مایوس ہو کر کانگریس ملک دشمن طاقتوں سے حمایت حاصل کرنے میں مصروف :ڈاکٹر جتیندر

عظمیٰ نیوز سروس

کٹھوعہ//مرکزی وزیر اور ادھم پور-ڈوڈہ-کٹھوعہ لوک سبھا حلقہ کے بی جے پی امیدوار ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے الزام لگایا کہ کانگریس پارٹی مایوسی کے عالم میں آئندہ انتخابات میںووٹ حاصل کرنے کیلئے ملک دشمن طاقتوں سے حمایت حاصل کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ کٹھوعہ کے دیہی اور شہری مضافاتی علاقوں جن میں چالان، سیسوان، بنن، چننی، ہمیر پور، بھودھی، جنڈور، بربل، اتری، لوگے، سہار، شیرکوٹلا، کھٹیرا، بھیڈ بلوڑے، مہتاب پور، کھوکھیال، پنڈور وغیرہ میں جلسہ عام سے خطابکرتے ہوئے ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہاکہ کانگریس پارٹی کے پاس ترقی کے کام کو بڑھانے یا پچھلے 20 سالوں میں کئے جانے والے کاموں کادعوی کرنے کا کوئی مسئلہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس لئے یہ فرضی بیانیہ تیار کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہاکہ کانگریس پارٹی نے گزشتہ 10 سالوں میں ادھم پور-ڈوڈہ-کٹھوعہ لوک سبھا حلقہ میں کسی بھی طرح کی ترقی سے انکار کرنے کی چال آزمائی، حالانکہ پورا ملک اس حلقے کی تعریف کر رہا ہے۔ ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہاکہ کانگریس پارٹی نے تب آرٹیکل 370 کو منسوخ کرنے میں وزیر اعظم نریندر مودی کی ہمت اور یقین کو کم کرنے کی کوشش کی اور اس معاملے پر اپنا موقف واضح کئے بغیر گرما گرم ہوا شروع کردی۔ اسی طرح، رام مندر کی تعمیر میں وزیر اعظم نریندر مودی کی ہمت اور یقین کو کم کرنے کے لئے ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہاکہ کانگریس پارٹی کہتی ہے کہ بی جے پی رام مندر کے معاملے پر سیاست کر رہی ہے۔ لیکن جیسا کہ خود پی ایم مودی نے ادھم پور کی ریلی میں کہا تھا کہ چونکہ رام مندر کا مسئلہ گزشتہ 500 سالوں سے زیر التوا ہے، اسلئے کانگریس کی حکومتوں کو اس کو حل کرنے کا موقع اس وقت ملا جب وہ نصف صدی سے زیادہ عرصے سے اقتدار پر قابض تھیں لیکن وہ نہیں کر سکے اور جب بی جے پی نے اس مسئلے کو کامیابی کے ساتھ حل کر لیا ہے تو وہ اسے غلط ثابت کرنے کی کوشش کر رہے ہیں حالانکہ یہ سیاست کا معاملہ نہیں ہے بلکہ ہندوستان کی تہذیب میں گہرائی سے پیوست ہے۔ڈاکٹر جتیندر سنگھ نے کہاکہ کانگریس کے رہنما ان سیاسی جماعتوں سے براہ راست حمایت حاصل کر رہے ہیں جو علیحدگی پسندوں کا ساتھ دینے کیلئے جانی جاتی ہیں جن کا مقصد ہندوستان کو توڑنا تھا اور پی ڈی پی اور نیشنل کانفرنس جیسی پارٹیاں جو کبھی بھی جموں و کشمیر کے ہندوستان کے ساتھ مکمل انضمام کے حق میں نہیں تھیں۔ .