فلسطین کادردناک ماضی وحال،واشنگٹن میں ریلی

عظمیٰ نیوزڈیسک

واشنگٹن// موقع تھا نکبہ یعنی اسرائیل سے فلسطینیوں کو جبراً نکالے جانے کی 76 ویں برسی کا۔ امریکہ کے دارالحکومت میں سیکڑوں مظاہرین نے یو ایس کیپیٹل کے سامنے ریلی نکالی۔ مظاہرین نے فلسطینیوں کے حق میں نعرے لگائے اور اسرائیلی اور امریکی حکومتوں پر شدید تنقید کی۔ مظاہرین نے غزہ جنگ، فلسطین کے دردناک حال اور ماضی کے لئے اسرائیل اور امریکہ کو زمہ دار قرار دیا۔ 1948 میں جب اسرائیل کا قیام عمل میں آیا اس وقت تقریباً 700,000 فلسطینیوں کی ہجرت کو مظاہرین نے نشان زد کیا۔تقریباً 400 مظاہرین نے مسلسل بارش کا مقابلہ کرتے ہوئے نیشنل مال پر فلسطینیوں کی جبراً نقل مکانی کی 76 ویں سالگرہ کے موقع پر ریلی نکالی۔ ریلی میں فلسطینیوں کے حقوق کی حمایت اور غزہ میں اسرائیلی فوجی کارروائیوں کو فوری طور پر بند کرنے کے مطالبات کیے گئے۔ اس موقع پر “چوری کی ہوئی زمین پر امن نہیں” اور “قتل بند کرو، جرم بند کرو/اسرائیل کو فلسطین سے نکال دو” کے نعرے لگائے گئے۔مظاہرین نے اپنا غصہ صدر جو بائیڈن پر بھی مرکوز کیا۔ مظاہرین نے نعرے لگائے “بائیڈن بائیڈن، آپ دیکھیں گے/نسل کشی آپ کی میراث ہے،”۔امریکن مسلمز فار فلسطین کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر اسامہ ابورشاد نے اپنے پیچھے کیپٹل بلڈنگ کے گنبد کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ کانگریس ہمارے لیے نہیں بولتی۔ یہ کانگریس عوام کی مرضی کی نمائندگی نہیں کرتی۔ “ہم بموں کی قیمت ادا کر رہے ہیں۔ ہم F-16 اور F-35 طیاروں کی ادائیگی کر رہے ہیں۔ اور پھر یہ ہم غریب فلسطینیوں پر احسان کرتے ہیں اور کچھ کھانا بھیجتے ہیں۔”