این سی ۔پی ڈی پی نے خود مختاری اور خود حکمرانی کی وکالت چھوڑ دی:منہاس کہاان جماعتوں نے لوگوں کی امنگوں کو دبایا، بے گناہوں کے قتل کی ذمہ دار

عظمیٰ نیوزسروس

سرنکوٹ //اپنی پارٹی کے نائب صدر اور راجوری۔اننت ناگ پارلیمانی سیٹ سے پارٹی کے امیدوار ظفر اقبال منہاس نے اتوار کو نیشنل کانفرنس اور پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی پر پیر پنجال کے لوگوں کی امنگوں کو دبا کر سابقہ ریاست جموں و کشمیر میں خاندانی حکمرانی کو فروغ دینے کا الزام لگایا۔انتخابی مہم کے ایک حصے کے طور پر، ظفر اقبال منہاس نے فضل آباد کے ساتھ ساتھ جموں و کشمیر کے ضلع پونچھ کے سرنکوٹ میں بھی بڑے پیمانے پر عوامی جلسوں سے خطاب کیا۔ منہاس نے یاد کیا کہ کس طرح این سی اورپی ڈی پی نے اقتدار میں رہنے کے لیے جمہوری اقدار سے سمجھوتہ کیا اور خود مختاری اور سیلف رول کے نام پر لوگوں کا جذباتی استحصال کرکے انہیں گمراہ کیا۔انہوں نے کہا کہ یہ دونوں روایتی علاقائی جماعتیں جاری انتخابات میں خود مختاری اور خود حکمرانی کے اپنے اپنے ایجنڈے کو فروغ دینا بھول گئی ہیں کیونکہ وہ جانتی ہیں کہ وہ بے نقاب ہو چکے ہیں اور عوام اب ان پر یقین نہیں کریں گے۔انکاکہناتھا’’ان دونوں جماعتوں، این سی ، اور پی ڈی پی نے پہاڑی قبائل کو دہائیوں تک آئینی حقوق دینے سے انکار کیا۔ ان علاقائی جماعتوں نے ان لیڈروں کی تذلیل کی جنہوں نے پہاڑی قبیلے کے حق میں آواز اٹھائی تاکہ جموں و کشمیر میں اپنی خاندانی حکومت کو چیلنج نہ کیا جا سکے۔ تاہم، اب صورتحال بدل گئی ہے کیونکہ پہاڑی قبائل کو ان کے آئینی حقوق مل گئے ہیں‘‘۔انہوں نے این سی اور پی ڈی پی کے سیاست دانوں کو پیر پنجال کے علاقے کے ساتھ ساتھ کشمیر میں دہشت گردی کا ذمہ دار ٹھہرایا جس کے نتیجے میں بے گناہ لوگوں کی ہلاکتیں ہوئیں۔انہوں نے کہا کہ این سی قیادت کو جموں و کشمیر میں 1931سے لے کر آج تک کی بداعمالیوں کے لئے جوابدہ ٹھہرایا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ این سی اور پی ڈی پی قیادتوں کا کردار قابل اعتراض ہے کیونکہ انہوں نے پیر پنجال اور وادی کے ان حصوں میں عدم استحکام کو فروغ دیا جس میں معصوم جانیں ضائع ہوئیں۔پی ڈی پی قیادت کے دوہرے معیار کو بے نقاب کرتے ہوئے انہوں نے یاد کیا کہ کس طرح پی ڈی پی صدر نے کہا تھا کہ اگر خصوصی حیثیت کو چھو لیا گیا تو لوگ قومی پرچم نہیں اٹھائیں گے۔انکاکہناتھا’’ان کی پارٹی صدر کے دعوے کے برعکس، یہ ان کی پی ڈی پی کی جموں یونٹ تھی جس نے سال 2020 میں اپنے دفتر کے احاطے میں قومی پرچم لہرایا‘‘۔انہوںنے مزید کہا کہ اس کے ساتھ ہی، این سی کا کردار بدستور مشکوک بنا ہوا ہے کیونکہ وہ امن سے سمجھوتہ کرتے ہوئے خاندانی حکومت کو برقرار رکھنا چاہتی تھی۔این سی اور پی ڈی پی کی خاندانی حکمرانی کو چیلنج کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ان جماعتوں نے متعلقہ حکومتوں کے دوران وادی کشمیر میں بے گناہ نوجوانوں کے قتل پر خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔انہوں نے کہا کہ عوام کو تقسیم کے ایجنڈے میں مصروف رکھا گیا ہے تاکہ وہ بنیادی سہولتیں نہ مانگیں۔منہاس نے کہا’’پیر پنجال میں ریلوے لنک، مناسب سڑک رابطہ، اور طبی دیکھ بھال نہیں ہے۔ تاہم، اگر مجھے لوک سبھا کے لیے ووٹ دیا جاتا ہے، تو میں راجوری-پونچھ کے لیے علیحدہ پارلیمانی نشست، پہاڑی ترقیاتی کونسل، جموں-پونچھ کو جوڑنے کے لیے ریلوے لائن کی تیزی سے تکمیل، سیاحتی مقامات کو فروغ دینے ، مقامی معیشت کو فروغ دینے اور روزگار کی تلاش کے لیے نئے سیاحتی مقامات کی تلاش، لوگوں کی نقل مکانی کو روکنا، مغل روڈ پر دو سرنگوں یعنی پیر کی گلی اور ڈیرہ کی گلی کی تعمیر، بنیادی سہولیات کی فراہمی اور صحت اور تعلیمی انفراسٹرکچر کو بہتر بنانے کے لیے کوئی کسر نہیں چھوڑوں گا‘‘۔ انہوں نے لوگوں سے التجا کرتے ہوئے کہا’’ووٹ دیں اور لوک سبھا انتخابات میں ان کی حمایت کریں‘‘۔انہوں نے لوگوں سے کہا کہ وہ ان کے حق میں ووٹ ڈال کر اپنے اور اپنی آنے والی نسل کے لیے مثبت تبدیلی لائیں۔