تازہ ترین

مینڈھر میں گندگی کو ٹھکانے لگانے کیلئے جگہ کا تعین نہ ہوسکا | صفائی کرمچاری دریامیں گندگی پھینکنے میں مصروف ،لوگ پریشان

مینڈھر //مینڈھر قصبہ کی گندگی کو ٹھکانے لگانے کیلئے حکام کی جانب سے ابھی تک کسی بھی جگہ کا کوئی تعین نہیں کیا گیا ہے جبکہ محکمہ دیہی ترقی کی جانب سے تعینات صفائی کرمچاری قصبہ کی گندگی کو جمع کر کے مقامی دریا میں ڈال رہے ہیں جس کی وجہ سے عام لوگو ں کیساتھ ساتھ آبی زندگی بھی متاثر ہورہی ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ مینڈھر بس سٹینڈ کے قریب سے بہنے والے دریا پر قصبہ کے دو حصوں میں آپس میں جوڑنے کیلئے تعمیر پل کے دونوں کناروں پر روزنہ بڑی مقدار میں گندگی پھینکی جاتی ہے جس کی وجہ سے اس کے ارد گرد رہائش پذیر لوگوں کیساتھ ساتھ پل عبور کرنے والے عام راہگیر وں کیلئے شدید مشکلات پیدا ہو گئی ہیں ۔انہوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ مقامی اور ضلع انتظامیہ نے ابھی تک قصبہ کی گندگی کو ٹھکانے لگانے کیلئے کسی بھی جگہ کا نہ تو کوئی تعین کیا ہے او ر نہ ہی محکمہ دیہی ترقی کی جانب سے گندگی کو جمع کر کے کس

ٹھیکیداروں کی خود غرضی سے تعمیر اتی عمل متاثر | کئی پروجیکٹ برسوں سے تشنہ تکمیل ،انتظامیہ خاموش

 سرنکوٹ//سرنکوٹ سب ڈویژن میں ٹھیکیداروں کی لاپرواہی اور خود غرضی کی وجہ سے کئی تعمیر اتی پروجیکٹ برسوں سے التوا کا شکار ہیں جس کی وجہ سے عام لوگوں کی زندگی بھی متاثر ہورہی ہے لیکن متعلقہ محکموں و ضلع انتظامیہ کی جانب سے اس طرف دھیان ہی نہیں دیا جارہا ہے ۔سب ڈویژن میں سڑکوں کیساتھ ساتھ دیگر کئی پروجیکٹ گزشتہ کئی برسوں سے مکمل ہی نہیں کئے جارہے ہیں جبکہ ٹھیکیداروں کی جانب سے صرف وہ کام کیا جاتا ہے جس میں سے ان کو بھاری کمیشن مل سکتی ہے جبکہ پروجیکٹ کے دیگر شعبوں کو مکمل کرنے میں کوئی دلچسپی ہی نہیں لی جارہی ہے ۔آل انڈیا ہیو من رائٹس کے پریس سیکریٹری سید مزمل حسین شاہ نے بتایا کہ ٹھیکیداروں کی خود غرضی کی وجہ سے مقامی لوگوں کیساتھ ساتھ سرکاری خزانے کا بھی نقصان ہورہا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ ٹھیکیداروں نے تعمیر اتی عمل کو ایک تجارت کے طور پر لیا ہوا ہے جبکہ کچھ محکموں کے ملازمین وآفیس

لوہر کنڈی پنچایت میں پانی کی بحرانی صورتحال | محکمہ جل شکتی کیخلاف علاقہ مکینوں کا احتجاج

کوٹرنکہ //سب ڈویژن کوٹرنکہ کی پنچایت لوہر کنڈی میں پینے کے صاف پانی کی شدید قلت کی وجہ سے تنگ آکر لوگوں نے محکمہ جل شکتی کیخلاف سخت احتجاج کیا ۔مظاہرین نے محکمہ کے آفیسران و ملازمین پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ وہ اپنی ڈیوٹی کو لے کر سنجیدہ نہیں ہیں جس کی وجہ سے دیہات میں پانی کی بحرانی صورتحال پیدا ہو گئی ہے ۔مظاہرین نے بتایا کہ گزشتہ ایک ماہ سے پانی کی شدید قلت پیدا ہو گئی ہے لیکن بلندو بانگ دعوئوں کے باوجود بھی انتظامیہ اس طرف توجہ دینے میں ناکام ہو چکی ہے ۔انہوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ محکمہ کے اسسٹنٹ ایگز یکٹو انجینئر و دیگر آفیسران عوامی مشکلات سننے کیلئے تیار ہی نہیں ہیں جبکہ ملازمین بھی ڈیوٹی پر حاضر نہیں رہتے ۔محمد تاج ٹھا کر نامی ایک مقامی شخص نے بتایا کہ محکمہ کے آفیسران کیساتھ ساتھ ملازمین بھی لاپتہ ہو گئے ہیں جس کی وجہ سے عوامی مشکلات بڑھ گئی ہیں ۔مظاہرین نے مان

راجوری میں آٹو رکشا کی نقل و حرکت | موٹر وہیکل محکمہ سے مناسب طریقہ کار لانے کا مطالبہ

راجوری//راجوری قصبہ کے مقامی لوگوں نے موٹر وہیکل ڈپارٹمنٹ (MVD) سے کرتے ہوئے کہاکہ وہ شہر میں آٹو رکشا کی نقل و حرکت کا ایک مناسب طریقہ کار واضح کرے ۔انہوں نے کہاکہ مذکورہ گاڑیاں لوگوں کی نقل و حرکت میں ایک اہم رول ادا کررہی ہیں ۔لوگوں نے بتایا کہ شہر میں آٹو رکشا کیلئے نہ تو مستقل طور پر کوئی سٹاپ مختص ہے اور نہ ہی مسافروں کیلئے کرایہ کی کوئی مناسب فہرست دستیاب رکھی گئی ہے۔راجوری قصبہ میں نقل و حرکت کے لحاظ سے آٹو رکشا اب لوگوں کیلئے انتہائی اہم ہے ۔راجوری کے محمد عمر نامی ایک مقامی شخص نے بتایا کہ روزانہ کی بنیادوں پر ہزاروں کی تعداد میں لوگوں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ جانے کیلئے آٹو رکشا ہی استعمال کیا جاتا ہے تاہم اس کیلئے کوئی معقول نظام دستیاب نہیں رکھا گیا ہے ۔انہوں نے مزید کہا کہ تین پہیہ پر مشتمل سینکڑوں آٹو رکشا شہر کے اندر چلتے ہیں لیکن مسافروں کیلئے کرایہ کی کوئی مناسب ف

مینڈھر میں ٹریفک کا بے ترتیب نظام | بھاری رش اور جام سے عام زندگی متاثر

مینڈھر //مینڈھر قصبہ میں گاڑیاں کے بھاری رش اور گاڑیوں کی پارکنگ کے غیر معیاری نظام کی وجہ سے روزانہ سینکڑوں کی تعداد میں مسافر اور عام راہگیر کئی گھنٹوں تک جام جیسی صورتحال میں دربدر رہتے ہیں ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ مینڈھر بس سٹینڈ پر جگہ کی شدید قلت اور اثر ورسوخ استعمال کر کے بڑی گاڑیوں میں قصبہ میں داخل کرنے کی وجہ سے جام جیسی صورتحال پیدا ہو جاتی ہے ۔غور طلب ہے کہ مینڈھر قصبہ میں گاڑیاں کی پارکنگ کیلئے صر ف ایک بس سٹینڈ موجود ہے جہاں پر سب ڈویژن کے مختلف علاقوں سے آنے والی گاڑیوں کی مناسبت سے جگہ انتہائی کم ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ انہوں نے گاڑیوں کے قصبہ میں داخل ہونے کی زمرہ بندی کیلئے کئی مرتبہ متعلقہ حکام سے بھی رابط کیا لیکن ابھی تک کوئی واضح نظام نہیں لایا جاسکا جس کی وجہ سے عام لوگوں کی زندگی متاثر ہورہی ہے ۔مکینوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ قصبہ میں گاڑیوں کے رش کو کم کر

مزید خبریں

تھنہ منڈی ۔دیرہ گلی سڑک پسی گرآنے سے بند  سمت بھارگو  راجوری //راجوری ضلع کے تھنہ منڈی سب ڈویژن ہیڈکوارٹر کو پونچھ کے سرنکوٹ سب ڈویژن سے دہرہ کی گلی سے جوڑنے والی مین سڑک پر گاڑیوں کی آمدورفت بدھ کی شام کو منیال گلی کے قریب مٹی کے تودے گرنے کی وجہ سے بند ہوگئی یہ لینڈ سلائیڈ علاقے پالا موڑ میں ہوئی ہے۔حکام نے بتایا کہ سڑک کو چوڑا کرنے کا کام جاری ہے جس دوران زمین کا کچھ حصہ کٹا ہوا تھا جس کے دوران یہ لینڈ سلائیڈنگ ہوئی۔ان کا کہنا تھا کہ لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے زمین کا ایک حصہ نیچے کی طرف کھسک گیا ہے جس سے سڑک کے کچھ حصے کو بھی نقصان پہنچا اور گاڑیوں کی آمدورفت بند ہو گئی ہے۔ڈی ایس پی ٹریفک نے بتایا کہ لینڈ سلائیڈنگ ہونے کی وجہ سے ہر قسم کی گاڑیوں کی آمدورفت بند ہو گئی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ لینڈ سلائیڈنگ کا کام جاری ہے اور آخری اطلاعات موصول ہونے تک سڑک بند تھی۔