علیحدگی پسند رہنما شبیر شاہ کی ضمانت منظور، دیگر مقدمات میں مقید

File Photo

عظمیٰ ویب ڈیسک

نئی دہلی// دہلی کی ایک عدالت نے علیحدگی پسند کشمیری رہنما شبیر شاہ کو حال ہی میں منی لانڈرنگ کیس میں قانونی ضمانت دے دی ہے تاہم وہ دیگر زیرِ التواءمقدمات میں جیل میں ہی رہیں گے۔
شبیر شاہ کو 2017 میں گرفتار کیا گیا تھا اور اُنہوں نے اس بنیاد پر ضمانت کی درخواست دی تھی کہ اُن پر جس جرم کا الزام لگایا گیا تھا اس کی زیادہ سے زیادہ سزا کی نصف سے زیادہ سزا کاٹ چکے ہیں۔
ایڈیشنل سیشن جج دھیرج مور نے سی آر پی سی کی دفعہ 436 اے کے تحت شاہ کو ضمانت دی اور یہ شرط عائد کی کہ ضمانت پر رہا ملزم عدالت کی اجازت کے بغیر ملک سے باہر نہیں جا سکتا۔
ضمانت منظور کرتے ہوئے عدالت نے مشاہدہ کیا کہ ملزمان کے خلاف زیر التوا مقدمات انتہائی سنگین نوعیت کے ہیں۔
عدالت نے مشاہدہ کیا، “تاہم، یہ موجودہ قانونی ضمانت کی درخواست کو مسترد کرنے کے لیے کافی بنیاد نہیں ہو سکتا، جب کہ ملزم کو مذکورہ جرائم میں سے کسی میں بھی سزا نہیں دی گئی ہے”۔
اس معاملے میں قانونی ضمانت ملنے کے باوجود، شاہ کو دیگر جرائم کے لیے جیل سے رہا ہونے کا امکان نہیں ہے جس کے لیے وہ زیر حراست ہیں۔ ای ڈی کے وکیل نے دلیل دی کہ اگر ضمانت پر رہا کیا گیا تو ملزم قانون و انصاف سے بھاگ سکتا ہے۔ اس کا سابقہ طرز عمل ظاہر کرتا ہے کہ اس کے اندر ملک سے فرار ہونے کا قوی رجحان ہے۔