جموں حملے کے بعدسرینگر میں سیکورٹی مزید سخت

یواین آئی
سرینگر// گرمائی دارالحکومت سری نگر کے تجارتی مرکز لالچوک سمیت کئی علاقوں میں جمعے کے روز سیکورٹی فورسز نے ناکے لگا کر گاڑیوں اور راہگیروں کو روک کر ان کی تلاشی لی۔ سیکورٹی فورسز اہلکاروں نے سری نگر کے لالچوک اور دیگر علاقوں میں عارضی ناکے لگائے اور وہ گاڑیوں کو روک کر ان کی اور ان میں سوار لوگوں کی تلاشی لے رہے تھے ۔انہوں نے بتایا کہ فورسز اہلکار راہگیروں کو بھی روک کر ان کی جامہ تلاشی لے رہے تھے اور ان سے پوچھ گچھ بھی کر رہے تھے ۔ُٓاُن کے مطابق لالچوک کے ساتھ ساتھ آس پاس علاقوں میں بھی سیکورٹی فورسز کی اضافی تعیناتی عمل میں لائی گئی ہے جہاں پر راہگیروں اور مسافروں کے شناختی کارڈ باریک بینی سے چیک کئے جا رہے تھے ۔تجارتی مرکز لالچوک میں وومنز اہلکاروں کو بھی خواتین کے بیگوں کی تلاشی لیتے ہوئے دیکھا گیا ۔ نمائندے نے جب ایک سیکورٹی اہلکار سے اس سلسلے میں بات کی تو ان کا کہنا تھا،’’ہمیں یہ ہدایات ہیں کہ سٹی میں ایسی تلاشی کارروائیاں جاری رکھیں تاکہ سماج دشمن عناصر کے منصوبوں کو ناکام بنایا جاسکے ۔‘‘بتادیں کہ جموں کے جلال آباد سنجوا میں دو فدائین کو مار گرانے کے بعد جموں وکشمیر میں ہائی الرٹ جاری کردیا گیا ہے ۔ذرائع نے بتایا کہ وزیر اعظم مودی کے جموں دورے کے پیش نظر جموں وکشمیر میں سیکورٹی فورسز کو مستعد رہنے کے احکامات صادر کئے گئے ہیں ۔معلوم ہوا ہے کہ بین الاقوامی کنٹرول لائن اور حد متارکہ پر بھی بارڈر سیکورٹی فورسز کی چوکسی بڑھائی گئی ہے ۔