شیر،چیتوں اوردیگربڑی بلیوں کاتحفظ کابینہ کی’ انٹرنیشنل بگ کیٹ الائنس‘ کے قیام کو منظوری

 یواین آئی

نئی دہلی// وزیر اعظم نریندر مودی کی زیر صدارت مرکزی کابینہ کی میٹنگ میں 2023-24 سے 2027-28تک پانچ برسوں کے لیے 150 کروڑ روپے کی یک وقتی بجٹ امداد کے ساتھ ہندوستان میں صدر دفتر کے ساتھ بین الاقوامی بگ کیٹ الائنس ( آئی بی سی اے) کے قیام کو منظوری دی ۔شیروں، دیگر بڑی بلیوں اور خطرے سے دوچار اس کی بہت سی انواع کے تحفظ میں ہندوستان کے اہم کردار کو تسلیم کرتے ہوئے ہندوستان کے وزیر اعظم نے عالمی ٹائیگر ڈے، 2019 کے موقع پر اپنی تقریر کے دوران ایشیا میں غیر قانونی شکار کو روکنے کے لیے عالمی رہنماؤں کے اتحاد پر زور دیا۔ انہوں نے 9 اپریل 2023 کو ہندوستان کے پروجیکٹ ٹائیگر کے 50 سال کی یاد میں اس کا اعادہ کیا اور ایک بین الاقوامی بگ کیٹ الائنس کے آغاز کا باضابطہ طور پر اعلان کیا جس کا مقصد بڑی بلیوں اور ان کے پروان چڑھنے والے مناظر کے مستقبل کو محفوظ بنانا ہے۔ سرخیل اور طویل عرصے سے کھڑے شیر اور دیگر بڑی بلیوں کے تحفظ کے اچھے طریقوں کو ہندوستان میں تیار کیا گیا ہے جو کہ بہت سے دوسرے رینج کے ممالک میں بھی منتنقل کیے جا سکتے ہیں۔ان پانچ بڑی بلیوں میں سے سات بڑی بلیوں میں ٹائیگر، شیر، چیتا، برفانی چیتے، پوما، جیگوار اور چیتا شامل ہیں۔ ٹائیگر، شیر، چیتا، سنو لیپرڈ اور چیتا ہندوستان میں پائے جاتے ہیں۔بین الاقوامی بگ کیٹ الائنس کا تصور 96 بڑی بلیوں کے رینج والے ممالک کے ملٹی کنٹری، ملٹی ایجنسی اتحاد کے طور پر کیا گیا ہے، بڑی بلیوں کے تحفظ میں دلچسپی رکھنے والے غیر رینج ممالک، کنزرویشن پارٹنرز اور سائنسی تنظیمیں جو کاروبار کے علاوہ بڑی بلیوں کے تحفظ کے شعبے میں کام کر رہی ہیں۔ گروپس اور کارپوریٹس جو بڑی بلیوں کے مقصد میں اپنا رول ادا کرنے کے لیے تیار ہیں، نیٹ ورکس قائم کرنے اور مربوط انداز میں ہم آہنگی کو فروغ دینے کے لیے تیار ہیں تاکہ ایک مشترکہ پلیٹ فارم پر کامیاب طریقوں اور عملے کے مرکزی ذخیرے کو لایا جا سکے، جس کی حمایت مالی مدد سے ہو جس کو مضبوط بنانے کے لیے فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے۔