تازہ ترین

بیٹیاں اللہ تعالیٰ کی رحمت

بیٹیاں سب کو مقدر میں کہاں ہوتی ہیں گھر جو خدا کو پسند ہو وہاں ہوتی ہیں اسلام میں بیٹیوں کو بہت اہمیت حاصل ہے۔بیٹیاںجہاں اللہ تعالیٰ کی رحمت ہوتی ہیں وہیں والدین کیلئے جہنم سے نجات کا باعث اور جنت کے حصول کا ذریعہ بھی ہوتی ہیں ۔اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں ارشاد فرمایا ہے کہ آسمانوں اور زمین کی سلطنت و بادشاہت صرف اللہ ہی کیلئے ہے وہ جو چاہے پیدا کرتا ہے اور جسے چاہتا ہے بیٹیاں دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے بیٹے اور بیٹیاں عطا کرتا ہے اور جس کو چاہتا ہے بانجھ کر دیتا ہے گو کہ یہ سب کچھ اللہ تعالیٰ کے ہاتھ میں ہے اور اللہ تعالیٰ کی حکمت اور مصلحت پر مبنی ہے جس کیلئے جو مناسب سمجھتا ہے وہ اس کو عطا فرما دیتا ہے(سورۃ شوریٰ) ۔اللہ تعالیٰ نے دنیا میں ایسا نظام قائم کیا ہے کہ مرد اور عورت دونوں ایک دوسرے پر منحصر ہیں۔نہ ہی مرد عورت کے بغیر مکمل ہے اور نہ ہی عورت مرد کے بغیر کامل ہے۔ یعن

چمن والوں نے مل کر لوٹ لی طرز فُغاں میری

پورے ملک میں 27ستمبر کو یومِ دختران کے طور منا یاگیا۔اس حوالے سے مختلف تقاریب کا اہتمام کیا جاتا ہے جہاں مقررین لچھے دار تقریریں کرتے ہیں اور پھر نشستند،گفتند اور برخواستند۔یومِ دختران کے نام پر معصوم کلیوں کی اہمیت اور عظمت پر زور دیا جاتا ہے،لڑکیوں کی تعلیم و تر بیت کے حوالے سے بہتر ماحول فراہم کرانے کی وکالت کی جاتی ہے،جنسی زیادتوں کا قلع قمع کرانے کی سفارش کی جاتی ہے اور جنسی تفاوت کی روک تھام کے لئے لوگوں میں بیداری مہم شروع کرانے کی اپیلیں بھی کی جاتی ہے۔ گویا یہ سلسلہ گزشتہ کئی برسو ںسے ایسے ہی چلتا آرہا ہے جسکے نتیجے میں چند خو بصورت عنوانات تر تیب دے کر لڑکیوں کی تعلیم و تر بیت کے لئے چند خوبصورت اصطلا حات معرض وجود میں لاکر یوم دختران کا بستر گول کیا جاتا ہے۔کروڑوں روپیہ خرچ کرنے کے باوجود بھی بیچاری یہ دختر مظلومیت کے قید خانے میں سسک رہی ہے۔ ملکی حالات پر نظر دوڑائیں تومعل

گھر کی صفائی بھی، ڈپریشن میں کمی بھی!

  میری کونڈو ’ڈی کلٹرنگ‘ کے حوالے سے دنیا بھر میں مشہور ہیں۔ وہ گھر کی تمام اشیا کو نظم و ضبط سے رکھنے اورفالتوسامان کو ٹھکانے لگانے کے لیے بہترین مشورے دینے کی وجہ سے ہردلعزیز ہیں۔ میری کونڈو صرف گھر کی صفائی، نظم وضبط یا ڈی کلٹرنگ کو ہی فروغ نہیں دیتیں بلکہ وہ جذباتی نکتہ نگاہ سے بھی خواتین کے مسائل حل کرنے کیلئے کوشاں رہتی ہیں۔ جاپان کی اس مشہور مصنفہ کی ڈی کلٹرنگ کے حوالے سے انسٹاگرام فیڈز سے سبھی مستفید ہوتے ہیں۔  شاید یہی وجہ ہے کہ صفائی کی اہمیت کے حوالے سے انسٹاگرام پرکلینز اسپو(cleanspo)کے نام سے ایک مہم بھی دیکھنے میں آئی، جس میں خواتین نے اپنے گھر وںمیں کی جانے والی صفائی، فالتو سامان کو ٹھکانے لگانے اور ڈی کلٹرنگ کے حوالے سے اپنے تجربات تصاویر کے ساتھ شیئر کیے۔ ’’ٹائڈنگ اَپ وِد میری کونڈو‘‘ کے نا م سے نیٹ فلکس پر شوکرنے

غالب کاسُخن اور وجودِزن

 دنیا میں ہر بڑے شاعر اور ہر بڑے فلسفی کا اپنا ندازِبیاں اور اسلوب ہوتاہے، پر مرزا غالبؔ جیسا اندازِ بیاں رکھنے والا سخنور نہ کبھی پیدا ہوا اورشاید نہ کبھی ہوگا۔ مولانا حالیؔ نے مرزا کو بہت قریب سے دیکھاتھا، وہ لکھتے ہیں کہ غالب بہت وسیع اخلاق کے مالک تھے، جو شخص بھی ان سے ملنے جاتا وہ اس سے بہت خندہ پیشانی سے ملتے اور جو شخص ایک بار ان سے مل لیتا تو اسے ہمیشہ مرزا سے ملنے کا اشتیاق رہتا تھا۔ دوستوں کو دیکھ کر وہ باغ باغ ہو جاتے تھے۔ ان کی خوشی میں خوش اور ان کے غم میں غمگین ہو جاتے تھے۔ اس لیے ان کے دوست ہر ملت و مذہب سے تعلق رکھتے تھے۔ اس مضمون میں ہم نے غالب کی اس شاعری کی جستجو کی جو انہوں نے صنف ِ نازک کیلئے کی ہے۔ دراصل ان کے داخلی اور خارجی معاملات اس قدر دگرگوں تھے، اس لیے اپنے محبوب کیلئے بھی انہوں نے اپنی ذات کے حوالے سے سخن طرازی کی اور ایسے انداز بیاں سے کی کہ ہمیں