے مائیکروں،چھوٹی اور درمیانہ درجے کی صنعتوںاور جموں کشمیر بنک کے درمیان بڑھتے ہوئے تصادم کو تسلیم کرنے کے بعد مقامی مائیکروں،چھوٹی اور درمیانہ درجے کی صنعتوںکے قرضوں کے خوش اسلوبی سے تصفیہ کے لیے قدم اٹھایا ہے جو کئی وجوہات اور حالات کی وجہ سے ان کے قابو سے باہر ہیں‘‘۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کی مداخلت سے ایک طرف مائیکروں،چھوٹی اور درمیانہ درجے کی صنعتوںکو مسلسل دباؤ سے نجات دلانے کا امکان ہے اور دوسری طرف بینک کے ذریعے قرضوں کی وصولی میں بھی سہولت ہوگی۔ فیڈریشن آف چیمبرز آف انڈسٹریز کشمیر نے تاہم مطالبہ کیا ہے کہ کمیٹی میں اعلیٰ صنعتی تنظیموں کے نمائندوں کو شامل کیا جائے تاکہ وہ فیڈریشن آف چیمبرز آف انڈسٹریز کشمیرکا نقطہ نظر پیش کریں اور ان کے قرضوں کو ختم کرنے میں کاروباری اداروں کی عملی مشکلات کو حل کرنے کے علاوہ تجزیہ کریں۔شاہدکاملی نے کہا’’ فیڈریشن آف چیمبرز آف انڈسٹریز کشمیر نے بار بار حکومت کے ساتھ نمائندگی کی ہے کہ جے اینڈ کے بینک کے ذریعہ شروع کی گئی او ٹی ایس اسکیم کو یو ٹی میںکمزور صنعتی اکائیوں کی بحالی کے لئے حکومت کے ایک بڑے بحالی پروگرام کا حصہ ہونا چاہئے‘‘۔انہوں نے مزید کہا کہ حکومت او رمتعلقین کو مل کر اس کی ضرورت ہے کہ کسی بھی یک وقتی تصفیہ اسکیم کے تحت جموں کشمیربینک کو اپنا قرض ادا کرنے کے قابل بنانے والے اداروں کے لیے وسائل پیدا کرنے کے کئی طریقے تلاش کریں۔کاملی نے مزید کہا’’حکومتی حکم کے تحت کمزور صنعتی اکائیوں کی بحالی اور بحالی کے ساتھ یک وقتی تصفیہ پالیسی کو جوڑنا ایک خصوصی اثاثہ کی تعمیر نو کمپنی اور دیگر اختیارات کے قیام کے امکانات تلاش کرنے کے علاوہ قرضوں کے خاتمے کے لیے اہم تھا۔‘‘ایف سی آئی کے نے کہا کہ سینکڑوں کروڑ مالیت کے اثاثے کمزور صنعتی اکائیوں میں بند پڑے تھے جن کو کھولنے پر ہزاروں ملازمین کے لیے روزگار پیدا کرنے کے علاوہ بنیادی ڈھانچے کو زیادہ سے زیادہ استعمال میں لانے کی صلاحیت تھی۔ فیڈریشن آف چیمبرز آف انڈسٹریز کشمیرنے موجودہ چیف سکریٹری کا شکریہ ادا کیا ہے جن کے ساتھ تنظیم نے حال ہی میںطویل میٹنگ کی تھی جس میں حکومت، بینک اور صنعت کے نمائندوں پر مشتمل سہ فریقی کمیٹی کی تشکیل کے بارے میں ان سے درخواست کی تھی۔ ایف سی آئی کے نے امید ظاہر کی کہ کمیٹی کی تشکیل کے ساتھ ہی، ایم ایس ایم ای کے خلاف جے اینڈ کے بینک کی مہم کمیٹی کے نتائج تک روک دی جائے گی۔