اڑان سکیم سے پنکھ لگ گئے | ہوا بازی کے شعبے میں انقلاب کا آغاز فکر و نظر

روہت ماتھر

یہ کہنے میں کوئی مبالغہ نہیں ہے کہ اڑان سکیم آزادی کے بعد ہندوستان میں ہوا بازی کے شعبے میں اب تک کی سب سے جدید اور ذہانت سے تیار کی گئی سکیم ہے۔ اڑان کے زمینی سطح پر جو اثرات ہیں وہ دہلی میں ظاہری طور پر بھلے ہی نظر نہ آتےہوں لیکن یہ ملک کے کچھ دور دراز اور دور دراز علاقوں میں ایک خاموش انقلاب برپا کر رہا ہے۔اڑان کی کامیابی کی کہانیاں پورے ہندوستان کے متعدد ٹائر 2اور ٹائر 3شہروں میں پھیلی ہوئی ہیں۔
پٹنہ کے بعد بہار میں کام شروع کرنے والا دوسرے ہوائی اڈے دربھنگہ کی مثال لیں۔یہ اڑان کی ایک بڑی کامیابی کی کہانی ثابت ہوئی ہے اور آج دربھنگہ ہر روز 1500سےزائد مسافروںکی آمدو رفت کو سنبھالتا ہے۔یہی کہانی پریاگ راج اور کانپورکی بھی ہے جہاں انڈیگو کے پریاگ راج۔بنگلور اور سپائس جیٹ کے ذریعہ 19-2018کے آس پاس اڑان کے تحت کانپور۔دہلی کی پرواز شروع ہونے سے پہلے، ان شہروں کے لیےپروازیں نہیں تھیں ۔آج صرف 4سے5 سال میںیہ دونوں ہوائی اڈے روزانہ 1000سے 1500مسافروں کو ہینڈل کرتے ہیں۔ بریلی، شیموگہ، کننوروغیرہ شہروں میں بھی اڑان کی کامیابی کی کچھ ایسی ہی مثالیں ہیں۔ یہ ٹائر 2اور ٹائر 3شہر اچانک تجارتی ہوا بازی کے لیے ترقی کا مرکز بن گئے ہیں۔ ایئر لائنز کو نہ صرف اچھی ٹریفک مل رہی ہے بلکہ میٹرو شہروں کے درمیان چلنے والی پروازوں کے مقابلے میں ان ٹائر 2ٹائر 3شہروں میں،ان کی فی سیٹ کلومیٹر کی اوسط آمدنی زیادہ ہے۔
اڑان کی ان پروازوں کے زبردست ردعمل سے حوصلہ پاکر ایئر لائنز اب ٹیئر 2/3شہروں میں نئے اڑان روٹس شروع کرنے کے لیے بے چین ہیں۔ یہ صرف آدھی ادھوری کہانی ہے۔اڑان کی بڑی کہانی ہندوستان کے کچھ دور دراز اور غیر منسلک شہروں میں چھوٹے ہوائی جہاز اور ہیلی کاپٹر چلانے والے بہت سے چھوٹے کھلاڑیوں کا ابھرنا ہے۔ یہ بہت حیران کن ہے کہ اڑان سکیم کے منظر عام پر آنے سے پہلے ہندوستان جیسےملک کے پاس 80سیٹوں سے کم کے زمرے میں صرف 1طیارہ تھا جو شملہ کے راستے میں الائنس ایئر کے ذریعہ چلایا جانے والااے ٹی آر 42تھا۔ کئی قصبوں اور شہروں میںہمیشہ9سے19سیٹر ہوائی جہاز چلانے کی صلاحیت موجود تھی لیکن اڑان سکیم کے تحت فراہم کی جانے والی مراعات کی عدم موجودگی میں چھوٹے آپریٹرز کبھی بھی اس میں قدم اٹھانے کی ہمت نہیں کر سکتے تھے۔
ہوا بازی ایک بہت ہی مشکل کاروبار ہے اور چھوٹے کھلاڑیوں کے لیے طے شدہ پروازیں چلانا آسان نہیں ہے (یہاں تک کہ بڑوں کے بھی ڈوب جانے کا خطرہ رہتا ہے)۔ بہت سے مسائل ہیں جن کا سامنا چھوٹے آپریٹرز کو کرنا پڑتا ہے۔ سب سے پہلے خطرے کے رویہ کوترک کرنا ہوتا ہے ، جو ہوا بازی کے کاروبار میں داخل ہونے کے لیے ایک بنیادی شرط ہے۔ دوسری بات یہ ہے کہ ہندوستان میں فنانسنگ ایکو سسٹم موجود نہیں ہے اور کوئی بھی بینک کچھ بڑی ایئر لائنز کے ساتھ پچھلے خراب تجربات کی وجہ سےایوی ایشن کمپنیوں کو فنانس نہیں کرنا چاہتا۔یہاں تک کہ بین الاقوامی مالیات یا لیز پر دینے والے ادارے بھی چھوٹی ایئرلائنز کی مدد کرنے میں ہچکچاتے ہیں۔ان بہت سی رکاوٹوں کے باوجود اگر تقریباً نصف درجن نئے کھلاڑیوں نے چھوٹے ہوائی جہازوں پر علاقائی رابطہ پروازیں شروع کی ہیں تو یہ صرف اڑان سکیم کی وجہ سے ممکن ہواہے۔اڑان سکیم کی مراعات کے بغیر ان تمام چھوٹے آپریٹرز کو شیڈول آپریشن شروع کرنے کی ہمت کبھی نہیں ہوتی۔ چھوٹے آپریٹرز میںسٹار ایئر کا نام قابل ذکر ہے جس نے 50سیٹر ایمبریئر 145 طیارے پر کام شروع کیا اور 4سے5برسوں کے اندر اس چھوٹی ایئر لائن نے 9ہوائی جہازوں کے فلیٹ سائز میں توسیع کر دی ہے اور اب وہ 18ایسے ہوائی اڈوں پر کام کر رہے ہیں جہاں سے اس سےپہلےکوئی پرواز نہیں تھی ۔یہ طیارہ بھی اڑان کے نتیجے میں ہندوستانی ہوا بازی میں ایک نیا اضافہ ہے۔اڑان کی وجہ سے متعارف کرائے گئے کچھ دوسرے چھوٹے ہوائی جہاز ایئر ٹیکسی کے ذریعے 3سیٹر پسٹن انجن ٹیکنام ہوائی جہاز، انڈیا ون کے ذریعے 9سیٹوں والے سیسنا کاروان اور الائنس ایئر کے ذریعے 19سیٹوں والے ڈورنیئر 228اور فلائی بی گیئر لائنز کے ٹوئن اوٹر ہیں۔ ہندوستان میں 19 نشستوں والے ہوائی جہاز کا تعارف ایک بہت اہم سنگ میل ہے اور اس میں بہت زیادہ صلاحیت موجود ہے۔ چھوٹے ہوائی جہاز چھوٹے رن وے پر چل سکتے ہیں اور انہیں مہنگے ہوائی اڈے کے بنیادی ڈھانچے کی ضرورت نہیں ہے۔ جن ہوائی اڈوں پر یہ چھوٹے ہوائی جہاز کام کر رہے ہیں ان میں کم سے کم انفراسٹرکچر ہے جیسے مغربی بنگال میں کوچ بہار، اروناچل پردیش میں زیرو،اتراکھنڈ میں پتھورا گڑھ وغیرہ۔ دہرادون سے پتھورا گڑھ تک سڑک کے سفر میں 18گھنٹے لگتے ہیں اور ہوائی جہاز سے صرف 1گھنٹہ لگتا ہے۔ کوچ بہار سے کولکتہ تک پہنچنے میں سڑک کے ذریعے 17سے18 گھنٹے لگتے ہیں اور اسی طرح کا وقت ٹرین کے ذریعے بھی لگتا ہے لیکن اب لوگ اڑان کی فلائٹ استعمال کر سکتے ہیں اور ایک گھنٹے میں کولکتہ پہنچ سکتے ہیں۔اڑان میں سبسڈی والے ہوائی کرایوں نے ان دور درا ز علاقوں میں رہنے والے لوگوں کے لیے بڑی سہولتیں پیدا کردی ہیں۔
اڑان سکیم ہیلی کاپٹروں کے لیے بھی ایک اہم موڑ ثابت ہو رہی ہے۔ ہیریٹیج ایوی ایشن نے شروع سے ہی اڑان سکیم کے امکانات کی نشاندہی کی تھی اور فروری 2020میں ہیلی کاپٹروں پراڑان پروازیں شروع کرنے والی پہلی نجی ہیلی کاپٹر کمپنی تھی۔ یہ دہرادون سے اتراکھنڈ کے چمولی اور اترکاشی کے دور دراز سرحدی اضلاع تک روزانہ رابطے کا کام کر رہی ہے۔ 80فیصد سے زیادہ مسافر مقامی لوگ ہیں، اس حقیقت کا اعادہ کرتے ہوئے کہ اڑان کی تھیم، اُڑے دیش کا عام ناگرک اور ہمارے وزیر اعظم کا ہوائی چپل والے ہوائی جہاز میں چلیں کا وژن اب صرف نعرہ نہیں رہابلکہ حقیقت میںاڑان کی وجہ سے پورا ہو رہا ہے۔
اڑان 5.1ٹینڈر کے تازہ ترین راؤنڈ میں ایئر لائنز کو اتراکھنڈ، ہماچل پردیش اور سکم میں کئی نئے روٹس دیئے گئے ہیں اور بہت جلد روزانہ پروازیں دور دراز اور خوبصورت شہروں منساری، پتھورا گڑھ اور چمپاوت کو ہلدوانی سے جوڑنے کے لیے شروع ہوں گی۔ ان چھوٹے شہروں کے لیے ہیلی کاپٹر کی پروازیں نہ صرف ضروری ہوائی رابطہ فراہم کریں گی بلکہ ان علاقوں میں سیاحت کو بھی فروغ حاصل ہوگا۔حکومت نے ہیلی کاپٹروں اور چھوٹے ہوائی جہازوں کے لیے بھی اپنے کئی اصولوں میں نرمی کی ہے جس کے نتیجے میں یہ صنعت کے لیے زیادہ پرکشش بن گیا ہے۔
اڑان سکیم کی ترسیل کو پٹری سے اتارنے میں کووڈ وبائی مرض نے اہم کردار ادا کیا کیونکہ تمام آپریٹرز بری طرح متاثر ہوئے تھے۔ تاہم، پچھلے 2 سال میں صنعت وبائی امراض سے ہونے والے نقصان کو عبور کرنے میں کامیاب رہی ہے۔ اگلے 5سال بہت بڑے مواقع پیش کرتے ہیں اور اب صنعت ترقی کی لہر پر سوار ہونے کے لیے تیار ہے اور ہم اڑان سکیم کے بڑے پیمانے پر تبدیلی کے نتائج دیکھیں گے جس کا بہت سے صنعتی مبصرین کبھی تصور بھی نہیں کر سکتے تھے۔
(روہت ماتھر ہیریٹیج ایوی ایشن پرائیویٹ لمیٹڈ کے بانی اور سی ای او ہیں۔)