سندھ طاس معاہدہ | 38 غیر جانبدار ماہرین کا وفد کشتواڑ وارد ۔4روزہ دورہ کے پہلے روزریتلےپاور پروجیکٹ کا معائنہ

عاصف بٹ

جموں// حکام نے بتایا کہ ہندوستان اور پاکستان کے ایک بڑے وفد نے پیر کو غیر جانبدار ماہرین کے ساتھ جموں و کشمیر کے کشتواڑ ضلع کا دورہ کیا اور انڈس واٹر ٹریٹی کے تحت دو پاور پروجیکٹوں کا معائنہ شروع کیا۔حکام نے بتایا کہ تقریباً 38 لوگوں پر مشتمل وفد اتوار کی شام جموں پہنچا اور وادی چناب کے مختلف زیر تعمیر پاور پروجیکٹوں کے معائنے کے لیے صبح کشتواڑ وارد ہوا۔سرکاری ذرائع نے بتایا کہ اس 38 رکنی وفد کی قیادت ایک ‘غیر جانبدار ماہر’ مائیکل مارک لنو کر رہے ہیں۔ وفد میں پاکستان کے 5، بھارت کے 19 ارکان کے علاوہ فرانس اور برطانیہ کے2 دوغیر جانبدار ماہرین، کنیڈا کے 3 ،کینیا روس سوئزرلینڈ، جنوبی افرایقہ، امریکہ اور ڈنمارک کا ایک ایک رکن شامل ہے۔ جموں وکشمیر حکومت نے غیر جانبدار ماہرین کے دورے کے لئے 25 رابطہ افسروں کی تقرری عمل میں لائی ہے۔پہلے روز کمیشن نے زیر تعمیر 850 میگاواٹ ریٹلی پاور پروجیکٹ کا معائنہ کیا۔ سال2015 میں پاکستان نے بھارت کے کشن گنگا اور رتلے پاور پروجیکٹوں پر اپنے تکنیکی اعتراضات کا جائزہ لینے کے لیے ایک غیر جانبدار ماہرین کی تقرری کی درخواست کی تھی۔ سال 2016 میں پاکستان نے یکطرفہ طور پر اس درخواست کو واپس لے لیا اور تجویز پیش کی کہ ثالثی عدالت اپنے اعتراضات کا فیصلہ کرے۔ پاکستان و بھارت کی طرف سے باہمی رضامندی سے آگے بڑھنے کی بارہا کوششوں کے باوجود سال 2017 سے 2022 تک مستقل انڈس واٹرکمیشن کے پانچ اجلاسوں کے دوران اس مسئلے پر بات کرنے سے انکار کر چکا ہے۔ جبکہ گزشتہ پانچ سال کے دوران پاکستان کے کسی سرکاری وفد کا یہ جموں کشمیر میں پہلا دورہ ہے۔ایک فوجی کیمپ میں اترنے کے فورا بعد، وفد نے نیشنل ہائیڈرو الیکٹرک پاور کارپوریشن (این ایچ پی سی)کے ہیڈکوارٹر کا دورہ کیا۔ انہوں نے مزید کہا، وہ ڈیم کے معائنے کے لیے دراب شالہ میں 85 میگاواٹ کے رتلے پن بجلی منصوبے کی سائٹ پر بھی گئے۔عہدیداروں نے بتایا کہ وہ کشتواڑ میں اپنے قیام کے دوران دریائے چناب کی معاون دریا مرسودر پر 1,000 میگاواٹ کے پکل ڈول ہائیڈرو الیکٹرک پروجیکٹ اور دیگر پاور پروجیکٹس کا بھی دورہ کریں گے۔پاکستان نے 2016 میں ورلڈ بینک کو ایک درخواست میں دو پن بجلی منصوبوں کے ڈیزائن فیچرز پر اعتراض کیا تھا اور غیر جانبدار ماہر کے ذریعے تصفیہ طلب کیا تھا۔تاہم، ملک نے بعد میں درخواست واپس لے لی اور ثالثی عدالت کے ذریعے فیصلہ سنانے کا مطالبہ کیا۔ دوسری جانب بھارت کا اصرار ہے کہ اس مسئلے کو مکمل طور پر غیر جانبدار ماہر کی کارروائی کے ذریعے حل کیا جانا چاہیے۔ناکام مذاکرات کے بعد، ورلڈ بینک نے اکتوبر 2022 میں ایک غیر جانبدار ماہر اور ثالثی عدالت کا سربراہ مقرر کیا۔ معاہدے میں ترمیم کے لیے ایک نوٹس جاری کرتے ہوئے، ہندوستان نے خبردار کیا کہ “اسی مسائل پر اس طرح کے متوازی غور کسی بھی شق کے تحت نہیں آتا ہے ۔”جولائی 2023 میں، ثالثی کی عدالت نے فیصلہ دیا کہ وہ “پاکستان کی ثالثی کی درخواست کے ذریعہ پیش کردہ تنازعات پر غور کرنے اور ان کا تعین کرنے کی مجاز ہے۔”
پاکستان نے اس سال مارچ میں اس عمل کے تحت اپنا پہلا میموریل دائر کیا، جس میں اس کے قانونی کیس کو دستاویزات کے ساتھ درج کیا گیا تھا۔ایک ماہ بعد، عدالت نے پاکستان کے زیر قبضہ کشمیر میں واقع نیلم جہلم ہائیڈرو الیکٹرک پلانٹ کا ایک ہفتہ طویل دورہ کیا “عدالت کو رن آف ریور ہائیڈرو الیکٹرک پلانٹس کے ڈیزائن اور آپریشن کے عمومی پہلوں سے واقف کرایا۔”جب کہ بھارت نے ثالثی عدالت میں حصہ لینے سے انکار کر دیا، اس نے اگست 2023 میں غیر جانبدار ماہر کو ایک یادداشت پیش کی۔پاکستان نے گزشتہ سال ستمبر میں ویانا میں غیر جانبدار ماہر کی طرف سے منعقدہ فریقین کے دوسرے اجلاس میں شمولیت اختیار کی جس میں سائٹ کے دورے کی تنظیم سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔جموں و کشمیر انتظامیہ نے ہندوستان اور پاکستان کے وفود کے ساتھ غیر جانبدار ماہرین کے دورے کو مربوط کرنے کے لیے 25 “رابطہ افسران” کا تقرر کیا ہے۔