وسیع آبادی شدید مشکلات سے دوچار سرحدی دیہات، گنجان علاقوں کو جوڑنے والی اہم سڑک خستہ حالی کا شکار

دادرسی کی مانگ ،جاریہ سیزن میںمیں سڑک پر بلیک ٹاپنگ ہوگی:حکام

سمت بھارگو

راجوری//لاائن آف کنٹرول کے قریب نصف درجن دیہات اور راجوری شہر کے نزدیک دیگر گنجان آباد دیہات کو جوڑنے والی چھ کلومیٹر طویل سڑک ہر گزرتے دن کے ساتھ خستہ حالی کا شکار ہے جس سے ہزاروں لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔راجوری شہر کے قریب جموں راجوری پونچھ قومی شاہراہ سے شروع ہونے والی چھ کلومیٹر سڑک گاؤں کی سطح کی لنک سڑکوں سمیت کم از کم ایک درجن دیگر سڑکوں کی ابتدائی سڑک ہے۔یہ شاہراہ پر ٹنڈوال پل سے شروع ہوتی ہے جو راجوری میونسپل کونسل کے علاقائی دائرہ اختیار میں آتی ہے جبکہ یہ گاؤں مبارک پورہ، کیریان، منکوٹ، ننگا نار، پالولین سے گزرتا ہے اور سڑک کے ساتھ دو سرے پوائنٹ ہیں ایک پلولیان گاؤں میں جہاں سے لنک روڈ کو جوڑتا ہے ،نامبلہ شروع ہوتا ہے جبکہ سڑک کا دوسرا اختتامی نقطہ گورنمنٹ مڈل سکول منکوٹ کے قریب ہے جہاں سے ٹنڈی ترار کی طرف ایک اور مرکزی سڑک نینا نار شروع ہوتی ہے۔علاقے کے مقامی لوگوں نے بتایا کہ اس مین روڈ سے تقریباً ایک درجن سڑکیں شروع ہوتی ہیں جن میں کیریان روڈ، منکوٹ سدھیال روڈ، منکوٹ شیو پریوار غار، منکوٹ بخشی محلہ روڈ، ٹنڈی ترار پی ایم جی ایس وائی روڈ، میاں نگری روڈ، مونگا والی گلی روڈ لنک، نمبرلان سڑک شامل ہیں۔انہوں نے کہا کہ ٹنڈوال سے پالولین، منکوٹ اور سوہانہ گلی تک سڑک ایک طرف گنجان آباد دیہات مبارک پورہ، کیریان، منکوٹ، سدھیال کو جوڑتی ہے جو کہ راجوری شہر کے آس پاس کے دیہی علاقوں کی پہلی پرت کے دیہات ہیں جبکہ یہ ایل او سی کے علاقوں میں آنے والے دیہاتوں کو بھی جوڑتی ہے جن میں ٹنڈی ترار، نمبربلان، پالولیان، شرما بستی شامل ہیں۔منکوٹ گاؤں کے سابق پی آر آئی ممبر خادم حسین نے بتایا کہ یہ سڑک چند سال قبل بنائی گئی تھی اور 2019 میں اس کی بلیک ٹاپنگ کی گئی تھی لیکن کام کے چند ماہ میں ہی سطح ڈھیلی پڑنا شروع ہو گئی تھی اور یہ اس کے بعد سے نہ ختم ہونے والا عمل ہے۔

 

خادم اعلیٰ نے کہا کہ بلیک ٹاپنگ کے کام کے صرف ایک سال کے اندر ہی یہ سڑک بلیک ٹاپ ہونا شروع ہو گئی تھی اور ہر گزرتے دن کے ساتھ یہ سلسلہ جاری ہے اور اب اس چھ کلومیٹر طویل سڑک کا ستر فیصد سے زائد حصہ خستہ حال، گڑھوں سے بھرا ہوا ہے۔علاقے سے تعلق رکھنے والے امیت شرما نے کہا کہ سڑک کے ساتھ ساتھ نالے زیادہ تر جگہوں پر بند ہیں اور نالے کے ساتھ ساتھ بارش کا پانی سڑک کی سطح پر بہہ کر اسے مزید خستہ بنا دیتا ہے۔شرما نے کہا کہ گورنمنٹ مڈل اسکول مبارک پورہ، گورنمنٹ مڈل اسکول منکوٹ، گورنمنٹ مڈل اسکول پالولین اس سڑک کے ذریعے تین نجی تعلیمی اداروں کے علاوہ میاں نگری کے علاوہ ایک قدیم ہندو دیوتا اور دیوی غار سے جڑے ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ راجوری شہر کے تعلیمی اداروں میں تعلیم حاصل کرنے والے سینکڑوں سکول اور کالج کے طلباء، علاقے کے سینکڑوں دیہاتی روزانہ کی بنیاد پر سڑک پر گزرتے ہیں اور درجنوں مسافر گاڑیاں مسلسل سڑک پر گزرتی ہیں۔ امیت شرما نے کہا کہ اس اہم سڑک کی خستہ حالی ہزاروں لوگوں کو پریشانی میں ڈال رہی ہے۔ٹنڈی ترار پنچایت کے سابق سرپنچ یوگیش شرما نے کہا کہ یہ اہم سڑک بلیک ٹاپنگ کے مہینوں میں ہی خستہ حال ہونا شروع ہوگئی۔یوگیش شرما نے کہا”بلیک ٹاپنگ کے وقت کام کے معیار پر تشویش کا اظہار کرنے کے ساتھ ساتھ، ہم نے بار بار سڑک کی مناسب دیکھ بھال اور مرمت کا مطالبہ کیا جو کسی حد تک ہو گیا تھا لیکن سڑک کی حالت کو بہتر بنانے کے لیے سڑک کی مکمل بلیک ٹاپنگ وقت کی ضرورت ہے” ۔انہوںنے کہا کہ وہ مطالبہ کرتے ہیں کہ سڑک کی جلد از جلد بلیک ٹاپنگ کی جائے تاکہ روزانہ ہزاروں لوگوں کے سفر میں آسانی ہو۔رابطہ کیے جانے پر، ایگزیکٹو انجینئر پی ایم جی ایس وائی راجوری ڈویژن انجینئرمحمد شاہد نے کہا کہ اس سڑک کی بلیک ٹاپنگ کا کام رواں سیزن میں ہی شروع کیا جائے گا۔انہوںنے کہا’’ہم نے اس کام کے لیے ایک پروجیکٹ تیار کیا ہے اور بلیک ٹاپنگ جاری سیزن میں کی جائے گی‘‘۔