پڈوچیری میں’نوار‘طوفان سے تباہی

پڈوچیری // سمندری طوفان ’نوار‘نے پڈوچیری میں بڑے پیمانے پر تباہی مچا ئی ہے ،طوفان سے متعدد مقامات پر درختوں اور بجلی کے کھمبے اکھڑنے کی اطلاعات ہیں۔ سمندری طوفان ’نوار‘نے بدھ کی رات تمل ناڈو کے ضلع ولپورم کے مرکنم کو عبور کیا۔ پڈوچیری کے ایجل نگر ، وینکٹ نگر ، بالاجی نگر اور دیگر نشیبی علاقوں میں سیلاب آ گیا ہے۔ کچھ مکانات سیلاب کی زد میں ہیں ، جس کی وجہ سے لوگ گھروں سے نکلنے سے قاصر ہیں۔ لیفٹیننٹ گورنر کرن بیدی نے واٹس ایپ پوسٹ میں بتایا ہے کہ صرف گرینڈ بازارپولیس ایریا سے سات درخت گرنے کے واقعات کی اطلاع ملی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ رینبو نگر میں ایک گھر میں بے ہوشی کی حالت میں ایک بوڑھی خاتون اور بچے کو بچایا گیا ہے۔ بارش کے دوران پڈوچیری کے متعدد علاقوں میں بجلی کی فراہمی میں خلل پڑا، جسے بحال کردیا گیا ہے۔ سمندری طوفان کے نتیجے میں جان و مال کے

ملک میں کورونا متاثرین کی تعداد92.66لاکھ،135223 اموات

نئی دہلی// جمعرات کو صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت کی جانب سے جاری تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 44489نئے کیس رپورٹ ہوئے جس سے کورونا وائرس متاثرین کی تعداد 92.66 لاکھ سے زائد ہوگئی۔ وہیں، صحت مند مریضوں کی تعداد 86.79 لاکھ سے زیادہ ہوگئی ہے ، جبکہ 524 مزید مریضوں کی ہلاکت کے ساتھ اموات کی مجموعی تعداد135223 ہوگئی۔ اس وقت ملک میں کوروناوائرس کے 4،52،344 ایکٹیو کیس موجود ہیں۔ ملک میں گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران جان لیوا کورونا وائرس (کووڈ۔19) سے سب سے زیادہ ہلاکتیں دہلی ، مہاراشٹر اور مغربی بنگال میں ہوئی ہیں۔ اسی عرصہ کے دوران قومی دارالحکومت دہلی میں کووڈ 19 سے سب سے زیادہ(99) افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ اسی مدت کے دوران مہاراشٹر میں 65 اور مغربی بنگال میں 51 کورونا مریضوں کی موت ہوگئی۔ گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک بھر میں اس مہلک وبا سے 524 افراد لقمہ اجل بن

کوروناوائرس کی روکتھام | یکم دسمبر سے نئے رہنماخطوط لاگوہوں گے

نئی دلی //چندریاستوں اور مرکزی زیر انتظام علاقوں میں کورونا وائرس متاثرین کی تعداد میں اضافہ کے بعد بدھ کو مرکزی سرکار نے تمام ریاستوں اورمرکزی زیر انتظام علاقوں میں کورونا وائرس کو قابومیں کرنے کیلئے ایک ماہ  تک دوبارہ لوگوں کی نقل و حرکت محدود اور بھیڑ بھاڑ کو قابو کرنے اور وائرس کی روکتھام کیلئے نئے رہنما خطوط جاری کئے ہیں۔ نئے رہنما خطوط کے تحت ریاستوں اور یوٹیز کوریڈزونوں کے دائرے میں آنے والے علاقوں میں رات کا کرفیو نافذ کرنے کی اجازت دی گئی ہے لیکن ریڈزون کے باہر آنے والے علاقوں میں پابندیاں عائد کرنے سے قبل مرکزی سرکار سے مشورہ کرنا ہوگا۔ مرکزی سرکار نے اپنے تازہ رہنما خطوط میں کہا ہے کہ ریاستوں اور یوٹیز کو 72گھنٹوں کے دوران کورونا متاثرین کے رابطوں کا پتا لگانا ہوگا جبکہ ان کی قرنطین سہولیات، علاج و معالجہ فراہم کرنے کی ذمہ داری مقامی انتظامیہ پر عائد ہوگی۔ رہنما خطوط

تازہ ترین